اعتبارِ وفا کون کرے
3 قسط

فارہ کیسے گھر پہنچی۔۔۔ وہ نہیں جانتی۔۔
لاؤنج خالی تھا۔۔۔۔ شاید۔۔۔ وہاں کے مکین کل کی تھکن اتار کر ابھی اٹھے نہیں تھے۔
وہ اپنے کمرے کیطرف بھاگی جہا ں سے وہ کل رخصت ہوئی تھی۔۔۔۔ہمیشہ کے لیے
لیکن اسکی قسمت اسے ایک دن میں ہی واپس لے آئی تھی۔۔۔۔ ہائے۔۔۔۔۔ یہ۔۔۔۔۔ قسمت

بے وفا وقت تھا، تم تھے، یا مقدر میرا
بات اتنی ہے کہ انجام جدائی نکلا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عائش نے ڈیٹ فائنل ہونے کے بعد ان 25 دن میں ہی اپنے پلان کو پایہ تکمیل تک پہچانا تھا
اس نے انہیں چند دنوں میں فارہ کو 4 فون کالز کیں۔۔۔
وہ جانتا تھا فارہ ڈرپوک اور کم ہمت ہے اسلیے اس نے اُسے دھمکانے کا پروگرام بنایا تھا
سب فون کالز میں اس نے فارہ کو بلکل نارمل انداز میں ڈرایا، دھمکایا۔۔۔
کہ۔۔۔ 
وہ شادی سے انکار کر دے کیونکہ وہ اسےخوش نہیں رکھ سکتا، شادی ہونے کی صورت میں نتائج کی ذمہ دار وہ خود ہو گی وغیرہ
اور وہ ریلکس تھا کے فارہ ضرور انکار کر دے گی

دوسری طرف۔۔۔۔۔ 

فارہ عائش کی فون کالز سے پریشان تھی کہ وہ ایسا کیوں کر رہا ہے
عائش کو اگر کوئی ایشو ہے تو وہ تایا جان اور تائی ماں سے شئیر کرے
مجھے کیوں تنگ کر رہا ہے
میں کس سے شئیر کروں یہ سب۔۔۔اللّہ جی۔۔۔۔کیا کروں میں
بھا بھی سے۔۔۔نہیں۔۔۔۔ اگر کوئی ایسی ویسی بات ہوتی تو وہ خود بتا دیتیں
تو پھر۔۔۔۔کیا کروں
امی۔۔۔یا۔۔۔۔بھائی
نہیں ۔۔۔۔مجھے کسی سے کچھ شئیر نہیں کرنا عائش اپنا مسلہ خود حل کرے اگر اسے ہے کوئی مسلہ اس شادی کو لے کر۔۔۔اسکا دل بجھا

کیا عائش کسی اور کو۔۔۔۔پسند۔۔۔کرتا ہے۔۔۔نہیں۔۔۔یہ کوئی بڑی بات نہیں وہ خود انکار کر دیتا۔۔۔اس بات پر۔۔۔تو پھر۔۔۔۔ ہو سکتا ہے بھابھی کی وجہ سے چُپ ہو اور اب مجھ سے انکار کروانا چاہ رہا ہو تاکہ اسکا مسلہ بھی حل ہو جائے اورکوئی دوسرا ایشو بھی نا کھڑا ہو۔

نہیں ہر گز نہیں۔۔۔عائش۔۔۔۔ میں بلکل بھی انکار نہیں کروں گی اپنا پرابلم خود حل کریں مرد ہیں آپ اور میں لڑکی کیا وجہ دوں گی انکار کی۔۔۔
نو۔۔۔۔۔ نیور۔۔۔۔۔ عائش 
میں انکار نہیں کر سکتی
وہ عائش سے ہمکلام تھی
اصل میں۔۔۔۔۔
فارہ کے انکار نہ کرنے کی تین ریزنز تھیں
ایک۔۔۔۔۔۔۔۔۔ماں باپ کی عزت 
دو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بھائی بھابھی کا گھر
تین۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس کے دل میں موجود محبت کا چور
جو نا جانے کب سے دل میں براجمان تھا
وہ جانتی نہ تھی کہ یہ دل کا چور اسکی بربادی لانے والا ہے ۔۔۔۔۔ورنہ شاید۔۔۔۔۔.

" بہت دشوار ہوتا ہے کسی کو یوں بُھلا دینا
کہ جب وہ جذب ہو جائے رگوں میں خون کی مانند"
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رمشا ساکت کھڑی تھی
مسز سکندر اسکی طرف آئیں
رمشا اسطرح کیوں کھڑی ہو۔۔۔۔ تم عائش اور فارہ کو جگانے گئی تھی اٹھ گئے وہ دونوں۔؟؟
انہوں نے دوپٹہ سیٹ کرتے ہوئے پوچھا۔
رمشا۔۔۔
اس سے پہلے کے وہ اسکی خاموشی پر غور کرتیں۔۔
سکندر صاحب بھی وہاں آئے۔۔
بیگم آج بھوک ہڑتال کروانے کا ارادہ ہے کیا؟؟ 
11 بج چکے ہیں ۔۔انہوں نے 11 بجنے کی اطلاع دی۔
مسز سکندر مسکرائیں ۔۔۔۔راحیلہ کا فون آیا تھا ابھی وہ لوگ ناشتہ لا رہے ہیں اسلئیے ویٹ کریں تھوڑا ناشتہ سب ساتھ کریں گے۔۔۔تب تک میں چائے بنواتی ھوں آپ کے لیے

رمشا۔۔۔۔ بیٹا اسطرح کیوں کھڑی ہو کیا ہوا۔۔۔؟ سکندر صاحب نے پوچھا
بابا۔۔۔۔رمشا باپ کے گلے لگ کر رونے لگی
ارے۔۔۔ رمشا کیا ہوا تم عائش لوگوں کو جگانے گئی تھی نا ۔۔۔مسزسکندر بھی پریشان ہوئی اسکے رونے سے
بابا۔۔۔۔بابا عائش چلا گیا 
عائش چلا گیا ۔۔۔۔کہاں۔۔۔؟ انہوں نے رمشا کو خود سے الگ کیا
بولو ۔۔۔رمشا کہاں گیا میرا بچہ۔۔۔ مسز سکندر بولیں
فارہ کہاں ہے۔۔۔؟۔سکندر صاحب نے سوال کیا جیسے وہ کچھ جان گئے ہوں
وہ بھی چلی گئی۔۔۔۔
چلی گئی۔۔۔؟۔ رمشا بول کیا ہوا ہے۔۔؟ کہاں گئے وہ دونوں ۔۔؟۔۔۔مسز سکندر دل پکڑ کر چیخیں

عااائشش ۔۔۔عائش نے فا۔۔۔فارہ کو طلا۔۔۔۔۔۔۔۔ق دے دی ہے ۔۔۔امی۔۔۔وہ دھماکا کر چکی
طلاق دے دی ہے۔۔اس نے۔۔وہ زاروقطار رونے لگی 
(سکندر صاحب جانتے تھے وہ جو آسانی سے مان گیا ہے شادی کیلیےضرور کچھ کرے گامگر طلاق۔۔۔۔ اتنا بڑا قدم ان کا بیٹا اٹھائے گا یہ وہ سوچ بھی نہیں سکتے تھے )وہ سرخ آنکھیں لیے ساکت تھے
شور سن کر رامش اور اسکی بیوی بھی لاؤنج میں آ چکے تھے
کیا ہوا ہے؟؟؟؟... رامش بولا
بھائی۔۔۔۔۔۔ عائش نے فارہ کو ڈایئورس دے دی ہے۔۔۔رمشا نے اطلاع دی
واٹ؟؟؟ 
ثمرہ نے ساس کو پکڑ کر صوفے پر بیٹھایا جو گرنے والیں تھیں
یہ کیا کہہ رہی ہو رمشا۔۔۔کہاں ہے عائش؟؟؟ رامش صدمے سے بولا
وہ چلا گیا ہے گھر چھوڑ کر ۔۔۔کہاں گیا ۔۔؟۔۔پتہ نہیں
اور فارہ بھی چلی گئی واپس۔۔۔ میں نے روکا بھی اُسے پر وہ۔۔۔۔۔۔رمشا نے روتے ہوئے ٹوٹے الفاظ میں تفصیلًا جواب دیا
بابا ۔۔۔آپ پلیز بیٹھیں۔۔۔۔۔ رامش نے باپ سے کہا جو ہونٹ بھینچے کھڑے تھے
رامش ۔۔۔اُسے کال کرو۔۔وہ مدھم سا بولے
جی۔۔۔کرتا ہوں
ایک۔۔۔دو۔۔۔۔تین۔۔۔چار بار۔۔۔۔۔باربار ۔۔۔کال کی مگر سوئچ آف تھا اُسکا سیل
موبائل آف ہے اُسکا۔۔۔رامش نے بتایا

آج تو ریسپشن ہے؟؟؟ اب۔۔؟؟؟ ثمرہ (مسز رامش )بولی
فون کر کے کہہ دو سب کو۔۔۔رامش۔۔۔کہ ولیمہ کینسل ہو گیا ہے۔۔۔سکندر صاحب ہلکی آواز میں بولے
اور ریزن۔۔۔ریزن کیا دوں۔۔؟۔۔۔رامش کشمکش میں تھا۔۔۔۔
عائش نے کس دوراہے پر لا کھڑا کیا تھا سبکو

کہہ دو سب سے۔۔۔۔۔۔۔ عائش مر چکا ہے۔۔۔۔۔ سکندر صاحب ڈھاڑے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہاں موت کا سا سناٹا تھا. ۔۔۔۔۔۔ 

"وابستہ ہو گئیں تھیں کچھ اُمیدیں آپ سے
اُمیدوں کا چراغ بُھجانے کا شکریہ"
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

فائز بیٹا جلدی کرو بہت ٹائم ہو چکا ہے وہ لوگ انتظار کر رہے ہونگے ہمارا ۔۔۔راحیلہ بولیں
جی چلیں ۔۔۔۔۔آئی ایم ریڈی سویٹ ہارٹ آف مائے ڈیڈ۔۔۔۔فائز نے ماں کو چھیڑا
تم نہیں سدھرو گے فائز۔۔۔۔میں سوچ رہی تھی شادی کے بعد پر تم تو بیٹی کے بعد بھی نہیں سدھرے۔۔۔انہوں نے خفگی دیکھائی۔۔۔
سدھر کر کیا کروں گا ۔۔ڈئیر لیڈی۔۔ماں کے گلے میں بانہیں ڈالیں۔۔
فائز۔۔۔
اووو ہوو ۔۔۔ سویٹ لیڈی۔۔۔ کیا ڈیڈ نے آپکی تعریف نہیں کی آج جو *خفا خفا سے سرکار نظر آتے ہیں* وہ بھی فائز تھا ایک کی دس سُنناے والا
فا۔۔۔ئز تنبیہ ہوئی
او-کے۔۔۔۔ سویٹی۔۔۔۔۔ ماں کے گال پر کِس کی۔۔
میں گاڑی نکالتا ہوں آپ ملازم سے کہہ کر سامان بھجوائیں
ہاں بھیجتی ہوں۔۔راحیلہ بیگم مسکرائیں۔۔
ان کا بیٹا شادی کے بعد بھی بلکل نہیں بدلا تھا ویسا ہی تھا سب کی عزت اور سب سے محبت کرنے والا۔۔۔ خدا نظرِ بد سے بچائے 
انہوں نے دل میں دعا کی۔۔۔
کچھ دیر بعد یہ قافلہ سکندروِلا کی طرف چل پڑا یہ جانے بغیر کے جس کے لیے وہ یہ سب لے جا رہے ہیں وہ تو وہاں موجود ہی نہیں۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

شادی میں 3 دن باقی تھے اور فارہ کیطرف سے ہنوز خاموشی تھی
عائش حیران وپریشان تھا
اس دبُو فارہ کی ہمت پر ۔۔۔نان سینس۔۔۔اسٹوپڈ۔۔۔۔بہادری دیکھو میڈم کی مجھے چیلنج کر رہی ہے ۔۔۔مجھے۔۔۔وہ استہزایا ہنسا۔۔۔۔فارہ بیگم۔۔۔۔۔بہت مہنگا پڑنے والا ہے تمہیں یہ چیلنج۔۔۔پھر ہنسا کسی کا مزاق اُڑاتی ہنسی سے۔۔۔۔
منہ کی کِھلانے والے منہ کی کھاتے بھی ہیں وہ شاید یہ بھول چکا تھا۔۔اسی لیے خوش تھا

عائش نے اسی دن لائیر سے ڈائیورس پیپرز تیار کروائے اور دبئی کی سیٹ بُک کروائی۔۔۔بہت رازداری سے۔۔۔۔ 
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اسلام وعلیکم! ایوری ون ۔۔۔ فائز کی فریش آواز سنائی دی۔۔
رمشا جلدی سے سر جھکا کر پاس سے گزر کر کیچن میں چلی گئی
ہییییییں۔۔۔۔یہ کیسا ویلکم کیا مسز۔۔۔۔۔وہ حیران سا خود سے بولا
پیچھے ہی سجاد اور راحیلہ بیگم داخل ہوئے سلام دعا کے بعد بیٹھے ہی تھے کہ
فائز بولا۔۔۔۔عائش اور فارہ نظر نہیں آ رہے اٹھے نہیں ابھی تک؟؟؟؟ 
لاؤنج میں عجیب سی سوگواریت تھی
جسے فائز محسوس کر چکا تھا
از ایوری ٹیھنگ او-کے تایا جان۔۔ وہ سوالیہ ہوا
ہاں ۔۔۔۔۔ہاں۔ اوکے۔۔۔رامش کیطرف سے جواب آیا
اب کے سجاد اور راحیلہ بھی ٹھٹھک چکے تھے اس خاموشی سے
کیا ہوا بھائی صاحب طبیعت ٹھیک ہے آپ کی؟؟؟ 
سجاد نے بھائی کی خاموشی دیکھ کر پوچھا
آں۔۔۔ہاں۔۔۔وہ چونکے۔۔۔۔ہاں ۔۔۔۔زندہ ہوں۔۔وہ شکستہ سا بولے
کیا ہوا ہے رامش کچھ بتاو گے ۔۔فائز کھڑا ہوا۔۔۔۔رمشا بھی آ گئی تھی واپس لاؤنج میں
تم بیٹھو یار۔۔۔۔رامش بولا
میری بہن کہاں ہے۔۔؟وہ ڈھاڑا۔۔۔ بہت زیادہ غلط ہونے کا احساس ہوا تھا اُسے
فا۔۔۔۔ئز۔۔۔۔۔۔۔ سجاد صاحب نے اسکے انداز پر سرزنش کی اُسے
ڈیڈ۔۔۔پلیز۔۔۔۔یہ لوگ بتا کیوں نہیں رہے آخر ہوا کیا ہے۔۔۔؟.۔وہ زچ ہوا
عائش نے فارہ کو ڈائیورس دے دی ہے۔۔۔رامش نے دھماکا کیا
وووواٹ۔۔؟؟؟؟
راحیلہ بیگم نے دل پکڑ لیا
فارہ کہاں ہے۔۔۔۔ سجاد بولے
عائش۔۔۔۔عائش۔۔۔۔کدھر ہے وہ بے غیرت۔۔۔۔۔۔فائز آوٹ آف کنٹرول ہوا ۔۔۔جیسے اسکے کانوں میں سورِ اسرافیل پھونکا گیا ہو
ریلیکس۔۔رامش نے اسکے کندھے پر تسلی کے انداز میں ہاتھ رکھا
جو اسنے زور سے جھٹکا۔۔۔کہاں ہے وہ بزدل نامرد۔۔۔۔زندہ نہیں چھوڑوں گا میں اُسے ۔۔اُسکی ہمت کیسے ہوئی میری معصوم بہن کو برباد کرنے کی ۔۔۔وہ بلند آواز میں ڈھاڑ رہا تھا
رمشا دور کھڑی کانپ رہی تھی۔اس نے فائز کو اتنے غصے میں کبھی نہیں دیکھا تھا
ہاتھوں کی مُٹھی جکڑی ہوئی، ہونٹ بھینچے، لہو رنگ آنکھیں
اس نے فائز کی آنکھیں دیکھ کر جھرجھری لی جیسے ابھی ان سے خون ٹپک پڑے گا
میں کچھ بکواس کر رہاہوں اگر آپ لوگوں کو سُنا ہو۔۔۔فائز جنجھلایا
راحیلہ رو رہیں تھیں اور سجاد وہ لُٹے پُٹے سے بیٹھے تھے جیسے وہاں موجود ہی نہ ہوں۔۔
وہ۔۔۔۔وہ۔۔۔واپس گھ۔۔۔۔گھر چلی گئی ہے۔۔۔رمشا نے اٹک اٹک کر جواب دیا
فائز رمشا کے بولنے پر اسکی طرف متوجہ ہوا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رمشا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عائش۔۔۔۔۔۔۔ کی۔۔۔۔۔۔۔۔ بہن۔۔۔۔۔۔اسکے دماغ میں جھماکا ہوا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

فارہ اس وقت اوندھے منہ بیڈ پر پڑی زاروقطار ہچکیوں سے رو رہی تھی۔۔اس کی حالت دیکھ کر کوئی اجنبی بھی پسیج جاتا اور۔۔۔۔۔۔عائش۔۔۔۔۔کیا وہ ایک پتھر دل انسان تھا جسے زرا بھی رحم نہ آیا اُس معصوم پر۔۔۔۔ جو ناجانے کب سے اُسکی محبت میں مبتلا تھی۔۔۔اور۔۔وہ اسکی محبت کو ٹھوکر مار گیا۔۔۔آہ۔۔۔یہ۔۔۔محبت

تُمہاری زندگی سے میں
بہت سے فاصلے لے کر
تمہیں بس اتنا کہتی ہوں
کسی کو زندگی سے
اس طرح رخصت نہیں کرتے
کہ مجھ کو زندگی سےجس طرح
تم نے نِکالا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اسجد آفس میں بزی تھا ایکسٹینشن بجا۔۔۔۔
یس۔۔۔؟
سر کوئی عائش سکندر صاحب آئے ہیں پاکستان سے آپ سے ملنا چاہتے ہیں
عائش۔۔۔۔؟۔۔۔
یس سر۔۔۔ عائش سکندر
اوکے بھیجو آفس میں
جی سر۔۔۔۔
عائش اچانک بِنا بتائے۔۔۔۔اسجد پریشان ہوا
دروزہ کھلا۔۔عائش کو سہی سلامت دیکھ کر جان میں جان آئی
اَبے او ڈئیرنگ کمینے تُو۔۔۔۔اسجد اپنی جُون میں آتا ہوا اس کی جانب بڑھا
عائش مسکرایا اس خطاب پر۔۔۔
ابے یار واٹ آ پلیزنٹ سرپرائیز ۔۔دل خوش کر دیا ۔۔۔۔مووں ۔۔۔آہ۔۔۔ہوائی کِس اچھالی اور گلے لگ گیا۔۔۔
کیسا ہے ؟؟؟ عائش بولا
ایز یویعل فِٹ۔۔۔۔فریش ساجواب آیا
تُو سنا کیسے اینٹری ماری۔۔۔ایوری ٹھنگ گڈ؟؟؟ 
یاہ۔۔۔۔گڈ۔۔۔۔عائش آہستہ سا بولا
او کے۔۔۔تو بیٹھیے جناب آپ کا ہی آفس ہے ویسے اتنا اچانک کیسے آیا۔۔۔۔؟ اسجد کو ہضم نہیں ہو رہا تھا اسکا اچانک آنا۔
تو چلا جاوں کیا ۔۔۔؟؟۔۔عائش چڑا ایک ہی بات سے اچانک ۔۔۔۔اچانک
اوئے۔۔۔۔۔۔ ہینڈسم۔۔۔۔۔۔ ناراض کیوں ہوتا ہے۔۔۔؟....جانی ...میں تو ایویں چیھڑ رہا تھا تجھے۔۔وہ ہنسا
اچھا پہلے چائے پانی۔۔۔پھر اور بات ۔۔وہ میزبان بنا
چائے۔۔۔جواب آیا
او -کے۔۔۔اسجد نے چائے کا کہا 
ہاں تو اب بتا اتنی اچانک۔۔۔۔؟؟؟؟
عائش گھوری ڈال کر کھڑا ہوا ۔۔۔۔میں جا رہا ہوں اوکے بائے۔۔۔۔۔۔اور دروازے کی جانب بڑھا

ہاہاہاہاہا۔۔۔اسجد کا چھت پھاڑ قہقہا بلند ہوا
میں دانت توڑ دوں گا تیرے۔۔۔۔۔سالے۔۔۔۔عائش چلایا
میری کوئی بہن نہیں ہے۔۔۔۔ہاہاہا۔۔۔وہ پھر سے ہنسا۔۔۔
عائش تھک کر خود ہی صوفے پر بیٹھا وہ جانتا تھا اسجد کمینا ابنِ کمینا ہے۔۔

اسجد جب ہنس چکا دل کھول کر تو بولا۔۔یار بات شروع ہی یہاں سے ہوتی ہے اب میں کیا کروں۔۔۔؟...مسکین سی شکل بنائی
میں نہیں آ سکتا کیا تیرے پاس جو ایک ہی بکواس کیے جا رہا ہے۔۔۔عائش روڈ ہوا

غصہ کیوں ہوتا ہے جانی ۔۔؟۔۔کیا ساتھ والی سیٹ پر کوئی مائی بی بی تھی ۔۔۔۔اسجد نے آنکھ ماری

میں ہی پاگل تھا جو یہاں آگیا۔۔تف ہے مجھ پر۔۔ایک وہ پہلے ہی ڈپریس تھا اور باقی کی کسر اسجد پوری کر رہا تھا فضول باتوں سے۔۔۔وہ سچ میں یائیپر ہوا
او۔کے. او۔کے ریلیکس یار آئی ایم جسٹ جوکنگ۔۔اسجد نے یقین دلایا
اتنے میں چائے آگئی اسجد نے چائے بنا کر دی اور خود کپ لے کر سوچتا ہوا بیٹھا۔۔۔کوئی نہ کوئی گڑ بڑ ہے ضرور۔۔ ورنہ عائش اتنی جلدی اتنا سیریس ہائیپر نہیں ہوتا۔۔۔
عائش اپنی سوچ میں تھا کہ پتہ نہیں گھر میں کیا کچھ ہو چکا ہو گا۔۔۔سب کا ری ایکشن کیا ہو گا اس کے اقدام پر۔۔۔۔اور۔۔۔۔۔رمشا۔۔۔۔۔اسکا کیا ہو گا۔۔۔۔کہیں۔۔۔۔۔فائز۔۔۔اُسے۔۔۔۔نہیں۔۔اس سے آگے وہ سوچنا نہیں چاہتا تھا
وہ بہت خود غرض واقع ہوا تھا ۔۔۔اور۔۔۔ وہ یہ بات بہت اچھی طرح جانتا تھا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

فارہ جب رو رو کر تھک چکی تو اسے لگا جیسے اسکا گلا بند ہو رہا ہو اسے پانی کی ضرورت محسوس ہوئی لیکن کمرے میں پانی موجود نا تھا
وہ خود کو سنبھالتی اٹھی اور بمشکل چلتی ہوئی کیچن تک پہنچی۔۔۔پا۔۔۔۔۔پانی۔۔۔۔وہ اٹکی
وہاں موجود ملازمہ نے فارہ کو دیکھا تو چیخی ۔۔۔فارہ باجی ۔۔۔آپ۔۔۔۔؟؟
پا۔۔۔پانی۔۔۔۔
ملازمہ اسکی اُجاڑ حالت دیکھ کر حیران تھی فارہ باجی یہاں کیا کر رہیں ۔۔؟ کہیں۔۔۔؟؟
فا۔۔۔۔فارہ۔۔۔۔فارہ باجی۔۔۔۔وہ چلائی
فارہ زمین بوس ہو چکی تھی۔

"چھوڑ جانے کا کوئی دُکھ نہیں نقیب
بس کوئی ایسا تھا جس سے یہ اُمید نہ تھی"
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اُسے یہاں آئے ہوئے 2 دن ہو چکے تھے اسکا 
موبا ئل ابھی بھی آف تھا۔۔۔۔۔وہ روم کی بالکونی میں گرل پر ہاتھ ٹکائے جھکا کھڑا تھا۔۔۔۔وہ خوش نہیں تھا اسے تو خوش ہونا چاہیے تھا پر اس کا دل ابھی بھی پیچھے ہی اٹکا ہوا تھا۔۔۔ناجانے اب تک۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسجد کی آواز نے اس کا تسلسل توڑا۔۔۔۔کدھر گم ہے یار ۔۔۔وہ نوٹ کر چکا تھااسکی پریشانی کو پر ابھی تک اگلوا نہیں سکا تھا
عائش۔۔۔۔۔؟؟؟؟
ہوونں۔۔۔۔۔۔۔ عائش چونکا
کیا بات ہے یار میں دیکھ رہا ہوں تُو اپ سیٹ ہے کوئی پریشانی ہے تو شئیر کر۔۔۔۔ میرے خیال میں ہماری دوستی اتنی گہری تو ہے کے اپنے پرابلمز شئیر کر سکیں۔۔اسجد نے سنجیدگی سے کہا۔۔
نہیں ۔۔۔کوئی پرابلم نہیں تیرا وہم ہے آئی ایم او۔کے
تُو بتانا نہیں چاہتا یہ اور بات ہے ۔۔بٹ آئی نو دئیر از سمتھنگ رونگ۔۔۔۔۔ اسجد کو افسوس ہوا اسکے نا بتانے پر۔۔
عائش خاموش رہا۔۔۔
۔
دس منٹ کی خاموشی کو عائش ہی نے توڑا
۔
آئی ڈائیورسڈ فارہ۔۔۔آہستگی سے بم پھوڑا
واٹ۔۔۔؟؟؟؟؟ اسجد اچھلا
ڈائیورس۔۔۔؟؟؟؟۔۔۔شا۔۔۔شادی کب ہوئی۔۔؟؟؟؟؟۔ وہ حیران ہوا
پرسوں۔۔۔۔پھر دھماکا کیا
پرسوں۔۔۔۔۔یعنی۔۔۔۔ شادی کے اگلے دن ہی۔۔۔ڈائیورس۔۔۔کیونکہ ولیمے کے دن تو وہ دبئی پہنچ چکا تھا اسجد کی پاس۔۔۔۔۔عائش۔۔۔۔۔یہ کیا۔۔۔۔۔۔۔۔ ِکیا تُو نے۔؟؟؟؟
دِسگسٹنگ۔۔۔۔۔۔اس نے گرل پرمُکا مارا۔۔مجھے تجھ جیسے بندے سے یہ امید نہیں تھی اگر یہی کرنا تھا تو پھر شادی ہی نا کرتا کسی معصوم کی زندگی برباد کر دی تُو نے ۔۔اسے افسوس ہوا
کیا ملا تجھے ہاں ۔۔۔۔بول۔۔۔کیا ملا ۔۔۔؟؟؟...
اسجد نے غصے سے اُسے جھنجھوڑا
اٹس ٹو مچ۔۔۔۔ٹوومچ۔۔۔عائش
اس نے اپنےبال جکڑے

عائش شرمندہ سا سر جھکائے کھڑا تھا۔ کیا جواب دیتا ۔۔کوئی جواب نہیں تھا اسکے پاس اپنی اس چِیپ حرکت کا۔۔
کیوں دی تُو نے ڈائیورس انہیں۔۔۔۔؟؟ اسکی خاموشی پر پھر سے بولا
عائش ۔۔تیرے سے پوچھ رہا ہوں کیوں دی ڈائیورسسسسسسس۔۔؟؟؟
چند منٹ وقفے کے بعدعائش بولا۔۔۔۔پتہ نہیں۔۔۔۔
واٹ۔؟۔اتنا بڑا قدم تُو بغیر کسی وجہ کے اُٹھا
آیا۔۔ریئلی دس اپوینٹنگ۔۔۔

آئی ڈونٹ لائیک ہر ایز آ وائف
وہ دَبو سی، ڈرپوک اور کم اعتماد لڑکی تھی مجھے ایسی لڑکیاں بلکل اٹریکٹ نہیں کرتیں یو نو ڈیٹ۔۔وہ بے بسی سے بولا
لیکن اتنی چھوٹی بات پر ۔۔تجھے کوئی حق نہیں پہنچتا۔۔۔۔ عائش۔۔۔۔ کہ تُو اسطرح کسی معصوم کے جزبات سے کھیلے اور وہ بھی وہ لڑکی جسے تُو بیوی بنا چکا تھا۔۔۔اسجد کادل چاہ رہا تھا کہ اُسے اوپر سے نیچے پھینک دے۔۔ اسکے علاوہ بھی کوئی اور ریزن ہے کیا؟؟؟ اسے یقین نہیں آ رہا تھا کہ عائش اتنی چھوٹی بات پر ایسا کرے گا۔
نہیں۔۔۔
کوئی اور پسند ہے۔۔؟؟؟..
نہیں۔۔۔ 
تو پھر۔۔۔۔۔؟؟؟؟ 
پتہ نہیں۔۔۔۔
کیا وہ پڑھی لکھی نہیں ہے؟ 
ہے۔۔۔۔
خوبصورت نہیں ہے؟ 
ہے۔۔۔۔۔۔۔۔
خوب سیرت نہیں ہے؟ 
ہے۔۔۔۔
وہ ایک ٹرانس میں جواب دے رہا تھا
تو پھر لعنت ہے تجھ پر۔۔۔۔ اسجد نے دل کی بھڑاس نکالی۔۔
ذلالت کی انتہا ہے یار ۔۔کہاں ملتی ہے آج کل ایسی لڑکی اور تُو ملی ملائی کو چھوڑ آیا۔۔۔
تف ہے تجھ پر۔۔اسجد کوافسوس ہوا

کیا کرتا پھر۔۔؟عائش بے چارگی سے بولا

تجھے کوئی ایشو تھا تو۔۔۔۔ 
تُو۔۔۔تُو ویسے ہی آ جاتا چھوڑ کر مگر یہ ڈائیورس۔۔۔یہ نا دیتا یار۔۔۔
واپسی کا کوئی دروازہ تو کھلا رکھتا۔۔مجھے بہت دکھ ہو رہا ہے۔۔عائش ۔۔وہ واقعی دُکھی تھا عائش کی کم عقلی پر۔۔۔

عائش بھی یہی سوچ رہا تھا
کہ واپسی کا کوئی دروازہ تو کھلا رکھنا چاہیے تھا۔
پر۔۔۔اب۔۔۔اب۔۔کیا۔۔سب کچھ ختم ہو چکا ہے وہ خود سے یہ سوال پوچھ رہا تھا۔

**کیا واقعی سب کچھ ختم ہو چکا تھا**
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 جاری ہے

 
Zubair Khan Afridi Diary【••Novel ღ ناول••】. Zubair Khan Afridi
knowledgemoney