اعتبارِ وفا کون کرے
6 قسط

فارہ نے کانپتے ہاتھوں سے نکاح نامے پر سائن کر دیے
سجاد نے بیٹی کو گلے لگایا سر تھپکا اور باہر نکل گئے
فارہ بہت ضبط سے کام لے رہی تھی جیسے ہی سب باہر گئے وہ اپنا ضبط کھو بیٹھی۔۔
عائش۔۔۔عائش خدا کرے آپ کبھی بھی سکون سے نہ رہ پائیں ۔۔۔کبھی بھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ اوندھے منہ بیڈ پر گِر کر زاروقطار رونے لگی۔
آج پہلی بار فارہ کے منہ سے عائش کے لیے بدعا نکلی تھی۔۔۔۔وہ بھی تڑپ کیساتھ۔۔۔

""جھوٹی مسکان لیے اپنے غم چھپاتے ہیں
سچی محبت کرنے کی بھی کیا خوب سزا ملی""
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عائش کافی سے زیادہ ریلیکس تھا کیونکہ کافی دن سے آئمہ آفس نہیں آ رہی تھی اسلیے اُس کا وقت اچھا گزر رہا تھا ۔۔۔۔۔وہ اپنا کام نپٹا کر اپارٹمنٹ آیا۔۔۔۔کھانے سے فارغ ہو کر وہ چینل سرچ کرنے لگا لیکن پھر دل کے خیال پر فون نکالا اور رامش کا نمبر ڈائل کیا
رامش کا سیل آف تھا ۔۔۔۔
عائش نے گھر کے نمبر پر کال کی
فون بھابھی نے اُٹھایا ۔۔۔
اسلام و علیکم! بھابھی۔۔۔۔کیسی ہیں۔۔۔؟؟؟ آپ
میں ٹھیک ہوں۔۔۔۔۔
تم سناؤ کیسے یاد آئی ہماری۔۔
بھائی کا نمبر بند ہے۔۔۔کہاں ہیں وہ۔۔۔؟
ہاں اُنکے سیل کی بیٹری ڈیڈ ہے مجھے کال کی تھی انہوں نے۔۔۔۔ احمر بھائی کے ساتھ ہیں
او-کے۔۔۔اور سنائیں ۔۔۔بچے کیسے ہیں۔۔؟۔۔
سب ٹھیک ہیں۔۔۔اپنا بتاؤ کیا ہو رہا ہے آج کل۔۔
کچھ خاص نہیں ۔۔۔بس جاب ہی۔۔وہ آہستہ سا بولا
عائش۔۔۔۔ واپسی کا کیا ارادہ ہے۔۔۔؟؟
واپسی۔۔۔۔۔؟؟ 
ہاں۔۔۔۔ایک سال ہونے والا ہے ۔۔اب واپس آ جاؤ۔۔۔آنٹی(ساس) تمہیں بہت یاد کرتیں ہیں۔۔اُنکا ہی خیال کر لو کچھ۔۔۔ثمرہ افسردہ سی بولی
بھابھی۔۔۔کیا بابا مجھے معاف کر دیں گے۔۔؟
ہاں کیوں نہیں۔۔۔وہ باپ ہیں۔۔ویسے بھی اب اُنکی آدھی ناراضگی تو ختم ہو ہی چکی ہو گی۔۔۔۔۔
وہ کیسے۔۔؟؟عائش حیران ہوا
فارہ۔۔۔کی شادی جو ہو گئی ہے۔۔آرام سے بتایا
واٹ۔۔۔؟؟؟۔۔۔فا۔۔فارہ کی شادی۔۔۔۔؟؟ 
ہاں۔۔۔نکاح ہو گیا ہے لیکن رخصتی میں ابھی کچھ وقت ہے ۔۔۔
یہ۔۔۔یہ کیسے۔۔۔؟؟۔۔وہ ہکلایا
عائش تم تو ایسے حیران ہو جیسے یہ ناممکن ہو ۔۔۔بھئی تم ڈائورس دے گئے تھے۔۔۔ اب وہ ساری زندگی یوں ہی تو نہیں گزار سکتی تھی نا۔۔۔۔اُس نے سچ کہا۔۔
۔۔
""ہوا ہے تجھ سے بیچھڑنے کے بعد اب معلوم
کہ تُو نہیں تھا ۔۔۔۔۔۔تیرے ساتھ ایک دنیا تھی""
۔۔۔۔
ہیلو۔۔۔ہیلو ۔۔۔۔۔ہیلوعائش۔۔؟؟؟؟
لائن آن تھی پر عائش خاموش تھا
عائش۔۔۔۔ثمرہ نے دو، تین بار پکارا مگر کوئی جواب نہیں آیا۔۔۔
تھک کر اُس نے فون رکھ دیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اسجد کے پاس اپارٹمنٹ کی سیکنڈ کی تھی ۔۔۔وہ عائش کو ڈھونڈتا ہوا بالکونی میں آیا
عائش ساکت سا کھڑا تھا
اسجد کو کچھ غلط ہونے کا احساس ہوا
عائش۔۔۔عائش
نن۔۔۔نہیں۔۔ایسا نہیں ہو سکتا۔۔۔وہ میری ہے
عائش بڑبڑا رہا تھا
عائش۔۔۔اسجد نے اس کا کندھا ہلایا
آں ۔۔۔ہاں۔۔ہاں۔۔وہ چونکا
کیا ہوا۔۔؟؟؟اسجد پریشان ہوا
اسجد۔۔۔اسجد وہ ۔۔۔وہ میری ہے۔۔صرف میری۔۔وہ مجھ سے محبت کرتی ہے ۔۔۔پھر۔۔۔پھر کیسے کسی اور کی۔۔نن۔۔نہیں۔۔اسجد ۔۔ایسا نہیں ہو سکتا۔۔۔۔عائش بدحواس ہوا
کیسا ۔۔؟۔۔عائش۔۔۔کیا ہوا ہے ۔۔؟۔۔ریلیکس یار
تُو بیٹھ یہاں۔۔۔اسجد نے اُسے پکڑ کر قریبی کرسی پر بٹھایا اور خود پانی لینے چلا گیا
وہ جانتا تھا۔۔۔۔۔
عائش حواس میں نہیں ۔۔۔
عائش کو پانی پلایا۔۔۔اُسکے کندھے پر تھپک کر ریلیکس کیا۔۔۔۔کچھ دیر بعد خاموشی کو توڑا۔۔۔۔
اب بتا۔۔۔کیا ہوا ہے۔۔؟؟
فا۔۔۔فارہ کا نکاح ہو گیا ہے۔۔۔انتہائی دکھ سے بتایا گیا
تو پھر۔۔۔۔۔اسجد کو زرا دکھ اور حیرانگی نہ ہوئی۔۔
عائش اُسکی ریلیکسیشن پر حیران ہوا

ایسا کیسے ہو سکتا ہے ۔۔۔۔وہ بے بس ہوا
کیوں نہیں ہو سکتا۔۔۔تُو ڈائیورس دے چکا اُسے۔۔ناؤ اٹس ناٹ یئور کنسرن۔۔۔کہ
وہ کب ۔۔۔کس سے شادی کرتی ہے۔۔۔۔اب یہ تیرا مسلہ نہیں ہے۔۔۔۔اسجد اطمینان سے بولا
آئی کانٹ ایکسیپٹ دس۔۔۔
تو نہ کر۔۔۔۔وہ ابھی بھی ریلیکس تھا
میں۔۔۔میں واپس جا رہا ہوں ۔۔آئی ہیو ڈیسائیڈڈ۔۔۔عائش بولا
اب کیا کرنا ہے واپس جاکر ۔۔۔میری مان۔۔آئمہ اچھی لڑکی ہے۔۔۔اُسکے بارے میں سوچ۔۔مشورہ دیا گیا
اپنے مشورے سنبھال کر رکھ اور ہاں۔۔آئمہ واقعی اچھی لڑکی ہے ۔۔۔تُو سوچ لے۔۔۔ویسے بھی تیرے فیملی ٹرمز ہیں عباس صاحب سے۔۔۔اب کے اسجد کو مشورہ دیا گیا
ہاں۔۔اگر تُو اجازت دے ۔۔۔۔تو سوچا جا سکتا ہے۔۔۔۔اسجد مسکرایا
عائش۔۔۔اسجد کا سیل بجا۔۔بات بیچ میں ہی رہ گئی
ہاں۔۔۔ہیلو۔۔او-کے۔۔آئی ایم کمنگ۔۔۔او-کے بائے
چل بڈی۔۔۔میں چلا۔۔۔پھر ملتے ہیں 
او-کے۔۔۔عائش نے ہاتھ ہلایا
اسجد چلا گیا اور عائش پاکستان واپسی کا سنجیدگی سے سوچنے لگا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نکاح ہوئے دو ماہ ہو چکے تھے۔۔فارہ بہت حد تک اس حقیقت کو تسلیم کر چکی تھی۔۔وہ داؤد کو دیکھ چکی تھی۔۔۔۔عائش جتنا ہینڈسم نہ تھا۔۔۔۔پر اچھا تھا۔۔۔
داؤد کی امی اور بہنیں بھی بہت اچھیں تھیں اکثر ملاقات ہو جاتی تھی سب سے۔۔۔
فارہ خوش نہ سہی پر مطمعین ضرور تھی۔۔

سجاد صاحب، فائز اور راحیلہ بھی ہر طرح ریلیکس ہو چکے تھے نکاح کے بعد سے۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

فارہ ٹیرس پر کھڑی تھی۔۔۔لان میں فائز کو ایزی موڈ میں بیٹھے دیکھا تو فورًا لان میں آئی
اسلام وعلیکم۔۔بھائی
واسلام۔۔میری جان۔۔۔وہ مسکرایا
آپ تو عید کا چاند ہو گئے ہیں بھائی ۔۔۔فارہ مسکرائی
ہاں۔۔۔بھئی۔۔۔ویسے تو کوئی پوچھتا نہیں۔۔ہم نے سوچا ایسے ہی سہی۔۔۔وہ بھی بہن کا اچھا موڈ دیکھ کر خوش ہوا
کیوں جناب۔۔۔آپکی مسز ہیں نا پوچھنے والیں۔۔۔
فائز کی مسکراہٹ سمٹی
فارہ دیکھ چکی تھی اُسکی سمٹتی مسکراہٹ

بھائی۔۔۔؟؟؟ 
ہونں۔۔۔۔
بھائی۔۔۔محبت کرتے ہیں نا مجھ سے۔۔معصومیت سے پوچھا
فائز مسکرایا۔۔۔۔یہ بھی پوچھنے کی بات ہے ۔۔سویٹ گرل۔۔۔فائز نے اُس کے سر پر چپٹ لگائی
جانتی ہوں۔۔۔پھر بھی یقین دہانی چاہیے
تو پھر لی جئیے یقین دہائی۔۔وہ ہنسا
بھائی۔۔بی سیریس۔۔
او-کے ڈئیر۔۔ایم سیریس۔۔۔فائز نے منہ پر ہاتھ پھیر کر سیریس ہونے کا یقین دلایا
فارہ مسکرائی۔۔۔اوکے۔۔۔
آپ میری خاطر بھابھی کی سزا ختم کر دیں بھائی ۔۔۔۔۔جس وجہ سے دے رہے تھے وہ مسلہ حل ہو چکا ہے۔۔۔۔۔ میرا نکاح ہو گیا ہے بھائی ۔۔۔پھر اب کیوں۔۔۔؟؟
میں کچھ غلط نہیں کر رہا۔۔۔میرا دل ہی اب پہلے جیسا نہیں رہا۔۔۔آہستہگی سے بولا
بھائی پلیز۔۔۔ایسا مت کہیں۔۔۔محبتوں میں تو بہت گنجائش ہوتی ہے۔۔اور بھابھی تو آپکی بیٹی کی ماں بھی ہیں۔۔۔آیت کی خاطر ہی سہی بھائی۔۔۔
اس سب کا اثر آیت پر بھی ہو رہا ہے وہ باتوں کو سمجھنے لگی ہے اسلیے۔۔پلیزز بھائی پہلے جیسے بن جائیں ناں۔۔۔فارہ منمنائی

او-کے ۔۔جناب۔۔۔ اتنی بڑی سفارش آئی ہے۔۔۔۔ اب تو کچھ سوچنا ہی پڑے گا۔۔فائز مسکرایا
ایگزیٹلی۔۔۔۔فارہ ہنسی
رمشا کمرے کی کھڑی سے دیکھتی دونوں بہن بھائی کی مسکراہٹ دائمی ہونے کی دعا مانگنے لگی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عائش نے جاب سے ریزائن کر دیا تھا اور پاکستان واپسی کی ٹکٹ کنفرم کروالی تھی
آئمہ کو ریزائن کا پتہ چلا تو عائش کے اپارٹمنٹ چلی آئی۔۔۔
عائش اُسے دیکھ کر حیران سا کھڑا تھا۔۔

عائش ۔۔۔مِی آئمہ۔۔۔آئمہ عباس۔۔آئمہ نے اُسکی حیرت دیکھ کر تعارف کرانا ضروری سمجھا
عائش ہلکا سا مسکرایا ۔۔ایسے تعارف پر
اووہ۔۔یہ تو ہنستا بھی ہے۔۔۔آئمہ نے دل میں سوچا
آپ۔۔۔؟؟؟ 
جی میں۔۔۔۔کیا میں اندر آسکتی ہوں۔۔۔؟
اوہ سوری۔۔۔جی۔۔۔ضرور۔۔۔وہ پیچھے ہٹا
آئمہ اپارٹمنٹ کا جائزہ لیتی ہوئی لاؤنج میں آئی۔۔
آپ۔۔یہاں۔۔کس سلسلے میں۔۔۔؟؟؟؟ 
عائش تم نے ریزائن کیوں دیا۔۔۔وہ اصل بات پر آئی۔۔۔۔۔کہیں میری وجہ سے تو۔۔۔۔۔
نو۔۔نو۔۔۔ایسی کوئی بات نہیں ہے ۔۔عائش جلدی سے بولا
آئی ایم گوئنگ بیک ٹو ہوم ڈیٹس واے آئی ریزائینڈ۔۔عائش نے ڈیٹیل بتائی

اوکے۔۔میں سمجھی۔۔شاید
تم کیوں جا رہے ہو واپس۔۔۔پلیززز مت جاؤ۔۔فرمائش کی گئی
عائش چونکا اُس کے انداز پر
دیکھو عائش۔۔۔آئی۔۔۔۔۔۔۔۔
آئمہ۔۔عائش نے جلدی سے بات کاٹی۔۔۔۔میں یہاں ہمیشہ کیلیے نہیں آیا تھا۔۔کچھ وقت کے لیے آیا تھا اور وہ وقت گزر چکا اب مجھے جانا ہی ہے میری فیملی ہے وہاں ۔۔۔۔۔۔
پھر نہیں آو گے کیا۔۔؟؟۔۔امید سے پوچھا گیا۔
نہیں۔۔۔۔ٹکا سا جواب ملا
رابطہ رکھو گے مجھ سے۔۔۔۔دیکھو عائش.۔۔
کچھ اور نہ سہی پلیز۔۔۔تم مجھ سے دوستی ہی کر لو۔۔عائش پلیز آئی وانٹ ٹو بی یئور فرینڈ نا۔۔۔۔وہ ملتجی ہوئی
میں لڑکیوں سے دوستی نہیں کرتا۔۔ڈونٹ مائنڈ۔۔عائش کا انداز دوٹوک تھا یعنی بس اب اور کچھ نہیں ۔۔۔ 
کچھ دیر کی خاموشی کے بعد وہ بولی۔۔
او-کے عائش۔۔۔ ایز یو وِش بٹ آئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ رُکی
اِٹس اوکے۔۔۔۔۔وہ افسردہ سا مسکرائی
میں چلتی ہوں۔۔۔۔
میں چائے لاتا ہوں۔۔عائش نے سرسری سا
پوچھا۔
نوپلیز ۔۔۔میں چائے نہیں پیتی۔۔۔او-کے بائے وہ پرس اُٹھاتی شکستہ سی چل دی۔۔
عائش۔۔۔نے لمبا سا سانس کیھنچ کر خود کو ریلیکس کیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

پاپا۔۔۔۔۔۔
یس۔۔۔۔۔۔۔۔پاپازز ڈول
فائز اسوقت آیت کو بیڈ پر پاس بیٹھائے اسکے بالوں میں انگلیاں چلا رہا تھا
پاپا۔۔۔انعم ہے ناں۔۔۔میری فرینڈ
ہاں ہے۔۔۔۔۔۔۔فائز نے بیٹی کی ہاں میں ہاں ملائی۔۔۔
رمشا بھی کمرے میں موجود اُن باپ بیٹی کی طرف ہی متوجہ تھی ۔۔۔۔جو کافی دن بعد اسطرح بے تکلف سے بیٹھے تھے۔

پاپا۔۔۔انعم کا چھوٹا بھائی آیا ہے
کہاں سے۔۔۔؟۔۔۔فائز فوری سمجھ نہ سکا اسلیے بے تکا سوال کیا
اووہو۔۔۔پاپا۔۔۔۔اللّہ میاں ۔۔۔نے دیا ہے۔۔۔۔باپ کی معلومات میں اضافہ کیا گیا 
اوہ یس۔۔۔تو پھر۔۔۔فائز مسکرایا
پاپا۔۔۔۔شی از گوئنگ ٹو بی پراؤڈ۔۔منہ بنایا
ہممممم۔۔۔آپ جیلس فِیل کر رہیں ہیں۔۔؟؟؟

رمشا دلچسپی سے سب سن رہی تھی۔۔۔

یاہ۔۔۔۔فیلنگ جیلس۔۔۔۔آیت نے سچ بتایا
اوہ نو۔۔۔اٹس ناٹ فئیر۔۔۔۔۔اب۔۔۔اب کیا کریں ایسا کہ آپ ۔۔۔۔۔
پاپا۔۔۔۔۔آیت نے بات کاٹی۔۔۔۔۔۔مجھے بھی بھائی چاہئیے ۔۔۔ضد ہوئی
رمشا جو سن رہی تھی ۔۔۔بَلش ہوئی
فائز کی نظر اُسکے بَلش چہرے پر پڑی تو فورًا نظریں چرائیں۔۔
اوکے۔۔۔سویٹ ہارٹ۔۔۔کچھ سوچتے ہیں اس بارے میں۔۔۔اب آپ چلو روم میں سوؤ جا کر صبح سکول بھی جانا ہے۔۔۔ہری اپ ۔۔۔
اوکے ۔۔پاپا۔۔۔گڈ نائیٹ
گڈ نائیٹ ۔۔۔سویٹی
دونوں باپ بیٹی نے کِسز کا تبادلہ کیا ۔۔


رمشا بھی فورًا آیت کے ساتھ ہی باہر نکلی۔۔ اُسکی جلدی پر فائز بے اختیا ر مُسکرا دیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عائش نے اسجد کو پاکستان واپسی کے بارے میں انفارم کر دیا تھا۔۔اسی لیے اسجد اسوقت اُسکے اپارٹمنٹ میں موجود تھا۔
واپس جا کر کیا کرے گا۔۔۔وہ افسرہ سا بولا
یہاں رہ کر کیا کروں گا یار۔۔۔۔میں ہمیشہ کےلیے تھوڑا ہی آیا تھا۔۔۔مائی فرینڈ۔۔۔تُو نے مجھے بہت سپورٹ کیا ہے اور میں تیرا احسان کھبی بھی نہیں بھولوں گا۔۔ڈئیر۔۔عائش نے مسکرا کر اُسکے کندھے پر دھپ ماری
آئی وِل بی مس یو۔۔۔جانی۔۔۔وہ ابھی بھی افسردہ تھا
ہاہاہاہا۔۔۔۔ڈئیر۔۔۔اتنا افسردہ کیوں ہے ۔۔نہ تو میں تیری گر ل فرینڈ ہوں اور نہ تُو میری۔۔۔۔عائش نے اُسکا موڈ فریش کرنا چاہا
عائش تُو ایسے ہی ہستا مسکُراتا رہنا اوکے۔۔ اور اب وہاں جا کر کوئی نیا پنگا مت شروع کرنا۔۔جو ہو چکا اُس کو چھوڑ کر آگے کا سوچنا۔۔اور ایک اور ریکویسٹ ہے میری۔۔۔اسجد سنجیدہ سا بولا۔۔
ریکویسٹ کیوں ۔۔۔۔یار۔۔۔حکم کر۔۔۔حکم۔۔۔عائش فراخ ہوا
تُو۔۔۔۔۔عائش تُو واپس جا کر فارہ کے معاملے میں ٹانگ نہیں اڑائے گا۔۔۔اُس کا بھی حق ہے خوشیوں پر۔۔اسلیے اُسے اب جینے دے اُس کے اپنے طریقے سے ۔۔۔۔یار سمجھ رہا ہے ناں
او-کے۔۔۔میں ایسا ہی کروں گا۔۔عائش بیبا بچہ بنا۔۔۔
گڈ۔۔۔۔جانی۔۔۔وہ مسکرایا
ہاں۔۔۔۔۔۔۔تو اب بتا۔۔۔۔ڈئیرنگ کمینے۔۔۔۔۔جانے سے پہلے ڈنر کروا رہا ہے ناں تُو۔۔۔کب اور کہاں۔۔۔۔؟؟ٹیل مِی۔۔؟؟؟؟
اسجد ٹون میں آ چکا تھا
کروادوں گا یار۔۔یہ بھی کوئی بات ہےتُو جہاں کہے گا وہیں ۔۔۔۔عائش سخی ہوا
چل …پھر کل کا ڈنر ڈن۔۔۔اسجد نے ڈن کیا
او-کے ڈن ۔۔۔عائش مسکرادیا
وہ دونوں ادھر اُدھر کی باتیں کرنے لگے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سکندر وِلا میں اسوقت سکندر صاحب اور مسز سکندر سنڈے کی وجہ سے لیٹ ناشتہ کر رہے تھے۔
سکندر صاحب ساتھ میں اخبار بھی دیکھ رہے تھے اسی لیے انہیں پتہ نہ چل سکا کہ وہاں کون داخل ہوا ہے۔۔
مسز سکندر کی نظر اُٹھی اور ساکت رہ گئی دروازے میں ۔۔۔۔عائش کھڑا تھا
ع۔۔۔عائش۔۔۔تم۔۔۔۔وہ ہکلائیں
سکندر بھی متوجہ ہوئے
تم۔۔۔۔تم یہاں کس لیے آئے ہو۔۔۔؟؟وہ گرجے
بابا۔۔۔وہ
میں تمہارا باپ نہیں ہوں سمجھے ۔۔۔۔اور نہ تمہیں جانتا ہوں اس لیے جہاں سے آئے ہو وہیں چلے جاؤ واپس۔۔۔ اس گھر میں اب کوئی جگہ نہیں تمہارے لیے۔۔۔۔۔
بابا۔۔ایک بار پلیز میری بات سن لیں۔۔۔وہ ملتجی ہوا

ڈونٹ کال می بابا۔۔۔آئی ایم ناٹ یئور فادر۔۔۔ناؤ گیٹ آوٹ فرام مائی ہاوس۔۔۔وہ دھاڑے
سکندر پلیز سن لیں کیا کہہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آپ چپ رہیں ۔۔۔۔آپ جیسی مائیں ہی ناجائز سپورٹ سے اولاد کو بگاڑتیں ہیں۔۔۔میں جا رہا ہوں ہاشم (فرینڈ) کی طرف۔۔۔۔واپسی پر یہ لڑکا مجھے اس گھر میں نظر نہ آئے
اور اگر آپ کو زیادہ پیار آئے۔۔۔۔تو آپ بھی جا سکتیں ہیں بیٹے کے ساتھ۔۔۔۔۔انڈرسٹینڈ۔۔سکندر نے بات مکمل کی اور تیزی سے باہر نکل گئے
وہاں اب وہ ماں بیٹا ہی رہ گئے۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رمشا کافی دیر سے کروٹیں بد ل رہی تھی۔۔۔۔۔ اب تو نیند بھی مشکل سے ہی آتی تھی۔۔۔جب سے وہ دشمن ِجاں۔۔۔سنگدل ہوا تھا۔۔۔رمشا ٹھیک سے سو نہیں پاتی تھی۔۔۔اب بھی کروٹیں بدل بدل کر تھک گئی تھی۔۔۔
فائز کروٹ بدلے ہوئے تھا۔۔۔۔۔ مگر غافل ہر گِز نہ تھا۔۔۔۔۔۔ وہ رمشا کی بے چینی محسوس کر چکا تھا۔۔۔۔لیکن خاموش تھا۔۔
رمشا نے تھک ہار کر فائز کیطرف کروٹ لی اور اُس کی پشت پر نظریں جما دیں۔۔
کتنا بُرا کر رہے ہیں فائز۔۔۔کاش کہ۔۔۔۔ آپکو احساس ہو ۔۔۔۔۔یوں بیچ راستے میں چھوڑنے والے کو بےوفا کہتے ہیں۔۔۔۔بس کر دیں فائز میں آج بھی منتظر ہوں آپکی۔۔۔بس ایک بار۔۔۔ایک بار ہاتھ بڑھا لیں میں سب کچھ بُھلا دوں گی۔۔۔رمشا کی آنکھوں سے نمکین پانی رواں ہوا۔۔۔

فائز اُسکی نظروں کی تپش اپنی پشت پر محسوس کر چکا تھا۔۔۔
کیا مجھے سب بُھلا کر رمشا کیطرف بڑھنا چاہیے۔۔۔یا۔۔۔پھر۔۔۔۔وہ کچھ سوچتا کہ رمشا کی ہچکی سُنائی دی۔۔۔بس یہی لمحہ اُسے کمزور کر گیا۔۔۔
فائز نے رمشا کیطرف سائیڈ لی۔۔
رمشا نے اُسے اپنی طرف کروٹ لیتے دیکھ کر جلدی سے آنکھیں زور سے میچ لیں۔۔۔
لیکن اُسکی چوری پکڑی گئی تھی

لرزتی ہوئی گیلی پلکیں، کپکپاتے ہونٹ، سرخ ہوتی ناک۔۔۔یہ سب اُسکی چوری پکڑوا چکے تھے۔۔
فائز کے لیے اب خود پر کنٹرول رکھنا مشکل ہو گیا تھا۔۔۔اسی لیے آہستگی سے ہاتھ بڑھا کر ۔۔۔رمشا کو اپنی طرف کھینچ لیا ۔۔۔
رمشا کَٹے پتنگ کی مانند کھینچتی چلی گئی۔۔۔
فائز نے اُسے اپنے حصار میں لیا۔۔۔
رمشا کیلیے اب مزید صبر مشکل تھا ۔۔اُس نے فائز کی شرٹ کو جکڑا اور اسکے سینے پر سر رکھے ہچکیوں سے رونے لگی۔۔۔زاروقطار۔۔۔

فائز اُس کے سر کو تھپک رہا تھا، اُسے چُپ کروا رہا تھا۔۔۔
فا۔۔۔فائز۔۔۔آپ۔۔۔آپ نے۔۔۔
اوں ہوں۔۔۔۔فائز نے اُسکے ہونٹوں پر انگلی رکھ کر خاموش کروایا
اب اور کچھ نہیں۔۔۔۔۔ماتھے پر بوسہ دیا
اور۔۔۔۔کان کے پاس سرگوشی کی۔۔۔۔*سٹِل لو یو آ لوٹ*۔۔۔۔۔اور رمشا کو خود میں بھینچ لیا۔
رمشا پرسکون تھی۔۔۔خوش تھی۔۔۔۔۔وہ دشمنِ جاں ناجانے کتنے عرصے بعد مہربان ہوا تھا۔

باہر چاند بھی اُن کے ملاپ پر خوشی سے شرما دیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عائش نے کچھ رُولا کر اور کچھ رو کر آخرکار ماں کو منا ہی لیا تھا
وہ بھی ماں تھیں۔۔۔کیسے جوان بیٹے کو روتا دیکھتیں۔۔۔اسلیے۔۔۔معاف کر دیا 
ممی۔۔۔۔۔
ہونں۔۔۔۔۔۔وہ عائش کے بالوں میں انگلیاں پھیر رہی تھیں۔۔۔اُسکا سر اُنکی گود میں تھا
میں۔۔۔میں نے بہت غلط کیا۔۔سب کے ساتھ۔۔کیا۔۔کیا سب مجھے معاف کر دیں گے۔۔بڑی امید سے پوچھا گیا۔۔
ہاں۔۔۔۔۔شاید۔۔۔۔وہ پریشان سی بولیں
ماں۔۔۔۔میں۔۔۔فا۔۔فارہ سے بھی معافی مانگ لوں گا ۔۔وہ جلدی سے بولا
نہیں۔۔۔نہیں عائش تم فارہ کے پاس نہیں جاؤ گے ۔۔وہ بہت مشکل سے نکلی ہے اس فیز سی۔۔۔کہیں پھر سے۔۔۔۔نن۔۔۔نہیں تم وہاں ہر گِز نہیں جاؤ گے اور نہ ہی فون پر بات کرو گے۔۔۔بھول جاو سب۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیسے بھول جاؤں سب۔۔۔نہیں بُھلا سکتا میں اُسے۔۔۔وہ۔۔۔وہ میرے حواسوں پر سوار ہو چکی ہے۔۔۔
ہر۔۔۔۔ہر طرف دِکھتی ہے مجھے وہ۔۔ماں۔۔میں نہیں بھول سکتا ہوں۔۔۔مجھے محبت ہو گئی ہے اُس سے۔۔۔مجھے میرے کیے کی سزا مل گئی ہے۔۔۔مجھے سکون نہیں ملتا۔۔۔ماں۔۔میں کیا کروں۔۔۔مجھے بتائیں میں کیا کروں۔۔۔۔۔ کہاں جاؤں۔۔۔ہر جگہ وہ ہے۔۔۔ہر جگہ
عائش ماں کی گود میں سر رکھے اپنی بےبسی پر رو دیا۔۔۔۔۔۔
مسز سکندر بیٹے کے انکشاف پر ششدر سی بیٹھیں رہ گئیں۔۔
"مجھے محبت ہو گئی ہے اُ س سے"
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جاری ہے

 
Zubair Khan Afridi Diary【••Novel ღ ناول••】. Zubair Khan Afridi
knowledgemoney