اعتبارِ وفا کون کرے
4 قسط

رمشا
عائش کی بہن ۔۔۔فائز کے دماغ میں جھما کا ہوا
تائی جان۔۔۔۔وہ مسز سکندر سے مخاطب ہوا جو اب تک خاموش تھیں۔
آپ کا بیٹا شاید بھول گیا تھا کہ جس لڑکی کو وہ برباد کر رہا ہے ایکچولی اس کے سا تھ اسکے کیا کیا رشتے تھے۔۔؟وہ رمشا کی طرف موڑا
رمشا اسکی نظروں سے کانپی۔۔۔یا اللّہ ۔۔۔۔۔خیر۔۔۔۔رحم۔۔۔میرے۔مالک۔۔۔۔رحم۔۔۔وہ زیرِلب بڑبڑائی۔۔۔
کیا۔۔۔۔کیا مطلب۔۔۔؟۔۔۔مسز سکندر ہکلائیں
مطلب۔۔۔صاف اور سیدھا ہے تائی جان ۔۔۔عائش کی بہن میری بیوی ہے۔۔۔۔آرام سے بم پیھنکا
تم۔۔۔۔تم۔۔۔نہیں۔۔۔فائز بیٹا۔۔تم ایسا نہیں کرسکتے ۔۔۔ رمشا تمہاری بیٹی کی ماں ہے۔۔وہ رو دیں۔
فائز اس سب میں رمشا کا کیا قصور ہے؟؟؟؟ رامش بولا
قصور تو میری بہن کا بھی نہیں تھا پھر اسکو کیوں سزاملی۔۔۔؟؟۔۔
تم اُس کا بدلہ لو گے۔۔؟؟۔۔رامش پریشان ہوا
نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں ہر گز تمہارے بھائی جتنا گھٹیا نہیں ہوں اور نہ ہی میری ماں نے میری تربیت ایسی کی ہے۔۔۔لیکن ۔۔۔۔اتنا اچھا بھی نہیں ہوں۔۔۔۔ جو آسانی سے بھول جاؤں۔۔اور ویسے بھی۔۔۔وہ کچھ اور بھی بولتا کہ سیل وائبریٹ ہوا
گھر کا نمبر دیکھ کر وہ پریشان ہوا۔۔جلدی سے کال پک کی۔۔۔
ہیلو۔۔۔۔
صا۔۔۔۔صاحب۔۔جی۔۔فا۔۔۔فارہ بی بی۔۔۔۔۔۔وہ ہکلائی۔۔
کیا ہوا فارہ کو۔۔۔؟؟؟وہ چیخا
سب متوجہ ہوگئے۔۔
وہ بے ہوش ہو گئیں ہیں۔۔۔ملازمہ نے بتایا
اوہ نو۔۔۔۔۔تم۔۔۔تم ایسا کرو مجید( ڈرائیور) سے کہو وہ تمہیں اور فارہ کو ہوسپٹل لے کر پہنچے میں آ رہا ہوں وہیں۔۔۔فائز نے اسے ہوسپٹل کا نام بتایا۔۔۔
جی ٹھیک ہے۔۔۔وہ بولی
فائز۔۔فائز بیٹا کیا ہوا میری بچی کو ۔۔راحیلہ کھڑی ہوئیں
پتہ نہیں۔۔بے ہوش ہو گئی ہے ہمیں نکلنا ہے چلیں۔۔۔
چلیں ڈیڈ۔۔وہ باپ سے بولا جو ابھی بھی سر جھکائے بیٹھے تھے
آں۔۔ہاں۔۔ہاں چلو۔۔وہ چونک کر بولے
فائز انہیں لے کر آندھی طوفان کی طرح نکلا وہاں سے۔۔۔

پیچھے سکندر وِلا کے مکین رہ گئے

ہمیں بھی چلنا چاہیئے۔۔۔رامش شرمندہ سابولا
ہاں چلو۔۔۔سکندر صاحب نے اجازت دی
اور وہ سب بھی پیچھے ہی روانہ ہو گئے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

فائز نے ریسپشن پر پوچھا۔۔۔فارہ ایمرجنسی میں تھی۔۔وہ پریشان ہوا فارہ اسکی بہن کم دوست اور بیٹی زیادہ تھی۔۔یا اللّہ رحم۔۔۔وہ رو دینے کو تھا
اتنے میں رامش لوگ بھی آ گئے۔۔کیا ہوا۔۔؟۔۔سب ٹیھک ہے؟ رامش نے پوچھا
فائز جواب دیے بنا ہی آگے بڑھ گیا ایمبرجنسی کی طرف۔۔
آئی سی یو میں ہے۔۔۔سجادصاحب نے جواب دیا
وہ سب وہاں موجود فارہ کی تندرستی کی دعائیں مانگ رہے تھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عائش کا دل چاہ رہا تھا کہ وہ گھر فون کرے پر ہمت نہیں پڑ رہی تھی۔۔وہ کشمکش میں تھا کہ
کرے۔۔۔یا نہ۔۔۔۔کرے
اندھیرا کیے کیوں پڑا ہے۔۔۔ یار۔۔۔۔ طبیعت ٹھیک ہے۔۔؟۔۔اسجد آفس سے واپسی پر اُسکے روم میں آیا
عائش ابھی تک اُسی کے گھر میں رہ رہا تھا۔
ہاں۔۔ٹھیک ہوں۔۔۔ وہ سیدھا ہوا
ملگجا سا حُلیہ تھا اُسکا
اسجد نے دیکھا دو دن سے وہی کپڑے پہن رکھے تھے اُس نے۔۔اسے افسوس سا ہوا جلد بازی میں وہ اپنا ہی نقصان کر بیٹھا تھا ۔۔۔۔۔۔گھر والوں سے روپوش رہنا کوئی آسان نہیں تھا اور ویسے بھی وہ پچھلے 3 سال سے امریکہ میں تھا اور اب پھر سے یہ تنہائی۔۔۔پر اب کیا ہو سکتا تھا۔۔۔۔؟
کیا ہوا۔۔۔۔ ایسے کیوں دیکھ رہا ہے۔۔۔؟۔۔۔عائش نے اسجد کو خود کیطرف ٹکٹکی سے دیکھتے پا کر پوچھا
کچھ نہیں۔۔۔اسجد نے سر جھٹکا
کب تک مجنوں بنے رہنے کا ارادہ ہے۔۔۔۔ اس نے عائش کے حلیے پر چوٹ کی
پتہ نہیں۔۔وہ شکستہ سا بولا
کچھ پتا بھی ہے تجھے جو بھی پوچھو۔۔۔۔ پتہ نہیں۔۔۔۔۔۔ پتہ نہیں۔۔۔ اس پتہ نہیں کے چکر میں آج تُو یہاں اُجڑا ہوا بیٹھا ہے۔

عائش سر جھکائے شرمندہ تھا
اسجد جان گیا تھا وہ پچھتا رہا ہے وہ بھی اتنی جلدی اس لیے بات بدلی( جوبھی تھا وہ اسکا دوست تھا اور وہ اُسے مزید شرمندہ نہیں کرنا چاہتا تھا) 
باہر نکل اس فیز سے جو ہونا تھا ہو چکا اب آگے کا سوچ۔۔۔

تُو میرے لیے کسی اپارٹمنٹ کا بندوبست کر دے یار۔۔۔۔ مہربانی ہو گی ۔۔۔۔میں کب تک تجھ پر بوجھ بنا رہوں گا۔۔۔وہ ہلکا سا مسکرایا
میرا یہ مطلب نہیں تھا ۔۔۔۔عائش
میں جانتا ہوں یار۔۔۔پر اتنی مہمان نوازی کافی ہے۔۔تیری فیملی ہے ۔۔۔بھائی بھابھیاں ہیں اسلیے اچھا نہیں لگتا۔۔سمجھا کر۔۔۔۔عائش بولا

او-کے۔۔بٹ عائش کسی کو بھی اعتراض نہ ہوتا یار۔۔۔وہ افسردہ ہوا
آئی نو بٹ پتہ نہیں یار کب تک یہاں ہوں اس لیے کچھ وقت خود کے ساتھ رہ کر آگے کا فیصلہ کرنا چاہتا ہوں۔
او-کے۔۔فائن ۔۔میں دیکھتا ہوں اپارٹمنٹ۔۔۔۔ تو ٹینشن نہ لے سب ٹھیک ہو جائے گا ۔۔۔۔ان شا اللّہ اسجد نے اسکے کندھے پر ہاتھ رکھ کرتسلی دی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ڈاکٹر کو اپنی طرف آتا دیکھ کر فائز آگے بڑھا
از شی اوکے۔۔۔۔وہ جلدی سے بولا
واٹس ریلیشن ود پیشنٹ۔۔
مائی سِس۔۔۔۔مدھم جواب آیا
ان کا بی۔پی خطرناک حد تک شوٹ کر گیا تھا بروقت ٹریٹمنٹ کی وجہ سے زیادہ نقصان نہیں ہوا۔۔لیکن یہ سب شدید ڈپریشن کا نتیجہ ہے۔۔ اتنی سی ایج میں بی۔پی کا اتنا زیادہ شوٹ کر جانا اچھا سائن نہیں۔۔۔اینی وے۔۔انکو نیند کے انجیکشن دے دئیے ہیں۔۔۔ کوشش کریں کہ اُنکو ٹینشن فری ماحول پروائڈ ہو ۔
جی۔۔۔۔۔۔۔۔۔فائز نے سر جھکایا
ڈاکٹر نے تسلی کے انداز میں کندھے پر ہاتھ رکھا اور چلا گیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عائش نے اسجد کی مدد سے فرنشڈ اپارٹمنٹ رینٹ پر لے لیا تھا۔۔۔۔ ابھی کچھ دن ریلیکسیشن کے بعد وہ آگے کی پلانگ کرنا چاہتا تھا۔
وہ پاکستان سے مختصر سا سامان لایا تھا اور اب شاپنگ کرنا چاہتا تھا اس مقصد کےلیے وہ مال گیا۔۔۔۔۔۔ لیکن راستے میں وہ مزید رقم لینے بنک چلا گیا اکاونٹ ترانسفر کرواچکا تھا وہ

اکاونٹنٹ کو مطلوبہ رقم بتائی۔۔۔
دیئر از نو بیلنس ان یور اکاونٹ سر۔۔جواب آیا
وہ حیران ہوا۔۔پلیز چیک اٹ اگین۔۔
اوکے۔۔
یس سر۔۔۔۔۔۔ اٹس نِل
اوکے تھینکس۔۔وہ باہر آیا
یہ کیا ہوا اُسکے اکاونٹ میں اچھی خاصی رقم موجود تھی۔۔۔۔پھر۔۔۔
اپنے مطلوبہ بنک کال کر کے پوچھا تو۔۔۔ جواب آیا
سر آپکا اکاونٹ دو دن پہلے سِیل ہو چکا ہے۔

اوہ شٹ۔۔۔۔بابا آپ نے اکاونٹ سِیل کروا دیا ۔۔۔وہ باپ سے مخاطب ہوتا پریشان ساواپس اپارٹمنٹ کیطرف چل دیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

فارہ کے ہوش میں آنے پر کسی نے اس سے ڈائیورس سے ریلیٹد بات نہیں کی۔۔
فائز نے سکندر وِلا کے مکینوں کو فارہ سے ملنے نہیں دیا۔۔۔۔۔۔ وہ نہیں چاہتا تھا کہ فارہ کی طبیعت پھر سے بگڑے۔۔
وہ گم سم سی تھی ۔۔۔۔
ایک دن بعد ڈسچارج ہو کر گھر آ گئی تھی مگر خاموشی نہ ٹوٹی تھی اُسکی۔۔۔۔ 

""جھوٹی مسکان لیے اپنے غم چھپاتے ہیں
سچی محبت کرنے کی بھی کیا خوب سزا ملی""
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عائش نے اسجد کی مدد سے جاب تلاش کر لی تھی ۔۔۔۔اُسے باپ سے کوئی شکوہ نہ تھا۔۔۔۔۔ اُسکے کیے کے بدلے میں یہ بہت معمولی
ری ایکشن تھا اُن کا۔۔
وہ جانتا تھا وہ فارہ کے ساتھ ساتھ گھر 
والوں کیساتھ بھی بُرا کر چکا ہے۔۔ اسی لیے خاموشی سے سہہ رہاتھا ۔۔۔۔۔۔وہ گھر فون کرکے وہاں کے حالات ملازم سے معلوم کر چکا تھا۔۔
وہ یہ جان کر تھوڑا ریلیکس ہوا تھا کے فائز نے کوئی انتہائی قدم نہیں اٹھایا تھا۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سجاد ہاوس میں خاموشی کا راج تھا۔۔۔۔۔ سب ایک دوسرے سے نظریں چرائے ہوئے تھے۔۔۔۔۔۔ طوفان آ کر گزر گیا تھا پر تباہی کے اثرات ابھی بھی موجود تھے۔۔
سجاد صاحب آج اتنے دن بعد بیٹی کے روم میں جا رہے تھے۔۔وہ شکستہ سا تھے
وہ جیسے ہی فارہ کے روم میں داخل ہوئے تواُسے نماز میں مشغول دیکھ کر انکو سکون ملا۔۔۔۔کیونکہ وہ جانتے تھے کہ جس ذات سے رجوع کیا ہے اُن کی بیٹی نے۔۔۔۔ وہ پاک ذات ضرور صبر دے گی اُسے۔۔۔۔ان۔۔شا۔۔اللّہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 
امی۔۔۔ایک ماہ ہونے والا ہے اور فائز نے پلٹ کر پوچھا بھی نہیں۔۔۔۔
انہیں تو آیت کا بھی خیال نہیں جس میں انکی جان بستی ہے۔۔۔۔وہ روہانسی ہوئی
تم پریشان مت ہو سب ٹھیک ہو جائے گا اللّہ پر بھروسہ رکھو بیٹا۔۔۔۔مسز سکندر نے تسلی دی
امی کیا کروں چین ہی نہیں مل رہا ۔۔۔وہ رو دینے کو تھی۔۔
فارہ کو بھی دیکھے اتنے دن گزر گئے پتہ نہیں کس حال میں ہوگی۔۔۔۔۔ وہ۔۔۔۔۔

ہاں۔۔۔۔ فارہ سے تو میں بھی ملنا چاہ رہی ہوں بیٹھے بیٹھائے کیسا روگ لگ گیا بچی کو۔۔۔۔ سوچتی ہوں تو دل ہولتا ہے میرا۔۔۔۔۔ اللہّ صبر دے اُسے۔۔۔۔آمین
ماں ہوں۔۔۔۔۔ عائش کو بددعا بھی نہیں دے سکتی۔۔۔۔۔۔۔۔ پر معاف بھی نہیں کروں گی۔۔۔۔ وہ دوپٹہ منہ پر رکھ کر رونے لگی
امی دفعہ کریں۔۔۔ اس خود غرض انسان کو جو ہم سب کو شرمندہ کر گیا۔۔۔۔وہ آزردہ سی تھی

امی۔۔۔مجھے بتائیں۔۔۔ میں کیا اب یہیں رہوں گی۔۔۔۔۔ وہ رودی
اللّہ نہ کرے۔۔۔۔۔ میری جان۔۔۔۔۔ میں آج ہی سکندر سے بات کرتی ہوں۔۔۔انہوں نے رمشا کو گلے لگا لیا۔
"وہ سب فارہ کے لیے صبر مانگ رہے تھے کوئی اُسکی آزمائش کے خاتمے کی دعا کیوں نہیں مانگ رہا تھا۔۔؟؟۔۔۔"
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

فارہ ٹیرس پر کھڑی چاند کو دیکھ رہی تھی
یا اللّہ مجھے سکون دے دے۔۔
۔۔
عائش۔۔۔آپ نے میرے ساتھ بلکل بھی اچھا نہیں کیا۔۔۔۔پر یہ کیسی بے بسی ہے۔۔۔۔۔۔کہ میں چاہ کر بھی آپکو کوئی بددعا۔۔۔۔ نہیں دے پا رہی ہوں۔

کاش۔۔۔۔کاش کہ آپ جان سکتے۔۔۔۔۔کہ۔۔۔۔۔کوئی آپکو کس قدر چاہتا ہے۔۔۔اس نے آنسو پونجھے

مم۔۔۔میری۔۔۔میری محبت کی تذلیل۔۔۔۔تو کی ہی تھی ۔۔۔۔۔۔پر۔۔۔۔۔میری نسوانیت کی توہین نہ کرتے
کچھ۔۔۔۔کچھ تو ۔۔۔۔پردہ۔۔۔رہنے دیتے۔۔۔عائش
وہ پھوٹ پھوٹ کر رو دی 
چاند بھی اسکے دکھ پر دکھی تھا۔۔۔

""بکھرے گا جب تیرے رخسار پہ تیری آنکھ کا پانی
تجھے احساس تب ہو گا محبت کس کو کہتے ہیں""
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عائش اسوقت اپنے اپارٹمنٹ کی بالکونی میں افسردہ سا کھڑا تھا۔۔۔۔۔اُسے یہاں آئے ہوئے پانچ ماہ سے زائد وقت ہو چکا تھا۔۔۔۔ وہ اندر سے بہت ٹوٹ چکا تھا۔۔۔ ان چند ماہ میں وہ بہت پچھتایا تھا اپنے کیے پر۔۔۔۔۔۔
وہ کوئی رات سکون سے سو نہیں پایا تھا۔۔۔۔جب بھی سونے کےلیے آنکھیں بند کرتا۔۔۔۔۔۔ فارہ کا معصوم چہرہ اسکا سکون درہم برہم کر دیتا۔۔ اُس کے کا نوں میں فارہ کے الفاظ سرگوشی بن کر گونجنے لگتے۔۔۔۔۔
*مم۔۔۔میں۔۔آپ۔۔۔آپ سے ۔۔۔بب۔۔۔ بہت محبت کرتی ہوں*
فارہ کا اظہارِ محبت اُسے تڑپاتا تھا۔۔۔ وہ کانوں پر ہاتھ رکھتا ،تکیے رکھتا۔۔۔۔ پر۔۔۔ پھر بھی یہ گونج صاف سنائی دیتی۔۔
اُس کے شعور، ،لاشعور میں ہر طرف۔۔۔ فارہ ہی۔۔۔۔فارہ تھی۔۔
وہ جانتا تھا۔۔۔۔۔ کہ۔۔۔۔ وہ فارہ کے ساتھ غلط کر چکا ہے۔۔۔جسکی کوئی معافی نہیں ۔۔۔پر۔۔۔پھر بھی وہ ہر روز تصور میں۔۔۔ فارہ سے معافی مانگتا تھا.
دوسروں کو بے سکون کرنے والے خود بھی سکون سے نہیں رہ پاتے۔۔۔ یہ بات اچھی طرح اُسکی سمجھ میں آ چکی تھی۔

""بس۔۔۔۔۔۔تمہیں نہ سوچوں تو بچ سکتا ہوں
طبیب نے یہ دوا، ہاتھ جوڑ کر بتائی ہے""
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

فارہ کیچن کیطرف جارہی تھی کے لاؤنج میں فائز کو جوتوں سمیت صوفے پر لیٹے پایا۔۔ فارہ کو افسوس ہوا کہ۔۔ وہ اپنے غم میں بھائی کو بھول ہی گئی۔
آہستگی سے چلتی ہوئی پاس آئی۔۔۔۔بھائی۔۔۔۔۔مد ھم آواز ابھری
فائز نے یہ آواز ناجانے کتنے دن بعد سُنی تھی۔۔ فورًا اُٹھ بیٹھا۔۔۔فارہ۔۔۔۔۔
بھائی اسطرح کیوں لیٹے ہیں۔۔۔ طبیعت ٹھیک ہے آپکی۔۔۔؟..وہ فکرمند ہوئی
فائز بہن کی فکر پر ہلکا سا مسکرایا۔۔۔میں ٹھیک ہوں میری ۔۔جان
بھائی۔۔۔۔بھابھی کو لے آئیں جا کر ۔۔۔اُس نے بات بڑھائی
یہ ممکن نہیں۔۔۔فارہ
کیوں ممکن نہیں۔۔۔بھائی۔۔اس میں بھابھی کا کیا قصور ۔۔۔؟۔۔۔آپ کیسے رہ سکتے ہیں۔۔ بھابھی اور آیت کے بغیر ۔۔
میں بہت مِس کر رہی ہوں ۔۔۔پلیز بھائی۔۔۔لے آئیں نا۔۔۔وہ بضد ہوئی
فارہ۔۔۔۔
کوئی اگر مگر نہیں ۔۔آپ جا رہے ہیں ۔۔بس

فارہ میں یہ سب اتنی آسانی سے بھولنے والا نہیں۔۔۔۔اسلیے ضد مت کرو
اس سب میں بھابھی کا کوئی قصور نہیں ہے پھر سزا اُن کو کیوں مل رہی ہے۔۔۔؟؟؟
آپ مرد کتنے خود غرض ہوتے ہیں۔۔۔بھائی ۔۔۔غلطی کسی اور کی ہی کیوں نہ ہو پر۔۔۔۔۔ مشقِ ستم عورت کو ہی بناتے ہیں۔۔۔
دس از ناٹ فئیر
ویسے بھی یہ میری اپنی قسمت کا لکھا تھا۔۔۔۔ جو ہو چکا۔۔۔۔۔اور قسمت کا لکھا کوئی نہیں مٹا سکتا۔۔۔بھائی ۔۔۔لہذٰا اپنی اور بھابھی کی خودساختہ سزا ختم کریں۔۔۔تفصیلًا جواب دیا

فارہ۔۔۔تم سمجھ نہیں رہی ہو ۔۔۔میں۔۔۔۔۔۔۔۔وہ کچھ اور بھی کہتا کہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پاپا۔۔۔۔۔۔۔کی آواز پر موڑا۔۔۔۔
آیت بھاگتی ہوئی باپ سے چمٹی۔۔
فائز نے دروازے میں سکندر، مسز سکندر اور رمشا کو کھڑے دیکھا۔۔غصہ ضبط کرتے ہوئے جھک کر بیٹی کو اٹھایا۔۔۔۔جو ٹانگ سے چمٹی تھی اور لمبے لمبے قدم اٹھاتا۔۔کمرے کیجانب بڑھ گیا۔۔۔۔۔۔
راحیلہ بیگم بھی وہاں آچکی تھی۔۔آپ لوگ۔۔؟؟.۔وہاں کیوں کھڑے ہیں۔۔۔ بھائی صاحب اندر آئیں نا۔۔۔وہ آگے بڑھیں

فارہ اگر مزید وہاں رُکتی۔۔ تو۔۔ ضبط کھو دیتی۔۔۔ اپنے بھرم کو قائم رکھنےکیلئے وہ بھی اپنے کمرے کیطرف چل دی۔
رمشا کی نظروں نے دور تک اُس کا پیچھا کیا۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عائش۔۔۔۔۔تیرا پرابلم۔۔۔۔۔کیا ہے۔۔؟۔۔تُو چاہتا کیا ہے آخر۔۔۔۔؟۔۔۔۔اسجد فُل غصے میں تھا
کیا ۔۔کِیا ہے میں نے۔۔۔؟معصومیت سے سوال ہوا
زیادہ بھولا بابو نہ بن ۔۔اچھا۔۔۔صاف صاف بتا کیا تکلیف ہوئی اب کی بار۔۔۔وہ چڑا
تکلیف مجھے نہیں۔۔۔اُس ڈفر کو تھی۔۔۔
باقی سب ڈفر، اسٹوپڈ، نان سینس اور پتہ نہیں کیا۔۔کیا۔۔۔ایک تُو ہی آسمان سے دودھ کا دُھلا اُترا ہے۔۔
ایگزیٹلی۔۔۔۔عائش چِڑاتی ہنسی ہنسا
دانت بند کر۔۔۔۔کمینے۔۔۔۔ورنہ ترسے گا انکو دیکھنے کو۔۔۔توڑ دوں گا بتیسی ساری۔۔۔وہ چڑا

کیا بات ہے بڑا غصہ چڑھا ہے کہیں۔۔۔۔۔ اُاااااس ڈفر (عائش کا باس) کی بیٹی کیساتھ۔۔۔۔ کوئی چکر وکرتو نہیں۔۔۔؟۔۔۔ عائش نے آنکھ ماری۔
تُو ٹھہر ۔۔سالے۔۔۔۔اسجد قاتلانہ انداز۔۔۔۔ میں اسکی طرف بڑھا۔۔۔
عائش اُسے اپنی طرف لڑاکا عورتوں کے انداز میں آتا دیکھ کر۔۔۔ کُھل کر قہقہے لگانے لگا۔۔

اسجد نے بڑھے ہوئے ہاتھ بیچ میں ہی روک لیے۔۔۔۔ اور۔۔۔عائش کو دیکھنے لگا۔۔۔جو آج۔۔۔ بلکل ویسے ہی بے فکر قہقہے بکھیر رہا تھا۔۔۔جیسے وہ امریکہ میں بکھیرتا تھا۔۔۔دل سے۔۔۔۔

وہ خوش ہوا۔۔۔۔ اُسے اسطرح ہنستے دیکھ کر۔۔۔کیونکہ عائش تو ہسنا بھول ہی چکا تھا۔
عائش کو ہنستے۔۔۔۔ ہنستےاندازہ ہوا۔۔کہ۔۔اسجد رُک چکا ہے ۔۔۔۔۔کیا ہوا۔۔۔ڈئیر فرینڈ ۔۔۔۔رُک کیوں گئیے۔۔؟؟ وہ حیران ہوا
کچھ نہیں ۔۔اسجد نے سر جھٹکا۔۔وہ اُسے بتا کر پھر سے خاموش نہیں کرنا چاہتا تھا۔۔
غصہ تو بہت ہے تجھ پر۔۔۔۔پر۔۔۔۔جا۔۔۔معاف کیا۔۔۔۔۔جانی۔۔۔وہ احسان کر کے صوفے پر بیٹھا۔ 

شکریہ۔۔۔نوازش۔ عائش نے سر خم کیا
ہاں تو اب بتا اتنا غصہ۔۔۔۔؟؟اور یہ غصہ تجھ جیسے۔۔۔جوکر۔۔۔پر بلکل سوٹ نہیں کرتا۔۔عائش اُسے چھیڑتے ہوئے اُس کے ساتھ۔۔۔جُڑ۔۔۔کر بیٹھا۔۔
دِیس ٹینس۔۔۔پلیززززززز۔۔۔اسجد نے فاصلہ کیا۔۔
عائش حیران ہوا
ابے کھوتے۔۔میری جنس مشکوک نہ کر ۔۔۔یار۔۔۔
پھر۔۔۔۔پھر کیا ۔۔۔وہ دونوں ہی کھوتوں کی طرح ہسنے لگے۔۔۔۔۔ بلندوبالا۔۔۔کوئی اور وہاں آتا تو یقینًنا اُنہیں پاگل قرار دیتا۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سجاد نہیں آیا ابھی آفس سے۔۔؟؟سکندر صاحب نے راحیلہ بیگم سے پوچھا
آگئے ہیں ۔۔۔میں بُلاتی ہوں انہیں ۔۔آپ لوگ چائے تو لیں۔۔۔۔رمشا بیٹا چائے سَرو کرو۔۔
جی چچی۔۔۔۔رمشا کی جان میں جان آئی۔۔اُن کا نارمل رویہ دیکھ کر۔۔
کچھ دیر میں سجاد بھی وہاں آ چکے تھے
حال احوال کے بعد خاموشی تھی وہاں جسے سکندر صاحب نے توڑا
سجاد۔۔۔۔میں تم سے بہت شرمندہ ہوں اور معافی مانگنے آیا ہوں۔۔وہ آہستہ سا بولے
بھائی صاحب کیسی بات کر رہے ہیں آپ میرے بڑے ہیں مجھے شرمندہ مت کریں پلیز۔۔سجاد عاجزی سے بولے
شرمندہ تو میں ہوں۔۔یار۔۔میری اولاد نے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چھوڑیں اس بات کو بھائی صاحب ۔۔جو ہونا تھا وہ ہو چکا ۔۔ہم اس تلخ حقیقت کو ایکسیپٹ کر چکے ہیں۔۔۔اس لیے آپ بھی بھول جائیں سب۔۔۔۔
سکندر صاحب کے دل سے تھوڑا بوجھ سِرکا
ہم رمشا کو بھی چھوڑنے آئے ہیں۔۔مسز سکندر بولیں۔
یہ رمشا کا ہی گھر ہے بھابھی۔۔آپ فکر مت کریں ہم ہر گز ایک بیٹی کی قسمت کی سزا دوسری کو نہیں دیں گے۔۔سجاد دل بڑا کر کے بولے۔۔
سکندر کو چھوٹے بھائی کی سوچ پر فخر سا ہوا۔۔وہ اُٹھے اور مشکور انداز میں سجاد صاحب کے گلے لگ کر دل کا بوجھ ہلکا کرنے لگے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہنس ہنس کر تھک چکے تو خاموش ہوئے۔۔
عائش۔۔۔۔
ہونں۔۔۔۔۔عائش اتنا زیادہ ہنس کر …پھر سے سمٹ چکا تھا
تُو نے جاب کیوں چھوڑی۔۔۔؟؟؟سوال ہوا
پتہ نہیں۔۔۔۔میرا دل بھر چکا تھا وہاں سے ۔۔وہ بےزار سا بولا
تُو جانتا ہے یہ تیری کتنویں جاب تھی۔۔۔ جو تُو چھوڑ چکا ہے
تُجھے پتہ ہو گا۔۔۔۔آرام دہ جواب دیا
میں تو جانتا ہوں۔۔۔اسلیئے تیرا پرابلم پوچھنے آیا ہوں ۔۔۔آخر کیوں کر رہا ہے تُو ایسے۔۔۔؟؟
میرا دل نہیں لگتا یہاں۔۔۔۔معصوم ساجواب آیا
عائش۔۔۔۔یہ تیری ساتویں جاب ہے۔۔۔ان سات، آٹھ ماہ میں۔۔۔۔اسجد بہت پرسکون انداز میں بات کر رہا تھا
جانتا ہوں۔۔یار۔۔۔
جانتا ہے تو پھر ۔۔۔کیوں کر رہا ہے ایسے۔۔؟
بتا تو چکا ہوں میرا دل نہیں لگ رہا کسی چیز میں۔۔۔۔وہ بے بس ہوا
اور تُو جس چیز میں دل لگا رہا ہے۔۔۔وہ اب وقت کا زیاں ہے۔۔۔اور کچھ نہیں۔۔۔۔ عائش۔۔۔سنبھل جا۔۔۔۔ ابھی وقت ہے۔۔۔۔۔
میں بے بس ہوں۔۔۔مدھم سرگوشی ہوئی
خود کو سنبھال یار ۔۔مرد بن مرد۔۔۔اسجد نے اُسکے کندھے پر تھپکی دی
مرد بن کر ہی تو۔۔۔۔۔۔۔اُسکا گلا رُندھا

عائش پلیز۔۔۔۔یار اب اس پچھتاوے کا کوئی فائدہ نہیں۔۔۔۔۔ نہ تجھے اور۔۔۔نہ ہی کسی اور کو۔۔۔اسلیئے لوٹ آ واپس یار۔۔یہ راہ بہت مشکل ہے اور۔۔۔ اس راہ کی اب کوئی منزل بھی نہیں ۔۔
منزل ۔۔۔۔؟۔منزل تو میں خود گنوا بیٹھا ہوں۔۔اسجد۔۔۔۔اسجد میں واپس جانا چاہتا ہوں ۔۔میں سکون چاہتا ہوں ۔۔۔۔مم۔۔۔میں۔۔۔میں۔۔۔فا۔۔۔فارہ۔۔۔۔۔۔۔
چھوڑ دے بس کر ۔۔۔یار ۔۔۔اب فارہ تیری نہیں ہے اور نہ ہی ہو سکتی ہے ۔۔۔اسجد نے حقیقت بیان کی ۔۔۔اُسے سوچنا چھوڑ دے ۔۔۔جو ہو چکا اُسے بھول جا۔۔۔۔یہی بہتر ہے تیرے لیے۔۔۔

کیسے بھول جاؤں۔۔۔کیسے۔۔۔ عائش نے بال جکڑے۔۔۔۔میں اسقدر گِر گیا تھا ۔۔سوچتا ہوں تو خود کو شوٹ کرنے کو دل کرتا ہے۔۔۔میں اُسے بھولنا چاہتا ہوں پر اُسکی معصومیت پر جو داغ لگا آیا ہوں وہ چین نہیں لینے دیتا۔۔۔میں جلد بازی میں بہت غلط کر آیا ہوں۔۔۔یار۔۔۔وہ رو دینے کو تھا۔
اسی لیے سیانے کہتے ہیں ہر فیصلہ جوش سے نہیں بلکہ ہوش سے لینا چاہیے تاکہ کوئی پچھتاوا نہ رہ جائے۔۔۔۔اسجد نے ناصحانہ انداز میں سمجھایا۔
عائش صرف اپنے کیے پر پچھتا رہا تھا۔۔۔۔۔یا پھر۔۔۔۔کوئی اور جزبہ بھی اُسے اپنی لپیٹ میں لے چکا تھا ۔۔۔؟؟۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رمشا کو واپس سجاد ہاؤس آئے دو ماہ ہونے والے تھے پر فائز نےاُسے مخاطب تو کیا اُس کی طرف دیکھا بھی نہیں تھا ۔۔۔رمشا کی برداشت سے باہر ہو چکا تھا یہ سب۔۔وہ فائز جیسے نرم دل اور محبتیں لُٹاتےانسان کا یہ بیگانہ روپ سہہ نہیں پا رہی تھی۔۔۔اسی لیے آج ہمت کر کے اُسے مخاطب کر بیٹھی تھی۔۔۔
فائز۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ لیپ ٹاپ پر بزی تھا
فائز۔۔۔۔۔۔۔
دوسری طرف ہنوز خاموشی تھی
رمشا نے آہستگی سے اپنا ہاتھ فائز کے کی بورڈ پے چلتے ہاتھ پر رکھا۔۔۔۔
فائز نے ہاتھ جھٹک دیا۔۔۔واٹس یئور پرابلم۔۔۔پھاڑ کھانے والا انداز تھا
آپ۔۔۔آپ کیوں کر رہے ہیں۔۔۔ایسا میرے ساتھ۔۔؟؟ 
بچی مت بنو ۔۔۔سمجھی۔۔۔اور جاؤ یہاں سے کام کرنے دو مجھے۔۔۔۔
فائز پلیز۔۔مجھے کس بات کی سزا دے رہے ہیں ۔۔مم۔۔میری کیا غلطی ہے۔۔۔وہ منمنائی

غلطی تو ہماری ہے اور ہم اسکا بھگتان بھی بھگت چکے ہیں ۔۔اسلیئے جاؤ جان چھوڑو میری۔۔۔۔دفع کرنے کی کسر رہ گئی تھی بس۔۔
فا۔۔فائز ۔۔۔رمشا نے اُس کا گھٹنا پکڑا۔۔جسے 
چھڑ وا کر وہ دور جا کھڑا ہوا۔۔
ہمارا ظرف اتنا کافی ہے کہ اُس شخص کی بہن کو یہاں برداشت کر رہے ہیں اس لیے مزید کی توقع چھوڑ دو۔۔۔رمشا بیگم۔۔۔وہ استہزایا ہوا
اور ویسے بھی میں نے تمہیں اپنی بیٹی ہی کی خاطر یہاں آنے دیا۔۔۔ورنہ۔۔۔۔۔
اپنی بیٹی۔۔۔۔۔۔۔آیت ہماری بیٹی ہے۔۔۔۔۔ فائز۔۔۔تیری ۔۔میری نہیں۔۔
لیکچر بند کرو اور جاؤ ۔۔مجھے کام کمپلیٹ کرنے دو۔۔وہ برہم ہوا
رمشا نے برستی آنکھوں سے اُس کا یہ روپ دیکھا۔۔۔۔اور۔۔۔۔روتی ہوئی کمرے سے نکل گئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وقت کا کام ہوتا ہے گزرنا اور وہ گزرتا جاتا ہے بِنا کسی کی پرواہ کیے۔۔۔پَر لگائے۔۔۔۔اچھا۔۔۔۔یا۔۔۔۔۔بُرا
فارہ کا بھی بُرا وقت گزر ہی گیا تھا سب کے خیال میں ۔۔۔۔۔کیا واقعی بُرا وقت گزر گیا تھا؟؟؟ یا ابھی بھی آزمائش باقی تھی
 جاری ہے

 
Zubair Khan Afridi Diary【••Novel ღ ناول••】. Zubair Khan Afridi
knowledgemoney