اعتبارِ وفا کون کرے
2 قسط

عائش کے جانے کے بعد فارہ نے کپکپاتے ہونٹوں سے اللہّ کا نام لیا اور دھڑکتے دل سے لفافہ چاک کیا۔۔۔لفافے میں کچھ کاغذات تھے۔فارہ نے کانپتے ہاتھوں سے انہیں باہر نِکالا۔۔۔

یہ۔۔۔۔۔۔۔یہ کیا؟؟؟؟؟ وہ پھٹی پھٹی آنکھوں سے کاغذات دیکھتی رہ گئی۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

امی۔۔۔۔۔۔۔بیٹھیں پلیز میں جس مقصد سے آئی ہوں وہ تو سن لیں۔۔رمشا نے ماں کو پکڑ کر صوفے پر بیٹھایا۔
مقصد؟؟؟ کیسا مقصد۔۔۔مسز سکندر حیران ہوئی
امی عائش کو واپس آئے ایک ماہ ہو چکا ہے۔۔
تو پھر۔۔۔۔؟
پھر کیا امی۔۔۔۔ آپ نے شادی کا کیا سوچا ہے۔۔؟ بات کی عائش سے؟ 
ہاں کی تھی۔۔مسز سکندر افسردہ سی بولی
کیا۔۔کہا عائش نے۔۔۔رمشا ایکسائیٹڈ ہوئی۔۔
کہتا ہے اسے شادی نہیں کرنی فارہ سے۔۔۔
واٹ؟ رمشا اچھلی۔۔ 
اسکا دماغ ٹھکانے ہے کیا؟ 
کہاں ہے یہ لینڈ لارڈ میں خود پوچھتی ہوں اُس سے۔۔
باہر گیا ہے۔۔۔۔دوپہر تک آئے گا
آپ نے نہیں پوچھا کیوں کہہ رہا ہے وہ ایسے؟ 
پوچھا تھا۔۔کہتا ہے فارہ اسے 
ایز آ لائف پارٹنر پسند نہیں۔۔۔
تب سویا ہوا تھا جب منگنی ہوئی تھی۔۔رمشا بڑھکی۔۔۔ 
منگنی نہیں صرف زبانی کلامی بات ہوئی تھی وہ بھی 3 سال پہلے۔۔۔۔
یہ آپ سے عائش نے کہا۔۔ 
ہاں۔۔۔
بابا نے اسے کچھ نہیں کہا۔۔جو وہ اُلٹی سیدھی بکواس کر رہا ہے۔۔۔
تمہارے بابا نے پیار اور غصے دونوں سے بات کی ہےپر پتہ نہیں کیوں اتنا روڈ ہو رہا ہے۔۔۔
میری تو کچھ سمجھ نہیں آ رہا۔۔۔۔۔

امی پھر ۔۔۔۔۔۔۔اب کیا ہو گا۔؟۔رمشا پریشان ہوئی
تم فکر مت کرو سب ٹھیک ہو جائے گا۔ میں آج سکندر سے بات کرتی ہوں۔۔
کیسے ہو گا ٹھیک؟ وہاں ںسب تیار بیٹھے ہیں فارہ کی شادی کو لے کر اور آج فائز ہی نے مجھے بھیجا ہے ۔۔۔اب کیا کہوں گی جا کر انہیں۔۔۔
سمبھال لینا تم ۔۔ فائز بہت سمجھدار ہے سمجھ جائے گا۔۔۔۔۔
اچھا تم بیٹھو میں زرا کیچن دیکھ لوں۔
رمشا سوچنے لگی کہ فائز کو کیسے مطمعین کرنا ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ۔۔۔۔۔یہ کیا۔۔۔۔۔۔عائش
آپ۔۔۔۔۔آپ ۔۔۔۔۔ایسا۔۔۔۔۔۔۔ کیسے ۔۔۔۔۔۔کر سکتے ہیں
فارہ ٹوٹے پھوٹے لفظوں سے ہمکلام تھی

انوکھا۔۔۔۔۔اور۔۔۔۔۔منفرد
مجھ سے پہلے کسی نے نہیں دیا ہو گا ایسا گفٹ۔۔۔۔۔۔
فارہ کے کانوں میں عائش کے الفاظ گونج رہے تھے

جانے سے پہلے لیپ اسٹک کی فرمائش ۔۔۔
دوبارہ ریڈ لیپ سٹک مت لگانا کی تنبیہ۔۔۔
گڈلک اینڈ ٹیک کیئر۔۔۔۔
فارہ کو اب سمجھ آ رہی تھی ان باتوں کی

اوووف میرےخدا یہ ۔۔۔یہ کیا ہو گیا یہ کیا کر دیا عائش آپ نے۔۔۔۔۔۔۔ مم۔۔۔مجھے۔۔۔۔مجھے ہی کیوں؟ 
وہ زمین پر بیٹھتی چلی گئی۔۔۔اور سر گھٹنوں میں دے کر پھوٹ پھوٹ کے رو دی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مِشا
فائز اکثر موڈ میں اسے مِشا ہی پکارتا تھا
کیا کر رہی ہو یار میں کب سے دیکھ رہاہوں تم جلے پیر کی بلی بنے یہاں وہاں چکڑ کاٹ رہی ہو
از ایوری ٹھنگ او کے
کوئی اور وقت ہوتا تو رمشا بلی کی تشبیہ پر بڑھکتی ضرور لیکن اسوقت وہ پریشان تھی اسلیے چپ رہی۔۔۔۔
اینی کنفیوزن۔؟۔۔ فائز کھٹکا اسکی خاموشی پر
نہیں ۔۔۔۔۔
اگر ہے تو شیئر کرو ۔۔۔منہ کیوں لٹکا رکھا ہے پہلے ہی بہت خوفناک ہے مزید مت بناؤ رحم کرو یار مجھ بیچارے ھینڈسم سےشوہر پر
فائز نے اسکا موڈ فریش کرنا چاہا۔
رمشا مسکراتی ہوئی بیڈ پر فائز کے پاس بیٹھی۔

وہ بھی اٹھ بیٹھا۔۔۔۔جی تو جناب اب فرمائیں کیا مسلہ ہے؟؟رمشا کا ہاتھ پکڑا
کوئی مسلہ نہیں ہے۔۔۔۔آپ بلاوجہ تنگ کر رہیں ہیں۔۔۔رمشا نے منہ بنایا۔۔۔ اچھا آپ بتائیں کیسا گزرا آج کا دن آفس میں۔۔۔
ٹھینک گاڈ تمہیں یاد تو آیا کہ مابدولت آپ کے بیچارےسے شوہر ہیں۔اور توجہ کے طلبگار۔۔ فائز نے چھیڑا

ہاں جانتی ہوں سب بےچارگی آپکی۔۔۔۔
فائز مسکرایا۔۔۔۔۔۔اسکےہاتھ کو لبوں سے لگایا
رمشا پیچھے ہٹی۔ 
وہ پھر سے ہنسا ۔۔۔ہاں یار۔۔۔۔۔۔ یاد آیا تم گئی اج سکندروِلا؟؟؟ 

وہ اسی بات سے ہی توبچنا چاہ رہی تھی۔۔۔
جی گئی تھی۔۔۔مدھم آواز میں بولی
اچھا ۔۔۔پھر۔۔۔بات ہوئی تائی ماں سے؟؟؟ 
جی۔۔۔ہوئی
کیا کہا انہوں نے کب آ رہے ہیں وہ لوگ ڈیٹ فائنل کرنے۔۔۔۔؟
فائز اتنی جلدی کس بات کی ہے۔رمشا منمنائی
جلدی۔۔۔کیسی جلدی؟ 
عائش کچھ دن پہلے ہی تو آیا ہے امریکہ سے واپس اُسے ایڈجسٹ تو ہو لینے دیں۔

تم تو ایسے کہہ رہی ہو ایڈجسٹمنٹ کا جیسے وہ یہاں سے نہ گیا ہو بلکہ ڈائیریکٹ آسمان سے امریکہ میں ہی گِرا ہو۔فائز غصے میں آیا ۔
فائز غصہ کیوں ہو رہے ہیں؟ 

تم بات ہی ایسی کر رہی ہو۔فارہ کو ماسٹرز کیے ایک سال ہو چکا ہے ۔اسکی سب فرینڈز کی شادی ہو گئی ہے اور تم۔۔۔۔تم اپنا ہی یاد کرو تم نے لاسٹ سمیسٹر شادی کے بعد پورا کیا تھا اور اب کہہ رہی ہو جلدی۔۔۔۔
اچھا نا بات تو سنیں پوری ۔۔۔۔امی کہہ رہی تھیں وہ اور بابا اسی ویک آئیں گے۔رمشا نے جھوٹ بولا
یہ بات تم پہلے بھی بتا سکتی تھی۔۔
بتا دیتی تو آپ کا لیکچر کون سنتا۔وہ مسکرائی
یہ بھی ٹھیک ہے تم کبھی کبھی ہی تو خاموش ہوتی ہو ۔۔وہ ہنسا اور رمشا کو قریب کیا
چھو۔۔۔۔چھوڑیں۔۔۔۔۔۔ چھوڑیں نا فائز مجھے چائے بنانے جانا ہے
ایک تو جب بھی میں رومانس کے موڈ میں ہوتا ہوں تم فضول سا کام نکال لیتی ہو ۔۔فائز بدمزا ہوا۔۔ اووئےےے۔۔۔
ارے۔۔۔۔۔۔ارے کہاں جا رہی ہو یار رکو تو۔۔۔۔۔

فائز شرم کریں ایک بیٹی کے باپ ہیں آپ۔۔۔۔رمشا دروازے کے پاس جا کر پلٹی۔۔

تو۔۔۔۔۔کہاں لیکھا ہے ایک بیٹی کا باپ رومانس نہیں کر سکتا وہ بھی جائز۔۔۔۔ویسے بھی وہ ایک بیٹی مجھ معصوم کی ہی کوششوں سے اس دنیا میں آئی ہے ورنہ تم تو۔۔۔۔۔۔فائز نے آنکھ دبائی۔
کس قدر بے شرم ہیں آپ ۔۔۔وہ لال ٹماٹر منہ لیے باہر نکلی
فائز کے چھت پھاڑ قہقہے نے اسکا دور تک پیچھا کیا۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ لیپ ٹاپ پر بزی تھا۔دروازہ ناک ہوا
یس۔۔۔
صاحب جی بڑےصاحب آپکو بلا رہے ہیں اپنے روم میں۔۔۔ملازم نے پیغام دیا
اوکے۔۔آتا ہوں
عائش تقریبًا 20منٹ بعد سکندر صاحب کے سامنے تھا۔
جی بابا آپ نے بلایا؟ 
ہاں۔۔۔۔۔۔ بیٹھو
عائش صوفے پر بیٹھا
میں اور تمہاری ماں اسی ہفتے جا رہے ہیں سجاد کیطرف تمہاری شادی کی دیٹ فائنل کرنے۔۔سکندر صاحب نے بات شروع کی۔

بابا میں آپ کو بتا چکا ہوں مجھے فارہ سے شادی نہیں کرنی۔۔۔کوئی زبردستی ہے کیا ۔۔وہ چڑا
کچھ ایسا ہی سمجھ لو ویسے بھی میں نے تمہیں یہاں اپنا فائنل دسیزن بتانے کو بلایا ہے نہ کے تم سے سجیشنز سننے کو۔۔

(مسز سکندر انہیں رمشا کی آمد کا بتا چکی تھیں اسی لیے وہ ڈیسائیڈ کر چکے تھے آخر کو انکی اپنی بیٹی بھی اُسی گھر میں تھی) 

دس از ناٹ فئیر۔۔۔۔۔ بابا
دس از فئیر۔۔۔۔۔ مائی سن 

آئی ڈونٹ لائک ہر ایز آ وائف ۔۔۔۔۔اس نے صاف لفظوں میں کہا۔۔۔۔
ٹرائی ٹو انڈرسٹیند۔۔پلیز
آئی تنھک یو نیڈ ٹو ا نڈرسٹیند ۔۔۔۔ وہ بولے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔stop ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
انہوں نےعائش کو مزید بولنے سے روکا

آئی ایم یئور فادر ناٹ یو سو اٹس فائنل۔۔۔سکندر صاحب نے فیصلہ سنایا
۔۔۔۔ یو مےگو ناؤ۔۔۔۔انہوں نے بات ختم کی۔

عائش غصے سے واپس روم میں آ یا۔ ٹیبل کو لات ماری۔۔۔ شِٹ۔۔۔۔اب۔۔۔کیا۔۔۔۔۔کروں یار
بالوں کو مُٹھی میں جکڑا
پاگلوں کیطرح یہاں وہاں چکر کاٹتے ہوئے اس سب کا حل سوچنے لگا
پندرہ، بیس منٹ بعد وہ مطمعین سا کاؤچ پر بیٹھا جیسے حل مل گیا ہو

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رمشا جیسے ہی سرخ چہرہ لیے کیچن میں اینٹر ہوئی فارہ کی نظر اس پر پڑی۔

اوئے ہوئے بڑی لائٹیں شائیٹں مار رہی ہیں خیریت؟؟ 
بھائی کمرے میں ہیں کیا۔۔۔فارہ نے آنکھ میچتے ہوئےاسکے سرخ چہرے کو دیکھ کر شرارت سے کہا

شرم کرو کچھ فارہ۔۔۔۔
تمہاری شادی ہو گی تو پوچھوں گی تم سے۔۔۔

کیوں شادی کے بعد منہ لال لال ٹماٹر ہو جاتا ہے کیا۔۔ فارہ نے انتہائی معصومیت سے پوچھا

"بے شرم بھائی کی بے شرم بہن"۔۔۔رمشا نے دل کی بھڑاس نکالی
فارہ نے قہقہامارا ۔۔۔میں ابھی بھا ئی کو بتاتی ہوں جا کر کے آپ انہیں۔۔۔۔۔

کون۔۔۔۔ کس کو۔۔۔۔۔۔ کیا بتا رہا ہے ۔۔۔۔۔۔بھئی۔۔فائز دروازے میں نمودار ہوا اسکی بات سن چکا تھا شاید
بھاااااائی۔۔۔۔۔ وہ۔۔۔۔۔وہ۔۔۔۔۔۔ نہ۔۔۔۔۔بھااابھی۔۔۔۔ فارہ نے جان بھوج کر الفاظ کھینچے
رمشا نے اس کو گھوری ڈالی

فارہ اتنی رات ہو چکی ہے سونا نہیں ہے کیا؟ 

بھابھی آپ نے نہیں سونا کیا؟؟؟ وہ بھی فارہ تھی ادھار کیسے رکھتی
اووووو ہاں آپ تو شادی شدہ ہیں ناں۔۔۔۔اسلیے لیٹ نائئئئیییٹ؟؟؟۔۔۔فارہ روانی میں کچھ غلط بول گئی تھی
اسے احسا س فائز کو لگنے والے اچھو سےہوا 
زبان دانتوں تلے دبا کر وہ بھاگ کھڑی ہوئی۔۔

فائز ہنستا ہوا رمشا کیطرف بڑھا تم سے عقلمند تو میری بہن ہے۔۔۔ اسے حصار میں قید کیا
فائز یہ کیا کر رہے ہیں۔۔۔۔ پلیز چھوڑیں۔۔کوئی آ جائے گا
آنے دو۔۔۔فائز نے اسکے کندھے پر ٹھوڑی ٹکائی
فائز یہ کیچن ہے
میرے گھر کا۔۔۔وہ پھونک سے اسکی لٹ اُڑا رہا تھا۔
فائز۔۔۔چھو ڑیں۔۔۔۔۔۔ نا 
کیا کہہ رہی تھی فارہ سے میں بے شرم ہوں

کیا نہیں ہیں۔۔۔۔۔۔؟ سوال ہوا

ہوں۔۔۔۔۔ بلکل۔۔۔۔ ہوں۔۔۔ لیکن تم میری معصوم بہن کو بھی اسی کیٹگری میں لے آئی۔۔۔۔۔ دس از ناٹ فئیر۔۔۔۔ڈارلنگ۔۔۔۔۔اب وہ اسکی لٹ کو انگلی پر لپیٹ رہا تھا
ہٹیں پیچھیں رمشا نے جھٹکا دیاچائے بنانے دیں مجھےایک تو میں آپ کے ہر وقت کے رومانس سے تنگ آ چکی ہوں فائز ۔۔۔۔
رمشا نے اکتا کر اونچی اور غصیلی آواز میں کہا
وہ بات غلط لہجے میں کر گئی تھی

فائز پیچھے ہٹا۔۔۔۔۔ تم تنگ آ چکی ہو مجھ سے عجیب سے انداز میں پوچھا

میرا۔۔۔۔۔میرا یہ مطلب نہیں تھا فائز
میں جانتا ہوں تمہارا مطلب ۔۔۔۔۔وہ بڑھکا اور غصے سےنکلتا چلا گیا

لو جی جناب ناراض ہو گئے ہیں ۔۔۔۔وہ ہنسی۔۔۔۔۔۔ اب منانا پڑے گا۔۔۔فائز کومنانا اسکے لے بلکل مشکل نہ تھا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عائش اس وقت لاہور ائیرپورٹ پر دبئی فلائیٹ کی اناؤنسمنٹ کے انتظار میں بےزار سا بیٹھا تھا۔
وہ امریکہ بھی جا سکتا تھا لیکن وہاں گھر والے پہنچ سکتے تھے اسلئیے اسنے دبئی کا انتخاب کیا تھا ۔۔۔۔اسجد ۔۔۔۔کے پاس

عائش اور اسجد امریکہ ایک ہی مقصد سے گئے تھے Business Administration کی ڈگری لینے۔عائش پاکستان سے جبکہ اسجد دبئی سے بیلانگ کرتاتھا۔ دونوں کلاس فیلوز اور روم میٹس تھے اور سب سے بڑھ کر ہم مزہب بھی انکی دوستی وقت کیساتھ گہری ہوتی چلی گئی۔
اس لیے عائش نے ان حالات میں اسجد کو تر جیع دی تھی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فائز۔۔۔۔۔۔۔رمشا نے پکارا
وہ رُخ موڑے خاموش رہا
فائز۔۔۔۔۔مجھے نیند نہیں آ رہی۔۔
تو میں کیا کروں۔۔۔۔؟ تڑخ کر جواب دیا
وہ ہی جو روز کرتے ہیں۔۔۔۔رمشا نے یاد دہانی کرائی
میں نے ٹھیکا نہیں لیا تمہیں سلانے کا۔۔۔۔
فائز خفا ہیں؟؟ 
نہیں ہونا چاہیئے؟؟؟؟؟؟ 
فائز نے منہ اسکی جانب کیا

میرا ۔۔۔۔۔یہ۔۔۔۔۔ مطلب۔۔۔۔۔۔ نہیں تھا فائز۔۔جو۔۔۔۔ آپ سمجھے۔۔۔۔۔ وہ ہکلائی
وہ ابھی بھی خفا رہا۔۔
اچھا۔۔۔۔ ناں۔۔۔۔۔ سوری اس نے کان پکڑے 
خفگی ختم کریں ناں فائز پلیییییزززز۔۔۔۔ معصومیت سے اسرار ہوا

فائز اسی معصومیت پر ہی تو جان دیتا تھا بہت چلاک ہو تم سارے ٹریکس آتے ہیں مجھے قابو کرنے کے۔۔۔۔اسنے رمشا کو اپنی طرف کھینچا ۔
رمشا نے مسکرا کر سر اسکے سینے پر رکھا اور آنکھیں میچ لیں
فائز اسکی حرکت پر مسکرایا جھک کر ماتھے پر بوسہ دیا۔۔۔۔۔۔گڈ نائٹ۔۔۔۔۔۔۔کہا اور خود بھی آنکھیں بند کر لیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عائش۔۔۔۔۔۔بیٹا تم بھی ساتھ چلتےہمارے وہ تمہارے چچا ہی کاگھر ہے کسی غیر کا نہیں مسز سکندر عائش سے بولیں جو اس وقت چینل سرچنگ میں مصروف تھا

ممی ۔۔۔پلیز آپ لوگ ڈیٹ فکس کرنے جا رہے ہیں بارات لے کر نہیں جو میرا جانا ضروری ہو وہ اکتایا
رامش بھی نہیں آیا چھٹیوں کامسلہ تھا اور تم بھی کوئی انٹرسٹ نہیں لے رہے مسز سکندر افسردہ ہوئیں انکے آخری بیٹے کی شادی تھی اور وہ بہت دھوم دھام سے کرنا چاہتیں تھیں

اچھا۔۔۔۔۔ نا ۔۔۔۔۔پریشان کیو ں ہوتی ہیں آپ بھی تو اپنے دیور کے گھر جا رہی کسی غیر کے نہیں عائش نےانہیں کی بات لوٹائی۔۔۔ ویسے بھی آپکی لاڈلی بیٹی ہے نا وہاں 
فساد کی جڑ عائش نے منہ بگاڑا
عااائش۔۔۔وہ مسکرائیں
ماں بیٹے کی گفتگو جاری تھی

بیگم صاحبہ اگر بیٹے کے ساتھ میٹنگ ہو گئی ہو تو چلیں۔۔۔سکندر صاحب لاؤنج میں داخل ہوئے۔
جی چلیں۔۔۔یہ تو مان نہیں رہا جانے کو
کیوں برخودار چلےچلتے تم بھی۔۔۔

نہیں۔۔۔ آپ لوگ جائیں میں جا کر کیا کروں گا ویسے بھی یہ آپ ہی کا فیصلہ ہے میں مان چکا ہوں اس شادی کے لیے کیا یہ کافی نہیں؟؟ وہ روڈ ہوا
او کے ایز یو وش ۔۔سکندر صاحب بولےاور دونوں میاں بیوی چلے گئے
عائش پھر سے چینل سرچنگ میں مصروف ہو گیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سجاد ہاوس میں
خوشگوار ماحول میں ڈنر کیا گیا ۔۔۔۔ ڈنر کے بعد چائے کا دور چلا اور ساتھ ہی ڈیٹ بھی ڈیسائیڈ کر لی گئی
آج سے 25 دن بعد۔۔۔۔
رمشا بیٹا منہ میٹھا کرواؤ سب کا۔۔راحیلہ بیگم بولیں
جی چچی۔۔
رمشا سب کو میٹھائی کھلا کر کیچن میں گئی جہا ں فارہ اپنے لیے کافی بنا رہی تھی 

مُبا رکاں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جی ۔۔۔۔۔۔۔۔مُبارکاں
میری بنو بنے گی دلہنیا۔۔۔۔۔ وہ لہک لہک کر گانے لگی
بڑی خوش ہیں مجھے یہاں سے نکال کر ۔۔فارہ مسکرائی
خوش کیوں نہ ہوں بھئی
میں راج کرنے کا سوچ کر یہاں آئی تھی پر تمہاری موجودگی میں یہ ناممکن تھا میری دیرینہ خواہش پوری ہو رہی ہے تو خوش کیو ں نہ ہوں میرا دل تو ناچنے کو چاہ رہا ہے۔۔اسنے فارہ کو چڑایا

تو ناچیں روکا کس نے۔۔۔۔۔۔۔ فارہ واقعی چڑی
ہااااااہائے میری بنو تو ۔۔۔۔۔رمشا کی بات منہ ہی میں رہ گئی کیونکہ فارہ رونا شروع ہو چکی تھی۔۔۔
ارے۔۔۔۔ارے۔۔۔۔ارے۔رے۔۔۔فارہ۔۔۔۔ جان ۔۔۔۔۔۔کیا ہوا وہ جلدی سے پاس آئی
بھابھی۔۔۔ وہ رمشا کے گلے لگ کر رونے لگی۔۔۔۔۔ رمشا بجائے اسے چپ کرانے کے خود بھی شروع ہو گئی۔۔۔

فائز جو پانی لینے آیا تھا یہ ایموشنل سین دیکھ کر ٹھٹھکا
آاااہہہہہم۔۔۔۔۔۔۔۔کیا ہو رہا ہے یہاں ؟....یہ بن بادل برسات کیوں؟؟؟؟
وہ دونوں ہنوز مصروف رہیں

اس سے پہلے کے وہ دھاڑیں مارنا شروع ہوتیں فائز نے دونوں کو الگ کیا

کم آن فارہ اس نے فارہ کو کندھے سے لگایا ۔۔۔۔ فارہ ۔۔۔۔بیٹا تم کون سا دور جا رہی ہو یہں تو ہو گی سو دونٹ وری جان
فائز نے بہن کے آنسو پونچھے۔۔۔سر پر بوسہ دیا۔۔۔۔۔چلو منہ دھو جا کر۔۔۔۔۔۔۔شاباش ہری اپ۔۔۔۔فارہ سر ہلاتی اپنے کمرے کی طرف چلی گئی
اور آپ۔۔۔۔وہ رمشا کیطرف موڑا جو سرخ ناک رگڑ رہی تھی۔۔۔آپ کے لیے بھی یہ کندھا حاضر ہے۔۔۔۔۔۔ جناب۔۔۔۔ سر خم کرتے ہوئے رمشا کو چھیڑا

رمشا نے فائز کے کندھے پر پنچ مارا اور مسکراتی ہوئی لاؤنج میں چلی گئی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رمشا نے عائش کو فون پر مبارک باد دی ڈیٹ فائنل ہونے کی۔
جناب کیسا فیل ہو رہا ان شا اللہّ ٹھیک 25 دن. بعد آپ جناب دلہا بننے والے ہیں ۔۔۔وہ شوخ ہوئی
" نارمل "عائش نے ٹکا سا جواب دیا
عائش تم بھی نہ بہت بور ہو پتہ نہیں میری بیچاری سی نند +بھابھی کا کیا ہو گا؟ 

تو اپنے پاس سنبھال کر رکھو اپنی بیچاری سی نند +بھابھی کو۔۔۔۔۔عائش نے دل کی بات کی۔

اووف میں نے سوچا تم خوش ہوگے اسی لیے فون کیا لیکن تم الٹا دل جلا رہے ہو میرا
میں۔۔۔۔۔ خوش۔۔۔۔۔۔ ہوں۔۔۔۔۔ بہت۔۔۔بلکہ بہت زیادہ ۔۔۔۔اب کیا پورے لاہور میں پوسٹرز لگواؤں خو شی سے۔۔۔ اس بات کے؟؟ 
تم سے بات کرنا ہی فضول ہے میں ہی بیوقوف تھی جو اینویں فون کیا۔۔۔
ٹیھنک گاڈ تم مانی تو سہی۔۔۔۔۔وہ ہنسا
کیا۔۔۔رمشا حیران ہوئی
یہی کہ۔۔۔۔۔۔ بیوقوف۔۔۔۔۔ ہو
عااائششش
ہاہاہاہا۔۔۔۔اسنے ہنستے ہوئے کال کاٹ دی
وہ اسوقت ریلیکس تھا کیونکہ پلان تو وہ کرچکا تھا اب توصرف عمل باقی تھا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دبئی فلائیٹ کی اناونسمنٹ ہو چکی تھی
عائش بھاری دل کے ساتھ اٹھا اپنا مختصر سا سامان اٹھایا اور اندر کی جانب بڑھا۔۔۔
اسکی چال میں وہ سر مستی وہ خوشی نہ تھی جو اپنی مرضی کرنے پر ہوتی ہے۔۔
شاید
وہ افسردہ تھا۔۔۔۔۔۔یاپھر۔۔۔۔۔۔ بے سکون
اُسے بے سکون ہونا چاہیے تھا کیونکہ
" دوسروں کو بے سکون کرنے والے یہ کیوں بھول جاتے ہیں کے وہ خود سکون سے رہ پائیں گے"
ابھی تو شروعات تھیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رمشا عائش اور فارہ کو جگانے انکے روم کی طرف بڑھی۔۔۔۔دروازہ کھلا دیکھ کر وہ حیران ہوتی اندر داخل ہوئی
یہ کیا؟؟؟؟؟؟ فارہ زمین پر بیڈ سے ٹیک لگائے گھٹنوں میں سر دیئے بیٹھی تھی ۔رمشا کو کسی انہو نی کا احساس ہوا۔۔وہ بھاگتی ہوئی پاس آئی ۔۔۔۔۔۔فارہ۔۔۔۔فارہ کیا ہوا ہے؟؟ عائش کدھر ہے۔۔۔فارہ ۔۔۔۔اسنے فارہ کو جنجھوڑا
فارہ ٹس سے مس نہ ہوئی
فارہ۔۔۔رمشا نے اسکا سر اوپر اٹھایا
اسکا دل دھڑک اٹھا۔۔۔۔یہ۔۔۔۔۔یہ حالت تو ایک رات کی دلہن کی نہیں ہوتی۔۔۔

سوجی آنکھیں، سرخ ناک، کانپتے ہونٹ، بکھرے بال۔۔۔۔
اووفف۔۔۔۔فا۔۔۔۔فا۔۔۔۔رہ کک۔۔۔۔کیا ہوا ہے
فارہ۔۔۔۔۔عائش کدھر ہے۔۔۔۔ فارہ بولو نا۔۔۔ کدھر ہے وہ. ۔۔رمشا نے اُسے ہلایا۔

چلا گیا۔۔۔۔۔
کدھر چلا گیا۔۔۔۔
پتہ نہیں۔۔۔۔۔فارہ کی بھاری مدھم آواز آئی
پتہ نہیں۔۔۔؟ کہاں گیا کچھ بتایا نہیں اس نے اور تم۔۔۔تم اس طرح۔۔۔۔۔کیا ہوا ہےبتاؤ میرا دل رک رہا ہے۔۔۔وہ روہانسی ہوئی
آپ کو پتہ ہو گا۔۔۔؟ کدھر گیا
مجھے۔۔۔مجھے کیسے پتہ۔ فارہ۔۔۔۔
رمشا کی نظر فارہ کے دوپٹے کے نیچے پڑے کاغذات پر پڑی اس نے جلدی سے پیپرز اٹھائے۔۔۔۔۔یہ۔۔۔۔۔یہ۔۔۔کیا۔۔۔ ہے

میرا منہ دکھائی کا گفٹ۔۔فارہ استہزایا ہنسی
گفٹ۔۔۔۔ کس ۔۔۔کس نے دیا؟ وہ اٹکی۔۔۔
کون دے سکتا ہےبھابھی ۔۔۔۔ یقیننًایہ حق آپ کے بھائی کے ہی پاس تھا
عائش نے۔۔۔۔وہ کیسے ۔۔یہ۔۔۔سب؟؟؟ 
فارہ اٹھی۔۔اب وہاں بیٹھنے کا کوئی جواز نہیں بچا تھا۔دوپٹہ اٹھا یا اور باہر کی جانب بڑھی

فارہ۔۔۔رکو۔۔۔کہاں جا رہی ہو۔۔۔۔فارہ۔۔۔فارہ رکو ۔پلیز فارہ۔۔۔۔رمشا اسکے پیچھے پیچھے سیڑھیاں پھلانگ رہی تھی
فارہ۔۔۔فارہ پلیز رکو۔۔رمشا نے راستہ روکا
بھابھی پلیز مجھے جانے دیں ۔آپ کا بھائی مجھ سے یہا ں رُکنے کا حق چھین چکا ہے اور روتی ہوئی دروازہ پار کر گئی۔۔
رمشا ساکت تھی۔۔۔۔
طوفان آ چکا تھا۔
جاری ہے
 
Zubair Khan Afridi Diary【••Novel ღ ناول••】. Zubair Khan Afridi
knowledgemoney