اعتبارِ وفا کون کرے
7 قسط

مسز سکندر عائش کے منہ سے فارہ کے لیے اظہارِے محبت سن کر ششدر رہ گئیں۔۔۔۔یہ کیا کہہ رہا تھا وہ۔۔۔۔۔۔۔بمشکل بولنے کے قابل ہوئیں
عائش آج تم نے میرے سامنے یہ اعترافِ کر لیا ہے ۔۔۔۔۔دوبارہ تمہارے منہ سے ایسی کوئی بات نہ نکلے سمجھ گئے
پہلے اسُ کے ماتھے پر طلاق کا ٹیکا لگا گئے اور اب۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں عائش وہ اب کسی اور کی امانت ہے ۔۔وہ منکوحہ بن گئی ہے کسی اور کی۔۔۔اب تمہاری ایسی کوئی بھی بات پھر سے اُسکی زندگی میں طوفان لائے۔۔۔۔۔یہ میں برداشت نہیں کروں گی سمجھے۔۔۔۔اب اس بات کو ذیہن میں بٹھا لو اچھی طرح فارہ اب تمہاری کبھی نہیں ہو سکتی۔۔۔۔۔سنا تم نے۔۔۔۔۔۔مسز سکندر نے واضح الفاظ میں سمجھایا
جانتا ہوں۔۔۔۔۔۔۔مدھم سی بوجھل آواز آئی

""میری محبتیں بھی عجیب تھیں
میرا فیض بھی تھا کمال پر
کبھی سب ملا بِنا طلب
کبھی کچھ نہ ملا سوال پر""

اچھی بات ہے۔۔۔۔انہوں نے بیٹے کے ماتھے کا بوسہ لیا۔۔دل میں وہ بہت افسردہ ہو گئیں تھیں۔۔عائش کو اس حالت میں دیکھ کر۔۔۔پر اُن کے بس میں کچھ نہ تھا اب۔۔۔۔۔۔

ہیلو ایوری ون۔۔۔۔رامش کی فریش آواز سنائی دی۔۔۔
ارے رامش بیٹا تم۔۔۔۔۔مسز سکندر خوش ہوئی
جی میں۔۔۔۔اسلام وعلیکم! کیسی ہیں۔۔۔ماں کو گلے لگایا
میں ٹھیک ۔۔۔اچانک۔۔۔۔وہ حیران تھیں
بس آپ کے اس صاحبزادے کی وجہ سے آنا پڑا اُس نے عائش کی طرف اشارہ کیا اور اُسکی جانب بڑھا
دونوں بھائی گلے ملے۔۔۔رامش نے نوٹ کیا۔۔عائش بہت ویک اور مرجھایا ہوا سا تھا اُسے دکھ ہوا عائش کی یہ حالت دیکھ کر۔۔۔۔۔۔
بہو۔۔۔بچوں کو بھی لے آتے۔۔۔
لے آتا مگر بچوں کے ایگزیمز چل رہے ہیں اسلیے ثمرہ کو بچوں کے پاس چھوڑنا پڑا۔۔اینی وے آپ کا بیٹا آگیا ہے کیا یہ کافی نہیں۔۔۔۔وہ مسکرایا
ہاں۔۔۔میں بہت خوش ہوں آج میرے دونوں بیٹے میرے پاس ہیں۔۔۔انہوں نے مسکرا کر دونوں بیٹوں کو دیکھا
تو پھر کھانے پانی کا بندوبست کریں۔۔۔آپ کے ہاتھ کا کھانا کھائے بہت دن ہو گئے۔۔۔رامش نے انگڑائی لی اور ساتھ ماں کو مکھن لگایا
ہاں جانتی ہوں سب۔۔۔مکھن باز۔۔۔انہوں نے اسکے کندھے پر ہاتھ مارا اور مسکراتیں ہوئیں کچن میں چل دیں

رامش ۔۔۔عائش کی طرف متوجہ ہوا۔۔جو ہاتھوں میں سر گِرائے بیٹھا تھا
عائش۔۔۔اُس نے کندھے پر ہاتھ رکھا
ہونں۔۔۔وہ چونکا
جی کچھ کہا آپ نے۔۔۔۔۔۔؟سوال کیا
نہیں۔۔۔۔۔
بابا سے ملاقات ہوئی ۔۔؟رامش نے پوچھا
جی۔۔۔۔مختصر جواب آیا
کیا۔۔کہا۔۔انہوں نے۔۔۔؟؟
عائش نے ساری بات بتائی۔۔۔
بھائی اب۔۔۔وہ فکر مند ہوا
تم ٹینشن مت لو۔۔۔میں اسی لیے تو آیا ہوں۔۔میں کرلوں گا ہینڈل۔۔ہونں۔۔بی ریلیکس
عائش نے سر ہلا دیا۔۔۔
رامش باپ کو قائل کرنے کے الفاظ ترتیب دینے لگا۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رمشا۔۔نہا کر بال برش کر رہی تھی کہ فائز جوگنگ کر کے واپس کمرے میں آیا
رمشا جھجھکی۔۔جیسے نئی نویلی دلہن ہو
فائز نے اُسے شرماتے اور بلش کرتے دیکھا۔۔۔ تو مسکراتا ہوا اُسکے پیچھے آ کھڑا ہوا
رمشا نے نظریں جھکا دیں
آآہمممممم۔۔۔۔ہم آپ کے محرم ہیں محترمہ اور وہ بھی خاص۔۔۔۔۔فائز نے لفظ خاص پر زور دیا
رمشا ابھی بھی زمین کو دیکھ رہی تھی۔
فائز نے کندھے سے پکڑ کر اُسے اپنی طرف موڑا

مِشا۔۔۔۔۔پیار سے پکارا گیا
جج۔۔جی
گھبرا کیوں رہی ہو ۔۔۔ہم تو اس میدان کے پرانے کھلاڑی ہیں ناں۔۔۔اُسے کنفیوز کرتےحصار میں جکڑا
فا۔۔فائز۔۔۔رمشا واقعی ایسے گھبرا رہی تھی جیسے آج شادی کے بعد پہلا دن ہو۔۔۔
جی جانِ فائز۔۔۔۔تھوڑی کے نیچے ہاتھ رکھ کر چہرہ اونچا کیا گیا۔۔
رمشا نے اُسکی آنکھوں میں وہی کچھ دیکھا جو وہ دیکھنے کو ترس گئی تھی۔
آپ نے مجھے معاف کر دیا نا ۔۔۔۔یقین چاہا
میں نے خود کو معاف کر دیا۔۔جان۔۔۔گھمگھیر جواب آیا
کیا مطلب۔۔؟؟ 
مطلب۔۔۔یہ۔۔۔فائز اُس کے چہرے پے جھک کر
ایک ایک نقش کو اپنے ہونٹوں سے چھونے لگا
فا۔۔فائز۔۔چھوڑیں ۔۔۔چھوڑیں ناں۔۔۔رمشا اس افتاد پر سٹپٹائی
اس سے پہلے کے فائز آؤٹ آف کنٹرول ہوتا۔۔
دھاڑ سے دروازہ کھلا۔۔۔
مما۔۔۔۔آیت کی آواز آئی
فائز کی گرفت ڈھیلی پڑی۔۔۔
رمشا جلدی سے دور ہٹی۔۔۔
ہاں۔۔۔۔ہاں۔۔۔۔کیا ہوا۔۔۔؟۔۔۔وہ گھبرائی یوں جیسے چور چوری کرتے پکڑا گیا ہو۔۔
ریلیکس یار۔۔۔۔ہمارا ہی پیس ہے۔۔۔۔فائز نے آنکھ ماری
آپ چُپ رہیں۔۔۔رمشا نے اُسے لتاڑا
وہ ہسنے لگا۔۔۔۔
آیت دونوں کو اپنی طرف متوجہ نا پا کر چلائی۔۔۔۔میں ڈیڈ (وہ بھی باپ کی دیکھا دیکھی سجاد کو ڈیڈ کہتی تھی) کو بتاتی ہوں جاکر کہ آپ مما کو۔۔۔۔وہ دھمکی دے کر بھاگی۔۔۔۔ 
اس سے پہلے کے نیچے جا کر سب کے سامنے خبر نشر کرتی۔۔۔۔فائز نے سیڑھیوں پر پکڑ لیا
کیا بتاؤ گی ڈیڈ کو۔۔۔؟؟وہ روب سے بولا
یہی کہ آپ مما کو۔۔۔۔۔وہ رُکی
آیت۔۔۔۔۔وہ غصے سے بولا
نہیں بتاؤں گی۔۔۔۔ معصومیت سے بولی

فائز جانتا تھا۔۔۔۔وہ کچھ نہ کچھ ضرور دیکھ چکی ہے اسی لیے دھمکی دے رہی تھی
آیت نے باپ کو گھورتے دیکھا تو کان پکڑ کر سوری کی۔۔۔
او-کے جاؤ۔۔۔۔۔فائز نے کہا

وہ تین سٹیپ اُتر کر موڑی۔۔۔پاپا۔۔۔۔۔۔۔
میں اب ناک کر کے آیا کروں گی۔۔۔اور ہستی ہوئی یہ جا۔۔۔ وہ جا۔۔۔۔
اُووف۔۔۔۔۔یہ پانچ کی ہے یا پچاس کی۔۔۔۔؟؟ 
فائز نے حیرت سے پاس کھڑی رمشا سے پوچھا
آپ جانتے ہوں گے۔۔۔۔۔آپکا پیس جو ہے۔۔۔۔وہ اُسی کی بات لوٹاتی۔۔۔۔۔ ہنستی ہوئی سیڑھیاں اُتر گئی۔
فائز بھی حیرت زدہ سا مسکرا دیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رامش نے ناجانے باپ کو کیا کہہ کر قائل کر لیا کہ وہ خاموش ہوگئے تھے۔۔۔
دوبارہ عائش کو نہ تو گھر سے نکلنے کو کہا اور نہ ہی کوئی لعن طعن کی۔
رامش جاتے ہوئے عائش کو بھی سمجھا گیا تھا۔۔۔۔۔۔ کہ۔۔۔۔ بابا اگر کچھ کہیں تو تحمل اور خاموشی سے سن لینا اور پلٹ کر کوئی جواب نہ دینا۔۔۔
عائش یہ بات اچھے سے سمجھ چکا تھا
باپ اور بیٹے کی ملاقات بھی کم ہی ہوتی تھی عائش کی جاب کی تلاش جاری تھی کیونکہ سکندر صاحب نے ابھی معاف نہیں کیا تھا تو آفس میں اُسکے لیے کوئی جگہ بھی نہ تھی۔

رمشا بھی سکندر وِلا نہ آئی تھی۔۔۔۔جب سے اُسے عائش کی واپسی کا پتہ چلا تھا۔۔وہ خفا تھی اور خفا ہی رہنا چاہتی تھی اُس سے۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آج داؤد کی فیملی آ رہی تھی سجاد ہاؤس شادی کی تاریخ فائنل کرنے۔۔۔۔
اسی سلسلے میں تیاریاں جاری تھیں۔۔۔رمشا بات بے بات مسکرا رہی تھی۔۔۔۔ اور فارہ اس بات کو نوٹ کر چکی تھی۔۔
بھابھی۔۔۔۔ آج بہت خوش نظر آ رہیں خیریت۔۔۔۔فارہ نے معنی خیزی سے کہا۔۔۔
بلکل ۔۔۔۔۔تمہارے سسرال والے جو آ رہے ہیں۔۔۔وہ مسکرائی
سسرال والے میرے آ رہے ہیں اس حساب سے مجھے بتیسی نکالنی چاہیے نہ کہ آپکو۔۔۔۔

تو نکالو تم بھی میں نے منع تھوڑی کیا ہے ۔۔رمشا نے جواب دیا
مجھے شک سا ہو رہا ہے۔۔۔۔بھابھی اس لیے سچ سچ بتائیں۔۔۔ کیا بات ہے۔۔؟۔۔فارہ ابھی بھی بے یقین تھی۔۔
تمہارے بھائی سے صُلح ہو گئی ہے۔۔۔رمشا نے شرماتے، مسکراتے بتایا
ااووووووووو۔۔۔۔فارہ ہنسی۔۔۔
مبارک ہو بھابھی بہت بہت۔۔۔۔ فارہ رمشا کے گلے لگی۔۔۔بہت اچھی نیوز دی ہے آپ نے۔۔۔۔فارہ دل سے خوش ہوئی اس بات پر۔۔
ہاں۔۔۔میں بھی بہت خوش ہوں فارہ۔۔۔اور اللّہ تمہیں بھی بہت زیارہ خوشیاں دے۔۔۔آمین
آمین۔۔۔۔فارہ نے دل سے کہا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ایک ماہ بعد کی تاریخ فائنل کی گئی۔۔۔
سجاد ہاؤس میں راحیلہ بیگم ہر چیز دوبارہ سے اور نئی تیا کروا رہیں تھیں۔۔۔ہر کوئی خوش اور مطمعین تھا۔۔۔۔
یوں ہی ہنسی خوشی رخصتی کا دن آن پہنچا۔۔۔۔
فارہ ریڈ اور بیلو کنٹراس کے لہنگے میں سوگوار سی بہت پیاری لگ رہی تھی۔۔
سب کی دعاؤں کے سائے تلے اُسے پیا دیس رخصت کر دیا گیا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

داؤد کا گھر کوئی بہت بڑا اور خاص نہ تھا بس ویسا ہی تھا جیسا چھوٹا سا مڈل کلاس گھر ہوتا ہے۔۔۔۔فارہ کو وہاں کی صفائی ستھرائی پسند آئی۔۔۔ہر چیز سلیقے سے سیٹل تھی۔۔۔۔بلکل کسی قسم کا کوئی اُدھم نہیں تھا۔۔۔جیسا اکثر شادیوں پر ہوتا ہے۔۔
فارہ کی بڑی نند (جو بیوہ اور دو بیٹوں کی ماں تھی اور داؤد کے گھر ہی رہائش پزیر تھی) نے فارہ کو داؤد کے کمرے تک پہنچایا۔۔
فارہ جھجھکتی ہوئی بیڈ پر بیٹھ گئی۔۔
فارہ۔۔۔
جی۔۔۔۔۔
کسی چیز کی ضرورت ہو تو بتا دینا۔۔تمہارے کپڑے الماری میں موجود ہیں۔۔اور ہاں میں دودھ بھجواتی ہوں پی لینا۔۔۔۔ ہاں۔۔۔۔۔۔
جی۔۔۔۔فارہ نے آہستگی سے کہا
چلو پھر میں چلتی ہوں۔۔۔۔وہ سر پر ہاتھ رکھ کر تھپک کہ چلی گئی۔۔
سارہ کے جانے کے بعد فارہ کمرے کا جائزہ لینے لگی
بیڈ، ڈریسنگ، صوفہ،الماری اور ایک کھڑکی تھی ساتھ جو گلی میں کُھلتی تھی۔۔۔بائیں طرف شاید واش روم کا دروازہ تھا جو بند تھا اسلیے وہ جان نہ پائی کہ واش روم ہے یا کچھ اور۔۔۔۔۔
جائزہ مکمل کر کے وہ بیڈ کراون سے ٹیک لگا کر سوچنے لگی۔۔۔۔۔۔اپنی اب تک کی زندگی کا ہر ہر پل۔۔۔۔۔
یا میرے مالک۔۔۔میرے دل میں داؤد کی محبت ڈال دے ۔۔۔میں گنہگار نہیں ہونا چاہتی۔۔۔۔پلیز اللّہ جی۔۔۔۔مجھے ہر آزمائش سے نکال دے۔۔۔میرے دل کے ہر کونے میں داؤد کا نام لکھ دے۔۔۔۔وہ میرے مقدر میں لکھ دیا ہے تُو نے۔۔میرے مالک۔۔۔مجھے اپنے مقدر پر صبر کرنے کی توفیق دے۔۔۔اور۔۔۔۔۔۔۔
دعا بیچ میں ہی رہ گئی ۔۔دروازہ کُھلا
فارہ جلدی سے سیدھی ہوئی۔۔۔داؤد آہستگی سے چلتا فارہ کے پاس آکر بیٹھا۔۔
اسلام وعلیکم! 
فارہ نے مدھم سا جواب دیا۔۔۔
کیسی ہیں آپ۔۔۔۔؟
جی ٹھیک۔۔۔۔
فارہ۔۔۔مجھے آپ سے کچھ ضروری باتیں کرنی ہیں۔۔۔۔داؤد نے اجازت چاہی
جی۔۔کریں۔۔۔
فارہ۔۔۔میری فیملی آپ کی پہلی شادی سے لاعلم ہے۔۔۔
فارہ کے دل پر گہری چوٹ پڑی یہ سن کر۔۔۔

ایکچولی۔۔۔سجاد سر نے مجھ سے ہر بات شئیر کر لی تھی۔۔۔مجھے کوئی اعتراض نہ تھا ۔۔اسلیے فیملی کو انولو نہیں کیا۔۔۔اور آپ سے بھی یہی کہوں گا کے یہ بات آج یہاں ہی دفن ہوجائے۔۔۔
ہمارے درمیان بھی دوبارہ اس ٹاپک پر کوئی بات نہیں ہو گی۔۔۔آپ سمجھ رہیں ہیں ناں میری بات۔۔۔۔داؤد نے استفسار کیا
جی۔۔۔۔وہ مشکل سے جی کہہ پائی
مجھے اس بات کو ڈیٹیل میں جاننے کی کوئی دلچسپی نہیں ہے۔۔۔۔آپ۔۔۔۔آج سے میری بیوی ہیں۔۔۔۔ میرے لیے یہ بات اہم ہے۔۔۔وہ خاموش ہوا
فارہ سمجھی شاید تائید چاہ رہا ہے اپنی بات کی۔۔۔فارہ نے
جی۔۔۔کہہ کر ہاں میں سر ہلایا
داؤد کے ہونٹوں پر مسکراہٹ بکھری۔۔۔اُس نے فارہ کا ہاتھ اپنے ہاتھ میں لیا۔۔۔
فارہ پزل ہوئی۔۔۔
آپ ۔۔۔جی کے علاوہ بھی کچھ اور کہہ سکتی ہیں۔۔۔
کیا۔۔؟۔۔وہ بے اختیار بولی
مثلًلا ۔۔۔۔آپ مجھے۔۔۔۔۔۔۔۔وہ رُکا
نن۔۔۔۔نہیں۔۔۔۔۔مجھے۔۔۔۔۔مجھے کچھ نہیں کہنا۔۔۔۔فارہ گھبرائی۔۔۔۔عائش نے بھی کچھ اسی طرح کے الفاظ کہے تھے اور پھر۔۔۔۔۔۔۔۔
فارہ کا د ل کانپا۔۔۔۔وہ فورًا ہاتھ چُھڑوا کر دور ہٹی۔۔۔۔۔
داؤد اُسکی حرکت پر حیران ہوا
ریلیکس فارہ۔۔۔۔آپ گھبرائیں نہیں۔۔۔۔کچھ بھی آپکی مرضی کے خلاف نہیں ہو گا۔۔۔داؤد یہی سمجھا شاید وہ اس کی نزدیکی سے گھبراگئی ہے۔۔۔۔
اینی وے۔۔۔آپ چینج کر کے ریلیکس ہو جائیں ۔۔۔میں آپ کو ہر گز تنگ نہیں کروں گا۔۔۔۔داؤد کے ہونٹوں پر مدھم مسکراہٹ دیکھ کر فارہ نظریں جھکا گئی۔۔۔
داؤد اُٹھا اور کمرے سے باہر چلا گیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ کمرے میں واپس آیا یا نہیں فارہ کچھ نہیں جان سکی۔۔۔۔وہ چینج کرکے لیٹی ہی تھی کہ پتہ نہیں کیسے اُسکی اتنی جلدی آنکھ لگ گئ اور اب سارہ کے جگانے پر جاگی تھی۔

فارہ۔۔۔اُٹھ جاو ۔۔تمہارے گھر والے آئے ہیں ناشتہ لے کر اس لیے جلدی سے فریش ہو کر آ جاؤ۔۔
جی۔۔۔۔میں آتی ہوں۔۔۔۔
فارہ حیران ہو رہی تھی اتنی گہری نیند ۔۔۔۔وہ بھی مجھے۔۔۔۔؟؟اب ایسی نیندکہاں تھی اُسکی قسمت میں۔۔۔جب سے ڈائیورس ہوئی تھی۔۔فارہ کہاں سو سکی تھی چین کی نیند ۔۔۔اور آج اتنے عرصے بعد وہ بھرپور نیند لے کر اُٹھی تھی۔۔اسی لیے فریش تھی

فارہ کی بچی اُٹھ جاو اب۔۔۔۔کیا ساری رات جاگی ہو۔۔۔؟؟؟رمشا شریر ہوئی
رمشا پتہ نہیں کب روم میں آئی فارہ کو اپنی سوچوں میں پتا ہی نہ چلا
بھابھی آپ۔۔۔۔۔۔۔وہ چونکی
جی۔۔۔بلکل۔۔۔۔تم کسی اور کا انتظار کر رہی تھی کیا۔۔؟؟۔۔۔رمشا نے پلکوں کواوپر کو حرکت دے کر پوچھا۔۔۔۔
بھابھی فضول باتیں مت کریں۔۔۔۔۔وہ روب سے بولی
فضول ہیں تو اہم باتیں تم ہی بتا دو۔۔۔رمشا نے اُسکے گلے میں بانہیں ڈالیں
اووف ۔۔۔بھابھی۔۔چھوڑیں۔۔۔چھوڑیں ناں۔۔۔۔پیچھے ہٹیں۔۔۔فارہ خود کو چھڑوانے لگی
رمشا کا قہقہ بلند ہوا۔۔۔۔
کیا ہوا۔۔ ؟فارہ حیران ہوئی
وہ۔۔۔اصل میں ۔۔۔میں بھی تمہارے بھائی کو ایسے ہی کہتی ہوں۔۔۔۔رمشا پھر سے ہنسنے لگی۔۔۔
اللًہ ۔۔۔۔بھابھی کس قدر بے شرم ہیں آپ۔۔۔فارہ سرخ ہوئی
اوئی ماں ۔۔۔۔۔تم تو ایسے بلش کر رہی جیسے کے میں داؤد ہوں
بھابھی۔۔۔۔۔۔۔
جی جانِ بھابھی۔۔۔اک ادا سے کہا گیا
اوففففف۔۔۔۔جائیں یہاں سے میں آ رہیں ہوں۔۔وہ چڑی
فارہ سن۔۔۔۔فارہ جلدی سے واش روم میں بند ہوئی۔۔کہ کہیں وہ کوئی اورگل افشانی نہ کر دے۔۔۔
بڑی بدتمیز ہو گئی ہو ایک ہی رات میں۔۔۔خیر بیٹا۔۔چھوڑنے والی تو میں بھی نہیں۔۔رمشا نے ہا تھ جھاڑے اور باہر آ گئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

فارہ ناشتے کے بعد سجاد ہاؤس آ گئی تھی۔۔۔شام کو واپس جانا تھا۔۔۔اور وہ ہر ممکن طریقے سے رمشا سے بچ رہی تھی ۔۔۔۔
بھابھی نے اگر کچھ پوچھا تو کیا بتاوں گی میں۔۔۔۔۔؟؟ 
داؤد نے تو کوئی گفٹ بھی نہیں دیا۔۔۔۔جو دیکھا کر انہیں مطمعین کر دوں۔۔۔پتہ نہیں اب کیا لکھا ہے میری قسمت میں۔۔۔۔وہ روہانسی ہوئی
فارہ بیٹا ۔۔۔اس طرح کیوں بیٹھی ہو۔۔۔فائز اُسے گم سم دیکھ کر اُسکی طرف آیا۔۔
کچھ نہیں بھائی۔۔۔۔وہ بمشکل مسکرائی
داؤد کب آ رہا ہے لینے۔۔۔؟
پتہ نہیں ۔۔میری بات نہیں ہوئی اُن سے۔۔۔فارہ بہت ہلکی آواز میں بولی جو مشکل سے فائز سن سکا۔۔۔
تو کرو بات۔۔۔فون کر کے پوچھو۔۔۔۔شام تو ہو چکی ہے۔۔۔۔داؤد کی سسٹر کا ولیمہ بھی تو ہے رات کو۔۔۔۔۔
جج۔۔۔جی۔۔۔۔۔
فارہ کیسے کرتی فون نمبر ہی نہ تھا داؤد کا اُس کے پاس۔۔۔۔۔
فائز نے اُسے ہنوز بیٹھے دیکھا تو بولا
یہ لو فون اور کال کرو۔۔۔اُس نے اپنا سیل بڑھایا۔۔۔
میرے پاس نمبر نہیں ہے بھائی۔۔۔۔۔وہ منمنائی
میرے سیل میں سیو ہے ۔۔۔کر لو کال اور نمبر بھی لے لو ہاں۔۔۔۔فائز نے اُسکا سر تھپکا اور چلا گیا۔۔۔۔
فارہ سوچنے لگی کہ کال کر کے۔۔۔کیسے اور کیا کہنا ہے۔۔۔وہ اسی کشمکش میں تھی کہ کرے۔۔۔نا۔۔۔کرے۔۔۔
کہ ملازم نے بتایا کہ داؤد صاحب آئے ہیں 
اُس نے شکر کیا۔۔۔بچ گئی اور امی کوبتانے چل دی۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عائش کو جب سے فارہ کی رخصتی کا پتہ چلا تھا ۔۔۔۔وہ سولی پر لٹکا ہوا محسوس کر رہا تھا خود کو۔۔۔کسی پل چین نہیں تھا اُسے ۔۔عجیب مجنوں کی سی حالت ہو گئی تھی۔۔۔۔
مسز سکندر اُسکی حالت دیکھ کر بہت پریشان سی بیٹھیں تھیں
کیا ہوا بیگم اسطرح کیوں بیٹھیں ہیں۔۔سکندر صاحب بھی لاونج میں آئے
میں۔۔۔۔
جی آپ۔۔۔۔
وہ میں عائش کی وجہ سے پریشان ہوں آپ نے دیکھا کیا حالت ہو چکی ہے اُسکی۔۔۔۔۔
اپنی وجہ سےہی بنی ہے یہ حالت آپکے لاڈلے کی۔۔۔۔وہ طنزیہ ہوئے
بس کر دیں سکندر۔۔۔معاف کر دیں اُسے۔۔۔وہ رونے لگیں
آپ کیوں رو رہی ہیں۔۔۔میرے خیال میں بلکل ٹھیک ہو رہا ہے اُسکے ساتھ۔۔۔۔
سکندر پلیز۔۔۔وہ بیٹا ہے ہمارا۔۔۔
جانتا ہوں۔۔۔۔اور بیٹا جو کر چکا وہ بھی ازبر ہے مجھے۔۔۔۔۔وہ خفا ہوئے
وہ پچھتا رہا ہے۔۔۔۔۔وہ ہمایتیں ہوئیں
اب کیا فائدہ ۔۔؟؟؟۔۔بہرحال۔۔۔۔آپ اُسے بہلا پھسلا کر اسلام آباد بھیج دیں میں رامش سے کہتا ہوں سنبھال لے گا اُسے۔۔۔۔۔۔
جو بھی تھا وہ باپ تھے ظاہر نہیں کرتے تھے تو کیا ہوا۔۔۔۔ پر اُسکےلیے فکر مند ضرور تھے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

فارہ تانیہ( چھوٹی نند) کے ولیمے پر جانے کو تیار ہو رہی تھی جب داؤد کمرے میں داخل ہوا
فارہ ہچکچائی۔۔مگر مصروف رہی
آپ تیار نہیں ہوئیں اب تک۔۔۔؟؟۔وہ پاس آیا
جی۔۔۔۔وہ میں بس تیار ہی ہوں
داؤد نے اُسکے پیچھے کھڑے ہو کر آئینے میں اُسکا سرتا پا جائزہ لیا۔۔
فارہ کنفیوز ہوئی۔۔۔۔
فارہ۔۔۔ ایک بات پوچھوں آپ سے۔۔۔؟۔۔۔اجازت مانگی گئی۔۔
جی۔۔۔۔۔
آپ خوش ہیں اس شادی سے یا پھر۔۔۔۔۔؟؟ 
فارہ نے جلدی سے بات کاٹی
میں خوش ہوں ۔۔۔آپ پلیز کچھ غلط مت سوچیں ۔۔فارہ نے بات کلئیر کی
او-کے۔۔۔۔
وہ پلٹا اور الماری کیطرف بڑھا ۔۔۔وہاں سے کچھ نکال کر واپس فارہ کی جانب آیا
یہ ۔۔۔۔۔آپ کا گفٹ۔۔۔۔۔ڈِبہ بڑھایا گیا
یہ۔۔۔۔یہ کیا۔۔۔۔؟؟؟۔۔۔۔وہ پھر سےگھبرائی
یہ آپکی منہ دیکھائی
مم۔۔۔۔میری منہ دیکھائی۔۔۔۔فارہ یوں بولی جیسے حواس میں نہ ہو
آر یو او-کے فارہ۔۔۔داؤد نے کندھے پر ہاتھ رکھا

جج۔۔۔جی۔۔۔میں۔۔۔میں ٹھیک ہوں۔۔وہ ہکلائی
داؤد اُسکی بار بار کی گھبراہٹ سے کھٹک رہا تھا کہ کوئی نہ کوئی مسلہ ہے ضرور۔۔۔
آپ یہ کھول کر دیکھائیں۔۔۔۔فارہ سہمی سی بولی
داؤد مسکرایا۔۔۔ سہمی سی فرمائش پر۔۔۔۔۔
ڈبہ کُھلا۔۔۔اندر ایک خوبصورت سا گولڈ کا لاکٹ تھا۔۔۔۔۔۔چین کے پینڈٹ میں" اللّہ "لکھا جگمگا رہا تھا
فارہ یہ دیکھ کر پرسکون ہونے کیساتھ خوش بھی ہوئی۔۔۔۔۔بلا شبہ وہ بہت خوبصورت لاکٹ تھا
پہنا دیں۔۔۔۔۔فارہ بے ساختہ بولی
داؤد پھر سے کی جانے والی فرمائش پر کُھل کر مسکرایا
اووو-کے۔۔۔۔
فارہ کے بال ہٹائے اور بہت احتیاط سے لاکٹ پہنا دیا۔۔۔
تھینک یو۔۔۔۔وہ ہلکا سا مسکرائی
مائی پلئیر۔۔۔وہ دل پر ہاتھ رکھ کر جھکا
فارہ مسکرائی اُسکی حرکت پر
فارہ کو مسکراتے دیکھ کر داؤد کو اطمینان ہوا
چلیں۔۔۔۔وہ بولی
جی ضرور۔۔۔۔
آگے، پیچھے ہوتے ہوئے وہ دونوں جانے کے لیے نکل گئے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مسز سکندر نے عائش کو اسلام آباد جانے کو راضی کر لیا تھا۔۔۔۔
عائش جانے سے پہلے باپ کو منانا چاہتا تھا اسی لیے وہ سکندر صاحب کے پاس، آیا تھا
بابا۔۔۔میں اسلام آباد جا رہا ہوں
جاؤ۔۔۔۔روکھا سا جواب ملا
بابا۔۔مجھے معاف کردیں۔۔۔میں جانتا ہوں میں غلط تھا۔۔میری فضول حرکت سے ناجانے کتنے دل ٹوٹے تھے۔۔۔
بابا۔۔۔میں اُن سب دلوں کو توڑنے کی سزا بھگت رہا ہوں۔۔۔۔۔وہ بھاری آواز میں بولا
سکندر کے دل کو کچھ ہوا ۔۔ وہ آج براہ راست بیٹے کی یہ حالت دیکھ رہے تھے
عائش نے باپ کو خاموش دیکھا تو فورًا اُنکے قدموں میں جھک گیا۔۔۔۔اور تب ہی اُٹھا جب سکندر صاحب نے اُسے معاف کر دیا۔۔
عائش کے دل پر دھرے بوجھ میں معمولی سی کمی آئی تھی۔۔۔۔
ابھی اور بھی بہت سے لوگوں سے معافی مانگنا باقی تھا۔۔۔
اپنے دل کے بوجھ کو کم کرنے کیلیئے۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

فارہ کی شادی کو دو ماہ سے اوپر ہو گئے تھے۔۔وہ کافی حد تک داؤد کے گھر اور فیملی میں ایڈجسٹ ہو چکی تھی۔۔
داؤد واقعی ایک اچھا اور سُلجھا ہوا انسان تھا۔۔۔۔
فارہ نے اُسے اپنے معاملے میں نہ تو زیادہ رومینٹک پایا۔۔۔۔اور نہ ہی لاپروہ۔۔۔۔۔۔
وہ بہت ہی معتدل پرسنیلٹی کا مالک تھا ہر چیز کو ایک حد میں رکھتا۔۔۔۔اُسے عشق صرف ایک ہی چیز سے تھا۔۔۔۔اور۔۔۔وہ۔۔۔۔تھیں کتابیں۔۔۔۔
اُسے بُکس فوبیا تھا۔۔۔
اور اکثر فارہ چڑتی تھی اُسکی عادت پر۔۔۔مگر خوشی بھی تھی کہ داؤد کے پاس علم کا ایک وسیع ذخیرہ تھا۔۔۔وہ ہر ٹاپک پر بڑی آسانی سے بات کرتا اور اپنے پُراثر اور مدلل انداِز گفتگو سے دوسروں کو قائل کرنا جانتا تھا۔

اب بھی وہ مطالعے میں مصروف تھا۔۔۔فارہ نے گھڑی کو دیکھ کر سوچا۔۔۔
پتہ نہیں کیسے یہ اپنی نیند پوری کرتے ہیں اور صبح کو فریش سے آفس بھی چلے جاتے ہیں۔۔۔۔
۔۔
وہ آخرکار کوفت کا شکار ہو کر پوچھ بیٹھی
صبح آفس نہیں جانا کیا۔۔۔۔؟؟
آپ جاگ رہیں ہیں اب تک۔۔۔میں سمجھا شاید سو چُکیں ہیں۔۔
آپ نے لائٹ جلا رکھی ہے اور مجھے لائٹ میں نیند نہیں آتی۔۔۔وہ چڑچڑا سا بولی
داؤد اُسکی بات سن کر مسکرایا۔۔۔اووہ سوری میں بھول گیا تھا
روز ہی بھول جاتے ہیں۔۔۔کوئی نئی بات نہیں۔۔۔وہ ابھی بھی خفا سی تھی
داؤد کے چہرے پر اُسکی شکایت سن کر مسکراہٹ گہری ہوئی
بہت سی شکایات ہیں مجھ سے۔۔۔؟وہ مسکراتا ہوا پاس آیا
تو کیا نہیں ہونی چاہیں۔۔؟معصومیت سے پوچھا گیا
ضرور ہونی چاہئیں۔۔۔۔۔لیکن ساتھ ساتھ نشاندہی بھی۔۔۔۔وہ فارہ کا ہاتھ پکڑ چکا تھا
آپ اتنی کم نیند لے کر خود کی روٹین کو کیسے مینج کرلیتے ہیں۔۔۔داؤد۔۔۔۔۔ایک اور معصومانہ سوال ہوا
اوہ۔۔تو آپ میرے لیے فکر مند ہیں۔۔۔؟
جی نہیں۔۔۔۔فارہ اُسے مسکراہٹ روکتے دیکھ چکی تھی اسی لیے جلدی سے بولی
تو ہوا کریں نا فکر مند ۔۔۔۔مجھے اچھا لگے گا۔۔فرمائش کی گئی
اچھا اب سو جائیں آپ۔۔۔ٹائم کافی ہو چکا ہے اور صبح آفس بھی جانا ہےآپکو۔۔۔فارہ اُسکی بدلتی نظروں سے گھبرا کر بولی۔۔

اب تو نیند آنا مشکل ہے۔۔۔آپ ہمیں ڈسٹرب کر چکیں ہیں۔۔۔داؤد نے فارہ کو بازؤں کے گھیرے میں لیا۔۔۔
داؤد۔۔۔پلیز۔۔۔۔۔۔وہ منمنائی
نو مور پلیززز۔۔۔۔اٹس آور ٹائم۔۔۔۔وہ گھمگھیر لہجے میں بولا اور فارہ پر جھک گیا۔۔

فارہ کی ان موقعوں پر عجیب سی کیفیت ہوتی تھی۔۔۔۔جب وہ دور ہوتا تو چڑچڑی ہو جاتی۔۔۔۔۔ اور جب پاس ہوتا تو دور ہٹنا چاہتی۔۔وہ خود بھی اپنی کیفیت کو کوئی نام نہ دے سکی۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

فارہ کو کچھ دنوں سے اپنی طبیعت گِری گِری سی محسوس ہو رہی تھی۔۔۔۔۔
وہ جو سوچ رہی تھی اگر ویسا ہی تھا۔۔۔۔۔ تو تصدیق چاہ رہی تھی۔۔
اسی مقصد کے لیے اُسنے رمشا کو فون کر کے بُلایا تھا۔۔۔
اکیلے جانے کا تو سوال ہی پیدا نہ ہوتا وہ بھی ایسی بات کے لیے۔۔۔۔
اس وقت وہ دونوں ڈاکٹر کے انتظار میں بیٹھیں تھیں ۔۔۔۔جو رپورٹس لے چکی تھی۔۔۔بٹ کنفرم نہیں کیا تھا ابھی۔۔

مسز فارہ داؤد۔۔۔۔نرس کی آواز آئی
میڈم آپ کو ڈاکٹر صاحبہ اپنے روم میں بلا رہی ہیں۔۔وہ قریب آ کر بولی
جی۔۔۔۔فارہ نے کہا
چلیں بھابھی۔۔۔۔رمشا نے سر ہلایا اور دونوں اندر کی جانب بڑھیں
پلیز ۔۔۔ہیو آ سیٹ۔۔۔پروفیشنل مسکراہٹ سے کہا گیا۔۔
تھینکس۔۔۔۔دونوں بیٹھ گئیں
مسز فارہ داؤد۔۔۔۔آپکی شادی کو کتنا عرصہ ہو چکا ہے۔۔۔۔؟؟؟ 
فارہ جھجھکی
تین ماہ۔۔۔۔جواب رمشا نے دیا
ڈاکٹر مسکرائی۔۔۔اُسکی گھبراہٹ پر
ٹینشن کی کوئی بات نہیں ہے۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔شی اِز ایکسپیکٹنگ۔۔۔۔۔چھوٹا سا بم پھٹا تھا۔۔۔۔
اُن دونوں کی نظریں ملیں ۔۔۔۔ایک نظر شرارتی ہوئی۔۔۔۔۔جبکہ۔۔۔۔
دوسری نظر شرم سےجُھک گئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جاری ہے

 
Zubair Khan Afridi Diary【••Novel ღ ناول••】. Zubair Khan Afridi
knowledgemoney