اعتبارِ وفا کون کرے
 از ماہوش چوہدری
1 قسط

وہ اس وقت عائش سکندر کے بیڈ روم میں اسکی سیج سجاے بیٹھی تھی۔چاروں طرف پھو لو ں کی خبصورت سجاوٹ دیکھ کر اسکے دل کو کچھ سکون ملا۔سجاوٹ دیکھ کر کوئی ذی ھوش یہ نہیں کھہ سکتا تھا کہ یہ شادی عائٰش کی مرضی کے بغیر ھو ئی ھے۔پھر مجھے کیوں دھمکا رہا تھا شاید امریکہ سے کوئی نیا طریقہ سیکھ کر آیا ھے اپنی ھونے والی دلھن کو تنگ کرنے کا۔۔وہ اس وقت نگیٹیو سوچنا نہیں چاھتی تھی ابھی کچھ اور بھی سوچتی۔۔۔ کہ دروازہ کھلنے اور لاک کرنے کی آواز سن کر گردن جھکا کر بیٹھ گئی۔عائش کے قدموں کی چاپ اسکے دل پر پڑ رہی تھی۔عائش بیڈ پر بلکل اسکے سامنے بیٹھ کر اسکا جا ئزہ لینے لگا خوبصورت میرون لہنگے میں فل میک اپ کے سا تھ وہ کسی بھی مرد کے ھوش اڑانے کو تیار بیٹھی تھی وہ تو پھر اسکا شو ہر تھا جائز حقدار۔۔۔۔۔آہستگی سے اسکا ھاتھ تھام کر سہلایا۔۔۔۔۔۔ تم میری توقع سے بڑھ کر، حسین لگ رہی ھو۔۔۔۔۔۔فارہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سمجھ نہیں آ رھا کہاں سے شروع کروں۔۔۔۔فارہ نے شرم سے مزید سر جھکا دیا۔۔۔اسکی اس، حرکت پر وہ ھلکا سا ہنسا۔۔۔۔فارہ۔۔۔۔پیار بھری سرگوشی ھوئی
جج۔۔جی۔۔۔۔۔۔وہ بمشکل بولی
تم خوش ھو؟ 
جی۔۔۔۔۔مدھم آواز آئی
تم یہی چاھتی تھی انفیکٹ سب یہی چاھتے تھے۔۔۔۔ھیے نہ۔۔۔۔
جی
وہ مسکرایا۔۔۔۔۔ٹھوڑی پکڑ کر اونچی کی۔۔۔جی۔۔جی کے علاوہ بھی کچھ کہو میں جانتا ھوں تم بہت فرمابردار ھو اسی لیے میری فیملی کی چوائس ھو لکین میں تم سےآج کچھ خاص سننا چاھتا ھوں۔

ک۔۔ک۔۔کیا
گھبراؤ مت بس یہی کہ اج تم مجھ سے اظہار محبت کرو۔۔۔۔کرو گی نہ۔۔۔اس نے اسرار کیا
اسکی شرمیلی خاموشی دیکھ کر وہ پھر سے بولا۔۔۔۔
کرو نا فارہ اج کی رات بہت خاص ھے اسلیے کہدو جو بھی دل میں ھے۔۔۔

فارہ۔۔۔۔
جج۔۔۔جی
کرو نا جان۔۔۔۔۔۔گھمگھیر آواز میں فرمائش ھوئی
فارہ تو جان بھی دے دیتی اگر وہ اسی پیار بھرے لہجے میں مانگتا
مم۔۔۔م۔۔میں۔۔۔آپ۔۔۔آپ سے۔۔۔بب۔۔۔بہت محبت کرتی ھوں۔۔۔مشکل سہی پر اظہار ھو چکا تھا

اااچھا۔۔۔۔وہ مسکرایا۔۔۔۔۔تو پھر اب میری باری لیکن میں عملاً اظہار کروں گا ۔۔کیونکہ مجھے بلکل بھی شرم نہیں آ رہی تمہاری طرح۔۔شرارت سے اسے دیکھا ۔۔وہ نظریں جھکا گئی
محظوظ ھوتے ھوئے عائش نے اسے بازؤں میں بھرا اور سائیڈ لیمپ آف کر دیا۔۔۔
فارہ نے بھی پرسکون ھو کر عائش کے سینے پر سر رکھ دیا یہ جانے بغیر کے کل کی صبح اسکے لیے کیا کچھ لانے والی ھے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صبح فارہ کی آنکھ کھلی تو محسوس ھوا کے وہ بیڈ پر اکیلی ھے دائیں جانب دیکھا عائش بستر پر نہیں تھا۔۔۔چاروں طرف دیکھا کمرا خالی تھا۔۔شاید باہر ہو وال کلاک پر نظر پڑی ااوووف۔۔۔نماز گزر گئ نئی زندگی کی شروعات اسطرح۔۔نہیں اللہّ جی معافی آئندہ ایسا نہیں ھو گا میں الادم لگا کر سوؤں گی۔۔رائٹ۔۔۔خود کو مطمعین کر کے غسل کرنے چل دی۔۔۔۔ 

اوہ۔۔عائش ابھی بھی نہیں آئے خود کلامی کرتے ھوئے آئینے کے سامنے گئی ۔۔خود پر نظر پڑتے ھی شرما کر سیمٹ گئی۔۔عائش کا رویہ تو بلکل نارمل تھا میرے ساتھ پھر کیوں۔؟۔۔۔ اس نے مجھے۔۔..فون۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ اسقدر مگن تھی کہ کب عائش آیا اسے پتہ ہی نہ چلا ۔۔چونکی تو تب جب عائش اسے حصار میں لے چکا تھا
آاااپ۔۔آپ کب آئے۔۔۔۔
جب آپ تصور میں ہمیں سوچ رہی تھی۔۔وہ مسکرایا۔۔۔۔
اچھا بتاؤ کہاں گم تھی؟ ہاں۔۔۔
فارہ کیا بولتی وہ تو سانس روکے اسکے حصار میں کھڑی تھی عائش کو اسکی حالت کا احساس ھوا تو بازو ھٹا لیے اور اسکارخ اپنی جانب موڑا۔۔۔
کندھوں پر دباؤ ڈالتے ھوے بولا۔۔۔
وائے آر یو شیورنگ ڈئیر۔۔۔۔۔۔

۔فارہ

اس سے پہلے کے فارہ کے جواب دیتی دروازہ ناک ہوا
فارہ جلدی سے دور ہوئی
میں دیکھتا ہوں۔۔۔
ملازمہ ناشتہ لے کر آئی تھی۔ٹیبل پر رکھ دو عائش نے ملازمہ سے کہا
سکینہ (ملازمہ ) حکم کی تعمیل کر کے چلی گئی اسکے جانے کے بعد عائش نے فارہ کو آنکھ سے اشارہ کیا آؤ ناشتہ کریں۔ 
فارہ کو ھنوز کھڑے دیکھ کر پھر سے بولا

فارہ ڈارلنگ کم ھئیر۔۔ 

لیکن باقی سب؟ فارہ منمنائی
باقی سب لیٹ اٹھیں گے تم آو پھر مجھے نکلنا ھے
فارہ نے چونک کر عائش کیطرف دیکھا۔۔۔نکلنا ھے کدھر۔۔۔صرف سوچ سکی

کم آن فارہ ہری اپ یار
آو نا کیا سوچ رہی ھو
فارہ آہستگی سے چلتی ہوئی پاس آئی عائش نے باقاعدہ پکڑ کر اسے صوفے پر بیٹھایا اور اچھے میزبان کی طرح جوس کا گلاس پکڑایا 
خود بریڈ پر مکھن لگانے لگا
بریڈ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بریڈ فارہ کی جانب بڑھائی ۔۔۔۔۔۔۔یہ کیا ۔۔۔۔اسے پیتے ھیں فارہ اور میں نے یہی کرنے کو اسے تمکو تھمایا ھے
فارہ کے ھاتھ میں جوس کا بھرا گلاس دیکھ کر وہ چڑا۔۔۔۔۔فارہ کو بلکل بچوں کیطرح ٹریٹ کرنا پڑ رھا تھا اسے۔۔
یہ بریڈ بھی لو
نن۔۔نہیں آپ لیں میں جوس ہی لوں گی
او۔۔کے. وہ خود بر یڈ کھانے لگا
۔
۔
تمہارے حق مہر کا چیک سائیڈ ڈڑاڑ میں رکھا ھے لے لینا او۔کے

جی۔۔۔۔۔۔۔حق مہر یاد ھے اور منہ دیکھائی ۔۔۔فارہ نے سوچا۔۔کہنے کی ہمت کہاں تھی

فارہ فنشِ یئور جوس یار کتنا سوچتی ھو تم عنقریب نیا امریکہ دریافت کرو گی اسے چھیڑتے ھوئے اٹھا۔۔۔۔اور ھاتھ دھونے چلا گیا
فارہ نے جوس ختم کیا
تم یہی سوچ رہی ھو گی کہ میں کیسا شوہر ھوں جسنے اپنی بیوی کو منہ دیکھائی کا گفٹ بی نہیں دیا۔۔۔ھے نا۔۔۔۔وہ فارہ کیجانب بڑھا
فارہ کھڑی ھوئی۔۔ھیں انکو کیسے پتا چلا میری سوچ کا۔۔۔
میں اج بہت اسپیشل گفٹ دینے والا ہوں تمیہں
انوکھا اور منفرد۔۔۔۔۔
آئی تھنک مجھ سے پہلے کسی شوہر نے اپنی بیوی کو منہ دیکھائی میں نہیں دیا ھو گا
لیکن اس سے پہلے میری ایک فرمائش پوری کرو
فرمائش۔۔۔۔۔۔
کک۔۔۔کیسی فرمائش۔۔۔فارہ کو رات والی اظہارے محبت کروانے کی فرمائش یاد آئی
لیپ اسٹک لگاؤ یار کہیں سے نہیں لگ رھا تم ایک رات کی دلہن ھو۔۔۔۔

فارہ کو سٹِل دیکھ کر گویا ھوا۔۔۔کم آن فارہ ایک تو تم سوچتی بہت ھو۔۔۔جاؤ۔۔۔۔جاؤ نا

فارہ ڈریسنگ پر پڑے لیپ سٹک شیڈ دیکھنے لگی ۔۔۔کونسی لگاؤں۔۔۔پتہ نیں انکو کیا رنگ پسند ھے۔۔۔۔وہ پھر سے سوچنے لگی
ر یڈ
بہت قریب سے آواز آئی ۔۔۔۔عائش اسکی سوچ بچار دیکھ چکا تھا۔
**آئی وانٹ ٹو سی یئور لپس ان ریڈ کلر**
جزبوں سے پُر آواز میں کہا گیا
فارہ نے کانپتے ھاتھوں سے سرخ لیپ سٹک لگائی
عائش نے اسکا رخ اپنی جانب موڑا اور بےباک نظریں فارہ کے ہونٹو ں پے جما، دیں۔
فارہ کنفیوز ھوئی ان بےبک نظروں سے۔۔۔اوف کتنے رومینٹک ھیں یہ۔۔۔پہلے تو نہیں تھے۔۔

عائش پلیز۔۔۔۔۔۔۔فارہ کی منمناہٹ ابھری
عائش مسکر ایا۔۔۔۔۔۔ہونٹ ہلے۔۔۔۔۔بیییوٹیفل۔۔۔۔
لوکنگ نائس۔۔۔وہ بولا
فارہ زرا سا مسکرائی۔۔۔
عائش نےچند منٹ اور اسے کنفیوز کیا اور پھر
پاس پڑے ڈبے سے ٹِشو لے کر فارہ کیطرف بڑھایا۔۔۔۔اسے صاف کرو۔۔۔۔
فارہ نے حیرانگی سے اسے دیکھا۔۔۔
ٹیک اٹ اینڈ ریمو یئورلیپ اسٹک۔۔جیسے ہی فارہ نے ٹِشو پکڑا
آئندہ ریڈ لیپ سٹک مت لگانا۔۔عجیب پراسرار انداز میں کہا۔۔۔اور لمبے لمبے ڈگ بھرتا اسٹڈی میں گم ھو گیا۔
فارہ سوال لیے کھڑی رہ گئی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سکندرحسن اور سجاد حسن دو بھائی ھیں۔سکندر بڑے جنکے 3 بچے ھیں سب سے بڑا رامش پھر رمشا اور چھوٹا عائش ۔جبکہ سجاد حسن کے 2 بچے ھیں فائز اور فارہ۔ فائز اور رمشا میرڈ ھیں جنکی 1 بیٹی ھے۔رامش بھی شادی شدہ اور 2 بچوں کا باپ ھے۔عائش کے امریکہ اسٹدی کےلیے جانے سے پھلے دونوں بھائیوں نے باہمی رضامندی سے عائش اور فارہ کا رشتہ طے کر دیا۔عائش کو اس رشتے سے کوئی سرو کار نہ تھا۔جبکے فارہ پورے دل سے رضامند تھی۔رضامند کیوں نا ھوتی آخر کو مشرقی لڑکی تھی اور ایک مشرقی لڑکی کےلیے ماں باپ کا فیصلہ ہی اچھا اور آخری ہوتا ھے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فا ر ہ
اوف بھابھی ڈرا دیا آپ نے۔۔۔۔
ارےّ ڈرپوک لڑکی بہادر بنو بہادر آخر کو میری بھا بھی بننا ھے تمہیں۔۔رمشا شوخی سے بولی
ہاں خود کی بہادری نے جوجھنڈے گاڑے ھیں سب جانتی ھوں ۔۔۔۔۔
بہت چلاک ھو تم۔۔۔فارہ کی بچی
آپ بھی کم نہیں۔۔۔بھابھی کی بچی
فا ر ہ فارہ کو لمبا کیا
تجھے تو میں یہ بھی نہیں کھہ سکتی نند گلی کا گند۔۔۔۔رمشا نے منہ بگاڑ کر کھا
آپ کھہ بھی نہیں سکتی بھھھھا بھھھھی۔۔۔
میں جا نتی ھوں تمھاری کمینگی کو تم میری بات مجھی کو لو ٹا دو گی
ایگزیٹلی بھھابھھی۔۔۔
دونوں نے بھرپور قہقہا لگایا۔۔۔۔
ہاں سچ سنو رات کیا ہوا۔۔فائز کے آفس آنے پر انکے کپڑے نکالنے کےلیے جیسے ہی کبڈ کھولا اووووف فارہ کاکروچ۔۔۔
کدھر کدھر کاکروچ کسطرف بھابھی۔۔۔
ڈفر کبڈ میں تھا
بھابھی آپ بھی نہ۔۔۔۔فارہ شرمندہ ھوئی
اچھا آگے سنو
مجھے چائے بنانے دیں۔۔۔فارہ اکتائی رمشا کےزیادہ بولنے سے وہ چڑتی تھی اور اظہار بھی کرچی تھی پر وہ بھی رمشا تھی اپنے نام کی ایک۔۔۔
بناؤ تم لیکن ساتھ میری بات بھی سنو

اچھاسنائیں۔۔۔۔۔۔ سنائے بغیر رمشا کو چین کیسے آتا
تیھنکس سنو۔۔۔۔
۔۔۔۔
رمشا نے جیسے ہی کبڈ کھولا ایک موٹے تازے کاکروچ نے استقبال کیا۔۔۔ایک خوفناک دل دہلا دینے والی چیخ برآمد ھوئی۔فائز جو نہانے کےلیے واش روم گیا ھی تھا چیخ سن کر الٹے قدموں واپس مڑا۔۔۔۔کیا ہوا۔۔۔کیوں چلا رہی ھو
رمشا کوجوتے سمیٹ بیڈ پر کھڑے پایا۔۔۔ 
فائز کااااااااکروچ۔۔۔۔۔
شِٹ میں تمہیں کاکروچ دکھتا ہوں ۔۔۔فائز کو شدید صدمہ ہوا
اوو ھو ۔۔۔وہ وہاں کبڈ میں ھے ۔ جلدی ماریں اس خبیث کاکروچ کو۔۔۔۔
واٹ کاکروچ خبیث ہوتا ھے۔۔۔فائز نے رمشا کو جان بھوج کر تنگ کیا
فائز تنگ مت کریں پلیز اسے ماریں وہ کپڑوں میں گم ھو جائے گا
تم تنگ کرنے دیتی ہو کیا ۔۔۔۔فائز شرارت سے بولا
فائز۔۔۔۔
جی جانِ فائز۔۔۔۔۔۔۔۔
فائز پلیز۔۔۔۔۔۔
او کے ۔۔۔۔۔ڈئیر۔۔۔۔۔
ھم سے اچھا تو یہ خبیییییییث کاکروچ ھے جس سے تم بیویاں ڈرتیں تو ھیں۔۔۔۔۔ھم جیسے جواناں مرد شوہر تم لوگوں کو صرف دڑارنےکو ملے ھیں فائز نے بیچارا سا منہ بنایا جیسے واقعی بیچا رہ ھو
فضول گوئی بند کریں فائز
واٹ میری باتیں فضول، میرارومانس فضول بلکہ میں پورے کا پورا فضول او ر تم۔۔۔۔۔تم تو ستی ساوتری ھو ناں لو مارو خود اس خبیث کاکروچ کو ۔۔۔۔۔فائز نے دانت پیسے۔۔وہ جو مارنے ھی والا تھا اسکی بات سن کر پیچھے ہٹا۔
فائز ۔۔فائز میرا یہ مطلب نہں تھا
میں جانتا ھوں تمہیں بھی اور تمہارے مطلب کو فائز چئیر پر اطمینان سے بیٹھ چکا تھا۔۔
او۔کے فائن سوری۔۔رمشا نے فورًا سوری کی خود کا مفاد جو تھا۔
اچھا چلو منت کرتی ھو توٹھیک ھے پر ایک شرط ھے۔۔۔فائزنے احسان کیا۔۔ 
منظور ھے ھر شرط۔۔۔۔
پہلے سن لو۔۔
نہیں مجھے منظور ھے۔۔۔ماریں اسے جلدی رمشا کاکروچ پر نظر رکھے کھڑی تھی۔۔۔کہ کہیں غائب نا ھو جائے۔۔ ۔
او۔کے۔۔۔سوئیٹ ہارٹ۔۔۔
وہ کاکروچ مار چکا تھا۔
تھینکس۔۔۔۔۔
نو تھیکس۔۔۔۔نو سوری۔۔۔صرف شرط۔۔۔فائز بولا
اچھا بتائیں۔۔۔۔۔۔رمشا اکتائی اپنا کام جو ھو چکا تھا۔
۔۔۔۔ادلے کا بدلا۔۔۔۔۔۔۔چاھیے
وہ کیسے؟؟؟؟ رمشا حیران ھوئی
رات کو جلدی کمرے میں آنا پھر بتاؤں گا بلکے سمجھاؤں گا۔۔۔۔فائز نے آنکھ ماری
فاااااائئئئز۔۔۔اس سے پہلے کے وہ اس پر جھپٹتی
فائز ہنستا ہوا واش روم میں گھس چکا تھا۔

رمشا نے سارا واقع من وعن فارہ کے گوش گزار کیا سوائے پرائیوٹ پاڑٹس کے۔۔۔۔۔۔۔۔مطلب رومینٹک گفتگو کے۔
کیچن میں ایک بار پھر دونوں کی ہنسی بکھری۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فارہ بیڈ پر بیٹھی سوچ رہی تھی کے عائش نے جانے کی بات کیوں کی وہ کہیں جا رہا ھے کیا لکین۔۔۔۔ کہاں۔۔؟....بھابھی نے تو نہیں بتایا کچھ انکے جانے کے بارے میں۔۔۔۔۔لیکن ۔۔۔۔۔۔ 
عائش اسٹڈی سے برآمد ہوا
فارہ متوجہ ھوئی۔۔۔اسکے ایک ھاتھ میں لیپ ٹاپ بیگ اور دوسرے میں ایک خاکی لفافہ تھا۔
فارہ کا دل کانپا۔۔۔۔۔۔۔۔
عائش بیڈ کے پاس آیا بیگ بیڈ پر رکھااور فارہ کو کندھوں سے پکڑ کر روبرو کیا
فارہ۔۔۔۔۔۔
جج۔۔۔۔۔جی۔۔۔
میں نے کہا تھا کے میں تمکو بہت انوکھا اور منفرد گفٹ دوں گا
جج۔۔۔جی
یہ۔۔۔۔۔ لو۔۔۔۔اسنے خاکی لفافہ فارہ کی جانب بڑھایا
"اسپیشل گفٹ فا ر اسپیشل پرسن"
یہ۔۔۔ یہ کیا ھے؟؟؟ فارہ نے دھڑکتے دل سے پوچھا۔۔
عائش نے اسکے ھاتھ کوتھاما اسےلفافہ پکڑایا ھاتھ پر ھلکا سا دباؤ ڈال کر چھوڑ دیا۔۔۔
خود ھی دیکھ لینا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔او. کے گڈ لّک اینڈ ٹیک کئیر۔۔۔۔۔فارہ کا گال تھپتھپایا اور جانے کے لیے دروازے کیجانب بڑھا
اس سے پہلے کے فارہ کچھ کہتی ۔۔۔۔یا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پو چھتی۔۔۔
وہ جا چکا تھا۔۔۔۔
عائش جا چکا تھا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جاری ہے۔
 
Zubair Khan Afridi Diary【••Novel ღ ناول••】. Zubair Khan Afridi
knowledgemoney