اعتبارِ وفا کون کرے
5 قسط

وقت کا کام ہوتا ہے گزرنا اور وہ تو گزر ہی جاتا ہے۔۔۔۔۔ جیسے تیسے کر کے

فارہ کا بھی گزر ہی گیا تھا۔۔۔ اس گزرتے وقت میں اُس نے بہت سنبھال لیا تھا خود کو۔۔۔ اب وہ کسی کے سامنے نہ ہی افسردہ ہوتی اور نہ ہی روتی۔۔۔ البتہ اکیلے میں وہ یہ دونوں شغل ضرور فرماتی تھی۔۔۔ وہ عائش کو بھول نہیں پا رہی تھی اور اُس بےوفا کو بھولنا آسان بھی نہ تھا فارہ کے لیے۔۔۔۔ 
وہ 18 سال کی تھی جب اُس کے دل میں عائش کی محبت نے قدم رکھے تھے۔۔۔جو وقت کے ساتھ مضبوط سے مضبوط تر ہوتے گئے۔۔۔اور رہی سہی کسر دونوں فیملیز کی رضامندی نے کر دی۔۔۔ وہ خود کو ہواؤں میں اُڑتا ہوا محسوس کر تی۔۔۔ جسے چاہ تھا وہ آسانی سے مل بھی رہا تھا۔۔۔لیکن اس کی قسمت اُسکے ساتھ بہت بھیانک مزاق کر گئی۔۔۔ پر جو بھی تھا۔۔۔ اُسے سنبھلنا تھا اور وہ کافی حد تک سنبھل چکی تھی۔

دوسری طرف۔۔

عائش سنبھلنے کےچکر میں مزید بکھرتا جا رہا تھا۔۔۔ تھک ہار کر اُس نے رامش سے رابطہ کر ہی لیا تھا۔۔۔۔ رامش نے اُس سے بات نہیں کی تھی۔۔ پر عائش نے ہمت نہیں ہاری اور مسلسل اُس سے رابطہ کرتا رہا ۔۔۔۔
رامش کیا کرتا ۔۔۔بڑا بھائی تھا اُس کا۔۔۔۔آخر پسیج ہی گیا ۔۔۔۔ پر عائش کو اُس کے کیے پر شدید لعن طعن کی تھی۔۔۔جسے عائش نے بہت صبر سے سنا تھا۔۔۔ کیونکہ غلطی جو تھی۔

رامش نے بھی دل کی بھڑاس نکال کر عائش کو معاف کر دیا تھا۔۔۔ وہ جان گیا تھا اُس کا چھوٹا بھائی پچھتاوں میں گِھر چکا ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

فارہ کیا کر رہی ہو۔۔؟ لاؤ میں بنا دیتی ہوں
رمشا نے فارہ کو آیت کے لیے نُوڈلز بناتے دیکھ کر کہا.. 
نہیں۔۔۔بھابھئی میں بنا دیتی ہوں۔۔۔آپ جائیں روم میں بھائی آ چکے ہیں آفس سے۔۔
آں۔۔ہاں۔۔۔۔اُن کا آنا نہ آنا برابر ہے اب تو۔۔۔رمشا دکھی ہوئی
بھائی مانے نہیں اب تک۔۔۔؟؟۔۔فارہ حیران ہوئی
نہیں۔۔۔۔۔۔
اُوف۔۔۔۔بھابھی اتنے ماہ گزر گئے اور آپ۔۔۔آپ بتاتی تو سہی۔۔
کیا بتاتی میں۔۔۔مں یہی ڈیزرو کرتی ہوں فارہ اسلیئے کوئی شکایت نہیں ہے مجھے اُن سے۔۔
پر ۔۔بھابھی۔۔۔۔
چھوڑو فارہ۔۔۔میں عادی ہو گئی ہوں اس رویے کی۔۔
تم بتاؤ ۔۔۔ماریہ آئی تھی کل۔۔۔۔؟
ہاں۔۔۔۔۔وہ ملنے آئی گھر اپنے تو میرا پتہ چلا اُسے اسی لیے آئی تھی۔۔فارہ نے مدھم آواز میں بتایا 
ہونں۔۔۔۔۔۔فارہ تم نے آگے کا کیا سوچا ہے۔۔رمشا شرمندہ سا بولی
کیا سو چنا ہے بھابھی۔۔۔کوئی سکول جاب کر لیتی ہوں۔۔۔ مزید پڑھنے کو تو اب دل نہیں کرتا ہے۔۔۔فارہ نے تفصیلًا جواب دیا
ہاں۔۔۔اچھا۔۔۔ہے۔۔بزی رہو گی۔۔رمشا مسکرائی
فارہ نوڈلز بنا چکی تھی ۔۔باؤل رمشا کو تھماکر خاموشی سے کیچن سے نکل گئی۔۔
رمشا افسردہ سی کھڑی رہ گئی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

راحیلہ بیگم کو سونے کا ارادہ باندھتے دیکھ کر سجاد صاحب نے بات شروع کی۔۔
راحیلہ۔۔۔۔
جی۔۔۔۔؟؟۔۔
مجھے ضروری بات کرنی ہے تم سے۔۔
جی کریں میں سن رہی ہوں۔۔وہ سیدھی ہوئیں
میں فارہ کے بارے میں سوچ رہا ہوں کب تک یہ سب چلے گا۔۔۔
میں سمجھی نہیں آپ کا مطلب۔۔؟؟
میں اُسکی شادی کرنا چاہ رہا ہوں۔۔انہوں نے اتنی بڑی بات اتنی آسانی سے کہی

کیا۔۔؟؟کیا کہہ رہے ہیں۔۔۔آپ
ٹھیک کہہ رہا ہوں۔۔آج یا کل۔۔یہی ہونا ہے تو پھر آج ہی ہو جائے بہتر ہے۔۔۔میں مزید فارہ کو اس دکھ میں گِھرے نہیں دیکھنا چاہتا ۔۔۔اسی لیے فیصلہ کر چکا ہوں۔
سجاد ۔۔پلیز۔۔میری بچی کو ٹھیک سے سنبھلنے تو دیں۔۔۔۔وہ رونے لگیں
وہ سنبھل جائے۔۔اسی لیے یہ فیصلہ لیا ہے میں نے۔۔نئے رشتے میں جُڑے گی تو پچھلا سب بھول جائے گی۔۔مجھے پورا یقین ہے۔۔وہ بہت پُر امید تھے۔
آپ تو ایسے کہہ رہیں جیسے سب ریڈی ہو اور لڑکا بھی ڈھونڈ لیا ہو۔۔وہ اُن کے کنفیڈینس پر حیران ہوئیں
جی۔۔بلکل۔۔۔آپ ٹھیک سمجھیں ہیں۔۔
لڑکا مل چُکا ہے۔۔۔۔انہوں نے دھماکا کیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عائش کو آٹھویں جاب شروع کیے ایک ہفتے سے زیادہ ہو گیا تھا
لیکن۔۔یہاں اگر باس سے بن گئی تھی تو باس کی بیٹی نے تنگ کر دیا تھا۔۔۔۔
وہ آفس میں بزی تھا۔۔۔جب دھاڑ سے دروازہ کھلا۔۔
ہیے۔۔ہیلو۔۔عائش۔۔۔ہاؤ آر یو۔۔؟بے تکلفانہ انداز میں کندھے پر ہاتھ رکھا گیا۔۔جیسے بچپن کی جان پہچان ہو۔۔
عائش کو چار سو چالیس واٹ کا جھٹکا پڑا اُسکی ادا پر۔۔ 
ہیے۔۔۔ہینڈسم۔۔وئیر۔۔؟؟آئمہ نے آنکھوں کے سامنے ہاتھ ہلایا۔۔
عائش کو ہوش آیا۔۔۔وہ جلدی سے پیچھے ہٹا۔۔ کہ کہیں وہ اپنی موجودگی کا احساس دلانے کیلیے گلے ہی نہ لگ جائے۔۔
تم کتنے شرمیلے ہو۔۔۔۔ عائش۔۔۔وہ بال جھٹکتی مسکرائی۔۔
آپ یہاں کس لیے آئی ہیں۔۔؟عائش ناگواری سے بولا
اووہوو۔۔۔۔ ایک تو تم خفا بہت ہوتے ہو شاید کسی نے بتا رکھا ہے تمہیں کہ غصے میں اور بھی ہینڈسم لگتے ہو۔۔۔وہ بےباکی سے آنکھ مارتی پھر سے قریب آئی۔۔۔

اِنف۔۔۔۔جائیں یہاں سے مجھے کام کرنے دیں۔۔عائش روب سے بولا جیسے اپنا آفس ہو۔۔
وہ خفا مانے بغیر مسکرائی۔۔۔ابھی تو جا رہی ہوں۔۔لیکن پھر آؤں گی ۔۔۔۔۔ہییینڈسم۔۔۔۔جاتے جاتے بھی آنکھ مار گئی۔۔
اوووف۔۔کیا مصیبت ہے یار ۔۔۔بیٹھے بٹھائے گلے پڑ گئی۔۔۔۔ کیا کروں اب اس بلا کا۔۔۔وہ چڑا
اسجد۔۔۔ہاں اسجد سے مشورہ کرتا ہوں
یہ سوچ کر وہ ریلیکس ہوا۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کیا ۔۔کہا آپ نے۔۔۔۔۔لڑکا ڈھونڈ چکے ہیں۔۔۔کب۔۔۔کہاں۔۔۔۔کون۔۔۔راحیلہ ایک ہی سانس میں بولیں
عباسی صاحب کا بیٹا ہے۔۔جواب آیا
عباسی صاحب ۔۔۔وہ۔۔۔۔ پرانے مینجر جو 4سال پہلے وفات پا چکے ہیں۔۔۔اُنکی یاداشت اچھی تھی اسی لیے اتنی جلدی پہچان گئیں
ہاں۔۔۔وہی عباسی صاحب۔۔۔وہ پرسکون تھے
لیکن اُن کا بیٹا کہاں ملا آپ کو۔۔۔راحیلہ کی حیرانگی ختم نہیں ہو رہی تھی۔
کہاں ملا۔۔مطلب۔۔۔۔وہ پچھلے تین سال سے ہمارے ہی آفس میں جاب کر رہا ہے۔۔۔
پڑھالکھا، مہذب، اور سلجھا ہوا لڑکا ہے۔۔
فائز کو بھی کوئی اعتراض نہیں اس رشتے پر میں اُس سے بات کر چکا ہوں۔۔

لیکن ۔۔۔وہ مڈل کلاس ۔۔وہ ہکلائیں
آپ کے منہ سے یہ بات بلکل مناسب نہیں لگتی۔۔۔بہرحال میں داؤد سے بات کر چکا ہوں۔۔اُسکی فیملی اس سنڈے کوآ رہی ہے ۔۔۔اس لیے فارہ سے بات کر کے اُسے انفارم کریں۔۔انکار کی کوئی گنجائش نہیں ہے۔۔آپ سمجھائیں گی تو ضرور مان جائے گی ۔۔میری بیٹی بہت سمجھدار ہے۔۔انہوں نے بات ختم کی اور اسٹڈی میں چلے گئے۔۔
سمجھدار ہونےکیساتھ فرمابردار بھی ہے آپکی بیٹی ۔۔اسی لیے فائدہ اُٹھا رہے ہیں۔۔وہ خود سے بولیں
ماں تھیں۔۔بیٹی کے دل کا راز جانتیں تھیں ۔۔۔پر اب آگے تو بڑھنا ہی تھا۔۔۔۔۔ یہی سوچ کر خاموش ہو گئیں ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عائش کے صبر کا پیمانہ لبریز ہو چکا تھا۔اُس نے اسجد کو کیفے میں بلایا تھا پر پچھلے آدھے گھنٹے سے وہ محوِانتظار تھا۔
اسجد کا کچھ اتاپتہ نہ تھا مزید15 منٹ انتظار کے بعد عائش جھنجھلاتا ہوا اٹھ کھڑاہوا۔

دو قدم ہی چلا تھا کہ اسجد آتا ہوا دکھائی دیا
اسجد اُسے دیکھ کر مسکرایا۔۔ مگر عائش سنجیدگی سے چلتا ہوا پاس سے ہو کر آگے گزر گیا۔۔
یہ کیا۔۔۔۔اسجد حیران ہوا مگر جب تک سمجھ آئی۔۔۔ عائش جا چکا تھا
اوہ شِٹ۔۔۔ڈئیرنگ کمینے۔۔۔بڑا خبیث ہے تُو جانی۔۔۔۔۔۔وہ مسکرایا
کوئی نہ بیٹا۔۔۔تجھے کام تھا۔۔۔تُو نے ہی بلایا تھا۔۔۔۔۔اور۔۔تُو ہی بُلائے گا پھر سے۔۔
اسجد نے تصور میں عائش کو آنکھ ماری۔۔۔اور سیٹی پر دُھن بجاتا واپس ہو لیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

راحیلہ بیگم آج بہت ہمت کر کے فارہ کے روم میں آئیں تھیں۔۔پہلے ہر بات وہ رمشا سے کہلوا دیتی تھیں مگر اب بات اور تھی اس لیے خود ہی آئیں۔
فارہ تلاوت کے بعد دعا میں بزی تھی۔۔ وہ بیٹھ کر اسکے فارغ ہونے کا انتظار کرنے لگیں
فارہ فارغ ہوئی تو ماں کو کمرے میں موجود پایا۔۔۔۔۔
امی ۔۔۔۔آپ
ہاں میں۔۔۔۔وہ مسکرائیں
یہاں آ کر بیٹھو میرے پاس۔۔۔انہوں نے اشارہ کیا۔۔
فارہ نے کشن اٹھا کر زمین پر ماں کے پاس رکھا اور اس پر بیٹھ کر سر انکے گھٹنے پہ رکھ دیا۔
وہ پیار سے فارہ کے بالوں میں ہاتھ پھیرنے لگیں۔
مجھے تم سے ضروری بات کرنی ہے۔۔۔فارہ
جی۔۔بولیں امی
بیٹا جو ہو چکا اُسے بھول جاؤ۔۔۔ہم سب بھی قسمت کا لکھا جان کر قبول کر چکے ہیں۔۔۔
پر بیٹا زندگی کسی ایک موڑ پر یا ایک شخص پر ختم نہیں ہوتی ہے ہمیں آگے بڑھنا ہوتا ہے وقت کے ساتھ چلنا پڑتا ہے۔۔۔انہوں نے تمہید باندھی۔۔
تم سمجھ رہی ہو نا۔۔۔۔ فارہ
جی امی۔۔۔سمجھ رہی ہوں
بیٹا۔۔ہم بھی یہی چاہتے ہیں ۔۔تم سب کچھ بھول کر آگے بڑھو، زندگی انجوائے کرو۔۔۔۔۔ میری جان۔۔۔
انہوں نے فارہ کاچہرہ ہاتھوں کے پیالے میں لے کر ماتھے پر بوسہ دیا 
امی۔۔۔کیا بات کہنا چاہتیں ہیں آپ۔۔۔؟فارہ کھٹکی
تم انکار نہیں کرو گی۔۔۔ہاں۔۔۔انہوں نے یقین دہانی چاہی
فارہ حیران ہوئی بات سے پہلے ہی شرط۔۔۔
آپ کریں بات۔۔۔وہ بولی

فارہ۔۔۔بیٹا۔۔۔ہم۔۔۔ہم تمہاری شادی کرنا چاہتے ہیں۔۔۔انہوں نے بمشکل اصل بات کی
کیا۔۔۔۔۔؟؟؟فارہ کے وہم وگمان میں بھی نہیں تھا کہ وہ ایسی بات کریں گیں۔
ابھی تو وہ اُس دشمنِ جاں کو ٹھیک سےبھول بھی نہیں پائی تھی۔۔۔ کہ۔۔۔ ایک نیا رشتہ۔۔۔وہ سوچوں میں گم تھی۔
فارہ۔۔۔راحیلہ نے اُس کا کندھا ہلایا
جج۔۔۔جی۔۔۔۔۔وہ چونکی
کیا ہوا بیٹا۔۔۔بُرا لگا تمہیں۔۔۔؟؟؟
نن۔۔۔نہیں۔۔۔۔پر اتنی جلدی
جلدی کہاں بیٹا۔۔چھ ماہ سے زیادہ ہو گیا ہے۔۔
لیکن امی۔۔۔۔وہ منمنائی
فارہ بیٹا تمہارے بابا ہارٹ پیشنٹ ہیں اور یہ اُنہی کا فیصلہ ہے۔۔وہ ایموشنل ہوئیں
ٹھیک ہے امی۔۔۔جیسے آپ سب کی مرضی۔۔فارہ
رضا مند ہوئی۔۔اب اسکے علاوہ کوئی اور چارہ جو نہ تھا۔
راحیلہ خوشی سے اُسکا ماتھا چوم کر چلیں گئیں۔۔
فارہ یہ سوچ رہی تھی کہ وہ جس شخص کے لیے ہاں کرچکی ہے اُس کو کیا دے گی۔۔؟؟۔۔ اُسکے پاس تو کچھ نہ بچا تھا۔۔۔۔۔ سب کچھ تو وہ دشمنِ جاں ساتھ لے گیا تھا
دل۔۔۔۔جذبات۔۔۔۔۔۔احساسات۔۔۔۔۔اور۔۔۔۔اور۔۔۔جسم بھی۔۔۔۔
""پھر کبھی نہیں ہو سکتی محبت سنا تم نے
وہ شخص بھی ایک تھا اور میرا دل بھی ایک""
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 
عائش ویٹ کر رہا تھا پچھلے تین دن سے اسجد کا۔۔۔ مگر اُس کیطرف سے مکمل خاموشی تھی
عائش اُسے کافی گالیوں سے نواز چکا تھا۔۔۔۔۔ اور اب بھی یہی کر کے فائل پر جھکا ہی تھا کہ وہ بلا پھر سے ناز ل ہوئی۔

ہیلو عائش ہاؤ آر یو ۔۔۔ایک ادا سے پوچھا گیا
عائش اُسکی بے تکفی سے چڑا ۔۔۔یوں جیسے بجپن میں گڈا، گڈی کا کھیل ایک ساتھ کھیلتے رہے ہوں
فائن۔۔۔۔سرسری سا جواب دے کر فائل پر جھک گیا
بزی ہو کیا۔۔۔
نظر نہیں آ رہا کیا۔۔۔۔رُوکھا سا جواب آیا
تم مجھے اگنور کیوں کرتے ہو عائش۔۔۔؟؟؟؟۔افسردگی سے پوچھا گیا
میں اگنور نہیں کر رہا میڈم ۔۔۔آئی ایم بزی ناؤ۔۔سو پلیز۔۔۔
عائش۔۔۔تم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
محترمہ آئمہ عباس صاحبہ میں یہاں آپ کے والدِ محترم کا ایمپلائی ہوں ۔۔۔۔اور یہ فائل ۔۔عائش نے فائل لہرائی
مجھے آج کی ہی تاریخ میں فائنل کروانی ہے عباس صاحب سے۔۔۔اسلیے اگر آپ کی اجازت ہو تو میں یہ فائل کمپلیٹ کرنے کا شرف حاصل کر سکتا ہوں۔۔۔۔وہ جھنجھلایا
آئمہ اُس کے طرزِ تخاطب پر ہنسی۔۔۔۔۔۔ تو پھر ہنستی ہی چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔
عائش نے ناگواری سے گھورا ۔۔نان سینس۔۔۔۔اسٹوپڈ۔۔گرل۔۔دل میں بولا
آئمہ کو اُسکی گھوری نے بریک لگائے۔۔ہا۔۔ہاؤ فنی۔۔عائش۔۔۔۔۔
عائش کھڑا ہوا۔۔۔۔۔
او-کے۔۔او-کے۔۔آئی ہیو ٹو گو۔۔بٹ اٹس امیزنگ سٹائل۔۔آئی رئیلی لائک۔۔اور مسکراتی ہوئی چلی گئی۔۔۔
واٹ دا ہیل از دس۔۔۔یار۔۔۔اسجد کمینے چھوڑوں گا نہیں تجھے۔۔۔عائش نے اسجد کو مخاطب کیا اور ٹیکسٹ بھیجا۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔
اسجد کے سیل نے میسج ٹون بجائی۔۔اُس نے میسج کھولا۔۔۔چہرے پر مسکراہٹ نمودار ہوئی
""اگر تُو آج ۔۔۔بروز جمعرات۔۔شام سات بجے۔۔۔۔ میرے اپارٹمنٹ میں موجود نہ ہوا۔۔۔۔ تو تجھے میرے ۔۔۔۔۔۔یعنی عائش سکندر کے اِعتاب سے یہ دبئی والے بھی بچا نہیں پائیں گے ۔۔۔مائنڈ اِٹ کمینے۔۔
او-کے ۔۔باس۔۔اسجد مسکرایا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سجاد صاحب نے داؤد کی فیملی کو سنڈے کو انوائیٹ کیا تھا لہذا آج داؤد کی فیملی جس میں اُسکی دو بہنیں اور ماں شامل تھیں 
سجاد ہاؤس آئیں اور فارہ کو پسند کر گئیں۔۔
سب کی رضامندی سے ایک ہفتے بعد نکاح اور چھ ماہ بعد رخصتی طے پائی۔۔
لیٹ رخصتی کی وجہ داؤد کی چھوٹی بہن کی ساتھ شادی تھی ۔۔اُسکا فیانسی آوٹ آف کنٹری تھا اس لیے دونوں بہن، بھائی کی شادی ایک ساتھ رکھی گئی۔۔
سجاد اور اُنکی فیملی کو کوئی اعتراض نہ تھا۔۔اسلیے سب نکاح کی تیاریوں میں مصروف ہوگئے۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اسجد پورے سات بجے عائش کے اپارٹمنٹ میں موجود تھا۔۔
عائش کو اسموکنگ کرتے دیکھ کر اُسکی کلاس لے رہا تھا۔۔
تُو نے کب سے اسموکنگ شروع کر دی۔۔۔سوال پوچھا گیا۔۔
جب سے حالات نے کروٹ بدلی۔۔۔
اسجد نے سیگرٹ چھین کر زمین پر پھینکا اور جوتے سے کچل دیا۔۔
اب بتا کیوں یاد کیا مجھے۔۔۔وہ صوفے پر ریلیکس ہوا
ایک ضروری بات ڈسکس کرنا تھی۔۔۔عائش نے بات اسٹارٹ کی۔۔
ہاں بول۔۔۔سن رہا ہوں ۔۔۔
اسجد۔۔۔ وہ عباس صاحب کی بیٹی ہے نا آئمہ عباس ۔۔۔یار۔۔اُس نے میری زندگی عذاب بنا دی ہے۔۔وہ جھنجھلایا
وہ کیسے۔۔۔؟؟؟؟
یار۔۔۔صبح۔۔شام آفس میں ٹپک پڑتی ہے۔۔

تجھے کیا پرابلم ہے۔۔۔اُس کے باپ کا آفس ہے ۔۔جب چاہے آئے، جائے۔۔۔۔۔۔ تجھے ہر گِز وہاں چپڑاسی اپائنٹ نہیں کیا گیا ۔۔جو تُو آنے جانے کا حساب رکھے۔۔۔۔۔اسجد غیر سنجیدہ رہا
بی سیریس اسجد۔۔۔۔وہ غرایا
تو ہو جا سیریس میں نے کونسا روکا ہے۔۔ بے فکری سے جواب آیا
اسجد۔۔۔۔عائش نے گھورا
کیا۔۔یار۔۔۔لڑکی ہی ہے ۔۔۔۔کوئی بلا تو نہیں
بلا سے کم بھی نہیں۔۔۔۔عائش نے منہ بنایا۔۔۔

اچھا پھر اب مجھے بتا میں کیا کروں۔۔۔؟؟۔اسجد نے معصومیت کی انتہا کی۔۔
میں نے تجھے کہا۔۔۔بی سیریس اسجد۔۔وہ چلایا
آہستہ بول۔۔۔جانی۔۔۔ذاتی کان ہیں میرے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اُٹھ ۔۔۔۔جا۔۔۔۔ دفع ہو جا یہاں سے۔۔۔۔عائش غصے میں چیخا
او-کے ۔۔۔مائی لارڈ۔۔۔اسجد دل پر ہاتھ رکھ کر 
جھکا۔۔۔اور باہر کی جانب سیٹی بجاتا چل پڑا۔

تُو۔۔۔۔۔مارا جائے گا میرے ہاتھوں۔۔۔کمینے۔۔عائش اسکطرف بڑھا
اسٹاپ جانی۔۔۔۔۔اسجد نےمسکرا کر ہاتھ بلند کیے
خود ہی کہا تھا جاؤ ۔۔۔۔آنکھیں لڑکیوں کے انداز میں پٹپٹائیں
عائش کو اُسکا آنکھوں کا پٹپٹانا دیکھ کر ہنسی آ گئی۔۔۔بیٹھ الہڑ دوشیزہ۔۔۔یا میں گود میں اٹھا کر بیٹھاؤں۔۔۔اسجد کو چھیڑا
گود میں آئمہ عباس کو لینا ۔۔خوش ہو جائے گی بیچاری۔۔۔اسجدنے آئمہ پر ترس کھایا۔۔

اُلٹی سیدھی بکواس نہ کر اور مجھے اس سب کا حل بتا یار۔۔۔۔کیسے پیچھا چھڑواں۔۔۔ 
اُس سے۔۔۔۔۔
پیچھا کیوں چھڑوانا ہے۔۔۔تجھے بولڈ اور کنفیڈینٹ لڑکیا ں پسند ہیں نا تو پھر بھگت اب۔۔۔۔اسجد نے اُسے کچھ یاد دلایا
میرے زخموں پر نمک مت چھڑک ۔۔۔۔۔وہ افسردہ ہوا
نمک نہیں میرا تو مرچیں چھڑکنے کو دل کرتا ہے۔۔۔۔سچ میں۔۔۔اسجد نے دل کی بات بتائی
میں غلط تھا۔۔میں تسلیم کر چکا ہوں۔۔وہ مدھم آواز میں بولا
تُو غلط نہیں تھا۔۔۔عائش۔۔۔تُو گنہگار ہے کسی معصوم کا۔۔۔۔
اسجد پلیز۔۔۔میں پہلے ہی ٹینس ہوں مجھے مزید اذیت مت دے۔۔وہ رونے والا ہوا
میں کیا حل بتاؤں۔۔۔اسجد نے بات پلٹی۔۔۔۔تُو زیادہ سمجھدار ہے۔۔۔۔ ویسے بھی تُو ۔۔۔تو فیصلے خود کرتا ہے اپنے۔۔۔۔پھر پوچھ کیوں رہا ہے ۔۔۔اسجد خفا ہوا
او-کے ۔۔فائن۔۔۔میرا مسلہ ہے میں خود سولو کر لوں گا۔۔تھینکس فار کمینگ۔۔۔یو مے گو ناؤ۔۔عائش نے تسلی سے دفع ہو جاؤ کہا
۔
۔
اب ہسس کیوں رہا ہے۔۔۔۔ نکل۔۔۔آؤٹ۔۔۔وہ اسجد کو ہنستے دیکھ کر چڑا
ریلیکس جانی۔۔۔۔
اچھا سن ۔۔۔میں نے دیکھ رکھی ہے آئمہ عباس اچھی خاصصصی ہے۔۔۔تھوڑی سی لفٹ کروا دے۔۔سب سیٹ۔۔سلوشن آیا
اسجد۔۔۔تنبیہ ہوئی
ہاہاہا۔۔او-کے جانی میں کرتا ہوں کچھ ۔۔۔
مطلب۔۔؟؟
مطلب۔۔۔بھابھی سے بات کرتا ہوں ۔۔۔وہ سمجھا دیں گی اُسے۔۔ناؤ بی ریلیکس اینڈ سمائل پلیزززز۔۔۔اسجد نے تصویر کھچوانے کے انداز میں کہا۔۔۔
اُس کی فرمائش پر عائش مُسکرا دیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مختصر انتظار کے بعد نکاح کا دن آن پہنچا
چند خاص مہمانوں کو مدعو کیا گیا تھا جن میں سکندر وِلا کے مکین بھی شامل تھے۔
داؤد اور اُس کے گھر والے آ چکے تھے۔
رسمِ نکاح کے مطابق فارہ کو ہلکا پُھلکا تیار کیا گیا۔۔۔۔۔
سجاد ،فائز اور سکندر صاحب نکاح خواں کیساتھ۔۔۔فارہ کے روم میں داخل ہوئے۔۔

فارہ سر جھکائے پتھر کی مورتی بنے ساکت سی بیٹھی تھی۔۔
مولوی صاحب نے نکاح شروع کیا۔۔۔
فارہ کے کانوں میں چھ ماہ پہلے کے الفاظ گونجنے لگے ۔۔جب اسی طرح نام پکارا گیا تھا۔۔۔پر وہ نام ۔۔۔عائش سکندر۔۔۔تھا۔۔۔اور۔۔۔آج۔۔۔ داؤد عباسی۔۔۔ پکارا جا رہا تھا۔۔۔وہ کچھ سمجھ نہیں پا رہی تھی ۔۔۔یہ سب کیا ہو رہا ہے۔۔
اُسے اپنے کندھے پر دباؤ محسوس ہوا۔۔۔فائز نے اُسے پین پکڑانا چاہا۔۔۔۔وہ ناسمجھنے کے انداز میں فائز کو دیکھنے لگی۔۔۔کہ کیا کروں اس پین کا۔۔۔
فائز اُسکی حالت سمجھ چکا تھا۔۔۔آہستہ سے اُس کے کان میں سر گوشی کی۔۔۔۔۔
فارہ۔۔۔۔بیٹا۔۔۔سائن کرو
فارہ۔۔۔پھر سے پُکارا گیا
فارہ نے کانپتے ہاتھوں سے پین پکڑا اور دھندلی آنکھوں سے نکاح نامے پر اپنا نام گھسیٹ دیا۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جاری ہے

 
Zubair Khan Afridi Diary【••Novel ღ ناول••】. Zubair Khan Afridi
knowledgemoney