اعتبارِ وفا کون کرے
قسط آخری 

ڈاکٹر نے فارہ کو خوشخبری سنائی تھی۔۔وہ اور رمشا ڈاکٹر کی چند ضروی ہدایات سن کر باہر نکلیں۔۔۔
ہائے فارہ۔۔۔۔۔۔رمشا نے فارہ کے گلے لگ کر دھڑادھڑ اُسکی پپیاں لے ڈالیں
اوف بھابھی۔۔۔پبلک پلیس کا ہی خیال کر لیں ۔۔فارہ نے بمشکل خود کو چھڑوایا
ہائے سچی فارہ۔۔۔۔تم نے خبر ہی ایسی دی ہے کہ میرا دل تو بھنگڑا ڈالنے کو کر رہا ہے
میرا بھی دل بھنگڑا ڈالنے کوکر رہا ہے ۔۔۔۔اسلیئے آپ بھی ایسی ہی خبر سنائیں۔۔۔۔فارہ نے اپنی جھجھک کم کرنے کو اُسکے لتے لیے۔۔۔۔
دی تو تھی پانچ سال پہلے۔۔۔وہ کھکھلائی
پانچ سال پہلے کی فیلینگز بھول گئی ہوں اسلیے نئے سرے سے انتظام کریں۔۔۔ویسے بھی آپ تو آیت کے بعد فُل سٹاپ لگا چکیں ہیں۔۔۔فارہ نے بھرپور طریقے سے بدلہ لیا۔۔۔
اللّہ۔۔۔۔۔فارہ کتنی بے شرم ہوگئی ہو۔۔۔رمشا نے منہ پر ہاتھ رکھ کر حیرانگی ظاہر کی
فارہ مسکرائی۔۔۔۔اچھا یہ مسخرا پن ختم کریں اور چلیں مجھے گھر ڈراپ کر دیں۔۔
تم میرے ساتھ ہی چلو ۔۔۔داؤد کو انفارم کر دو۔۔۔رمشانے مشورہ دیا
نہیں بھابھی۔۔۔میں گھر ہی جاؤں گی۔۔آپ وہیں چھوڑ دیں
او-کے۔۔۔چلو ٹھیک ہے میں گھر جا کر خود ہی سب کو گڈ نیوز سنا دوں گی۔۔۔تمہیں تو ویسے بھی داؤد کو بتانے کی جلدی ہے۔۔۔۔رمشا نے چھیڑا
اچھا بس۔۔۔۔ڈرائیور کا ہی لحاظ کریں کچھ۔۔۔فارہ جھینپی
رمشا نے اُسے اُسکے ہی گھر ڈراپ کیا۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فارہ جب سے گھر آئی تھی یہی سوچے جا رہی تھی کہ داؤد کو کیسے بتاؤں گی۔۔ایک عجیب سی جھجھک آڑے آ رہی تھی
کاغذ پر لکھ کر اسٹڈی ٹیبل پر رکھ دیتی ہوں خود ہی پڑھ لیں گے
نہیں۔۔۔۔بہت پرانا طریقہ ہے
خود ہی ریجیکٹ کیا اس طریقے کو
تو پھر ۔۔۔۔فیس ٹو فیس۔۔۔؟؟؟
نو ۔۔۔نیور۔۔۔بلکل نہیں۔۔کیسے بتاؤں گی آمنے سامنے۔۔۔۔۔
ریجیکٹ۔۔۔۔۔۔
کیا کروں۔۔۔۔۔کیسے۔۔۔۔کیسے۔۔۔؟؟؟وہ بے چینی سے ادھر اُدھر چکر کاٹتے سوچنے لگی۔۔۔۔۔۔۔
ہاں۔۔۔۔یس۔۔۔۔ یہی ٹھیک ہے
بیس منٹ بعد فارہ طریقہ ڈیسائیڈ کر چکی تھی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فائز۔۔۔۔۔
رمشا نے لیپ ٹاپ پر بزی فائز کے پاس بیٹھ کر اُسکے کندھے پر سر رکھا
ہونں۔۔۔۔وہ مسکرایا
آپ ماموں بننے والے ہیں ۔۔۔رمشا نے آج کی بڑی خبر دی
ہاں ۔۔۔امی نے بتایا مجھے۔۔۔
اٹس رئیلی آ گڈ نیوز۔۔۔آئی ایم سو ہیپی فار مائے ڈئیر سِس۔۔۔فائز نے مسکرا کر خوشی کا اظہار کیا۔۔
میں بھی بہت خوش ہوں۔۔فائز
اچھااااااا۔۔۔۔۔۔تو پھر مجھے بھی خوش کر دو۔۔۔وہ مسکرایا
وہ کیسے۔۔۔؟؟؟؟وہ ہونق بنی
فائز نے ہونٹ دانتوں تلے دبا کر مسکراہٹ روکی اور بولا۔۔۔۔۔ماموں تو بننے والا ہوں ۔۔اب باپ بھی بنا دو۔۔۔۔۔
اوف۔۔۔فائز۔۔۔۔رمشا اچھلی
ہاہاہاہا۔۔۔۔فائز نے چھت پھاڑ قہقہ مارا اسکے اچھلنے پر۔۔۔۔
کیوں کچھ غلط کہا میں نے۔۔۔۔وہ معصوم بنا
آپ باپ بن چکے ہیں ۔۔فائز۔۔۔۔رمشا نے اطلاع دی۔۔۔۔۔
ہاہاہا۔۔۔اچھاااااا۔۔۔۔تمہیں آیت کی فرمائش یاد ہے۔۔۔؟؟؟؟وہ ہنسا
رمشا بلش کی۔۔۔پر کمزور نہیں پڑی۔۔۔۔یوں کہیں نہ بیٹی کی آڑ میں بیٹا حاصل کرنے کی خواہش کر رہے ہیں ۔۔۔وہ خفا ہوئی
خواہش تو ہے پر۔۔۔بیٹے کی نہیں۔۔۔نیکسٹ
بے بی کی۔۔۔۔۔اور میرے خیال سے پانچ سال کی ریسٹ کافی ہے۔۔۔۔۔وہ شریر ہوا
اُوف توبہ ہے۔۔۔۔وہ کانوں تک سرخ پڑی
ارے جانِ من کوئی ناجائز خواہش تو نہیں۔۔۔۔۔ جو اتنی سوچ بچار۔۔۔۔فائز نے اُسے جھینپتے دیکھ کر آنکھ ماری
آپ کے پاس تو بیٹھنا ہی فضول ہے۔۔۔وہ باہر کی جانب بڑھی۔۔۔
ہم باپ، بیٹی کی فرمائش پر غور ضرور کرئیے گا ۔۔۔ڈئیر مسز۔۔۔۔فائز نے اُسے جاتے جاتے بھی چھیڑا
رمشا آنکھیں نکال کر باقاعدہ اُسے ڈرا کر باہر نکلی۔۔۔
پیچھے فائز کا قہقہ بلند ہوا اُسکے ڈرانے پر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فارہ نے داؤد کے آنے پر رپورٹس ڈریسنگ پر رکھیں اور خود کیچن میں آگئی۔۔
خوشگوار ماحول میں کھانا کھایا گیا۔۔۔داؤد کھانے کے بعد کمرے میں چلا گیا اور فارہ کیچن میں ۔۔۔۔۔
ہیں۔۔۔۔ انہوں نے تو کوئی خوشی کا اظہار نہیں کیا۔۔۔؟؟وہ حیران ہوئی
فارہ۔۔تم یہاں کیا کر رہی ہو ابھی تک۔۔۔۔ جاؤ سوؤ جا کر۔۔۔۔سارہ نے اُسےکیچن میں دیکھ کر کہا
جی۔۔وہ میں۔۔۔ یہ چائے داؤد کے لیے بنا رہی تھی
اچھا اچھا۔۔۔۔سارہ مسکرائی
فارہ چائے لے کر کمرے میں چلی آئی
ایز یوزئل۔۔۔۔۔۔داؤد کتاب میں مصروف تھا
چائے۔۔۔فارہ نے آگاہ کیا
تھینکس۔۔۔۔۔رکھ دیں۔۔۔داؤد مسکرایا
فارہ نے چائے رکھی اور چور نظروں سے ڈریسنگ کی طرف دیکھا رپورٹس وہاں پڑیں تھیں۔۔
تو کیا داؤد نے ابھی تک دیکھیں ہی نہیں۔۔۔؟؟ لو جی ۔۔۔۔۔اب منہ سے بتانا پڑے گا۔۔۔وہ سوچتی ہوئی بیڈ پر اپنی جگہ پر آ کر لیٹی۔۔
اب۔۔۔۔اب کیا کروں۔۔۔۔۔ان کو تو بس کتابیں نظر آتیں ہیں پتا نہیں اتنا پڑھ پڑھ کر کونسا ریکارڈ بنائیں گے۔۔۔۔وہ دل ہی دل میں کُڑھی

داؤد اُسکی بے چینی محسوس کر چکا تھا۔۔اسی لیے انجان بن کر پوچھا۔۔۔ڈسٹرب ہو رہیں ہیں لائٹ سے۔۔۔۔۔۔پوچھا گیا
نہیں۔۔۔۔۔روکھا جواب آیا
کیوں۔۔۔۔؟؟؟آپ تو ڈسٹرب ہوتیں ہیں۔۔پھر آج کیوں نہیں۔۔۔۔مسکراہٹ دبائی
فارہ نے غصیلی نظر اُس پر ڈالی۔۔۔وہ بھی اُس ہی دیکھ رہا تھا۔۔۔۔فارہ نے جلدی سے نظریں جھکا دیں
وہ مسکراتا ہوا چائے پکڑے پاس آیا۔۔۔اب بتائیں کیا بات ہے۔۔۔؟؟؟؟شرارت سے پوچھا گیا
کوئی بات نہیں۔۔۔۔۔مجھے نیند آ رہی ہے سونے دیں۔۔۔فارہ نے کمبل لینا چاہا
ایک منٹ۔۔۔۔۔داؤد نے کمبل ہٹایا
کیا ہے ۔۔۔۔وہ چیخی
اتنا ایریٹیٹ کیوں ہو رہیں ہیں ۔۔۔میں تو آپ کو یاد کرونا چاہ رہا تھا ۔۔۔شاید آپ نے کچھ بتانا ہے مجھے۔۔۔۔۔؟؟؟
فارہ کو شک ہوا کے وہ جانتا ہے۔۔۔اسیلئے بولی
آپ کا وہم ہے مجھے کچھ نہیں بتانا۔۔اب ہٹیں اور مجھے سونے دیں۔۔۔پلیز
آر یو شیور فارہ۔؟؟؟
جی بلکل۔۔۔وہ بھی ڈھیٹ بنی رہی
او-کے۔۔۔۔لیکن مجھے کچھ بتانا ہے آپ کو۔۔۔۔مسکراہٹ بکھری
کیا۔۔۔۔؟؟۔۔۔۔فارہ ہونق بنی
یہی۔۔۔۔۔۔۔۔ کہ۔۔۔۔۔۔ میں باپ بننے والا ہوں ۔۔۔۔آرام سے انکشاف کیا
اوف۔۔۔فارہ جھینپی۔۔۔کس قدر چلاک ہیں یہ میں تو بھولا ہی سمجھتی رہی اب تک۔۔۔۔۔۔
کیا ہوا۔۔۔۔پسند نہیں آئی خبر۔۔۔۔داؤد نے اُسے خاموش دیکھ کر پوچھا
مم۔۔۔۔۔مجھے تنگ مت کریں۔۔۔۔ داؤد
ہاہاہاہا۔۔۔۔۔۔داؤد نے بے ساختہ قہقہ مارا
فارہ نے پہلی دفعہ اُسے اسطرح ہنستے دیکھا تھا۔۔۔۔اُس نے نظریں چرا لیں کہیں لگ ہی نہ جائے
پر وہ بیچاری یہ نہیں جانتی تھی کہ نظر تو لگ چُکی۔۔۔اُسکی قسمت کو پھر۔۔۔۔۔ ایک بار
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عائش آج بہت ہمت کر کے سجاد صاحب کے آفس آیا تھا۔۔۔چچا سے معافی مانگنے۔۔۔۔۔
فائز کسی ایمپلائی کے کیبن میں کھڑا تھا کہ وہاں سے عائش کو گزرتے دیکھا۔۔۔۔رمشا کی زبانی اُسکی واپسی کا پتہ چل چکا تھا
وہ ۔۔۔اُسکے پیچھے لپکا ۔۔۔۔جو سجاد کے آفس کی طرف بڑھ رہا تھا۔۔۔فائز اُسے روکنا چاہتا تھا تاکہ اُسکے کیے پر اُس کا گریبان پکڑ سکے۔۔۔۔اُسے لعن طعن کر سکے ۔۔۔۔اُسے سزا دے سکے۔۔۔۔۔مگر فائز راستے میں رُک گیا۔۔۔۔

اُسے روکنے والی عائش کی شکستہ چال، لڑکھڑاتے قدم، اور گِرتی ہوئی صحت تھی
فائز نے پہلے کبھی اُسے ایسی حالت میں نہیں دیکھا تھا ۔۔۔۔۔وہ تو ہمیشہ ٹین شین رہتا تھا۔۔۔۔ایک دنیا دیوانی تھی اُسکی ڈریسنگ کی اُسکی پرسنیلٹی کی۔۔۔۔اور اب۔۔۔۔۔۔
فائز کو احساس ہو گیا تھا کہ عائش اپنے کیے کی سزا بھگت رہا ہے ۔۔۔اسلیئے اُس نے مزید شرمندہ کرنا مناسب نہ سمجھا۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سجاد صاحب بزی تھے۔۔۔۔۔اُسکے آفس میں داخل ہونے پر متوجہ ہوئے۔۔۔۔
اُن کا لکھتا ہاتھ ساکت ہو چکا تھا۔۔۔۔۔اُنکی بیٹی کا مجرم۔۔۔۔اُن کا مجرم۔۔۔۔۔اُنکے خاندان کا مجرم سامنے کھڑا تھا
عائش نے جھجھکتے ہوئے سلام کیا
جسکا کوئی جواب نہ ملا
وہ ابھی بھی ساکت بیٹھے تھے
چچ۔۔۔۔۔چچا جان۔۔۔۔۔ہمت کر کے آغاز کیا
مم۔۔۔میں آپ سے معافی مانگنے آیا ہوں۔۔۔چچا جان
کیوں ۔۔۔۔۔۔؟؟؟؟معافی کس بات کی تم نے کونسا کوئی غلط کام کیا تھا جو معافی مانگنے آئے ہو۔۔۔۔۔۔وہ طنزیہ ہوئے
میں شرمندہ ہوں ۔۔۔۔۔عائش نے سر جھکا رکھا تھا
شرمندہ ہو نے کا کیا فائدہ جو کر چُکے وہ لوٹ نہیں سکتا اب۔۔۔۔۔۔وہ شکستہ سا بولے
چچاجان پلیز ۔۔۔۔مجھے۔۔۔مجھے معاف کر دیں عائش اُنکی چئیر کے پاس نیچے بیٹھ گیا
عائش میں نے تمہیں معاف کر دیا ہے تم میرے بھائی کے بیٹے ہو میں تم سے ناراض نہیں ہوسکتا۔۔۔۔مگر تم نے میری لاڈلی بیٹی کے ساتھ جو کیا وہ بھولنا آسان نہیں۔۔۔۔لیکن پھر بھی۔۔۔۔۔۔میں بھولنے کی کوشش کروں گا۔۔
تم اوپر بیٹھو عائش۔۔میں نے کبھی بھی تمہیں فائز سے کم نہیں سمجھا۔۔۔۔۔وہ آہستہ سے بولتے ہوئے کھڑے ہوئے
چچا جان ۔۔۔۔۔آپ۔۔۔۔۔وہ رو پڑا
عائش۔۔۔۔۔۔انہوں نے اُٹھ کر اُسے سینے سے لگا لیا۔۔۔۔۔۔۔
عائش چچا کی فراخ دلی پر دل سے مشکور تھا اُن کا۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آج فارہ ۔۔۔داؤد کیساتھ شاپنگ پر نکلی تھی شادی کے بعد پہلی دفعہ۔۔۔۔۔
داؤد نے اُس کے منع کرنے کے باوجود بہت سی شاپنگ کروا دی تھی
اب وہ دونوں ایک مہنگے ریسٹورینٹ میں ڈنر کے لیے بیٹھے تھے
داؤد کو کوئی دوست نظر آیا تو وہ فارہ کو دس منٹ کا کہہ کر اُس طرف چلا گیا۔۔۔۔
فارہ اکیلی بیٹھی ادھر اُدھر نظر دوڑانے لگی۔۔۔کافی رش تھا وہاں۔۔۔۔۔۔ آج شاید ویک اینڈ ہے اس لیے۔۔۔فارہ نے سوچا
کتنی دیر ہو چکی ہے داؤد اب آ بھی جائیں میں تھک چکی ہوں ۔۔۔۔وہ ہمکلام تھی
اسی اثنا میں اُسکی نظر دائیں طرف گئی اور ساکت ہو گئی
وہاں۔۔۔۔اُس طرف وہی دشمنِ جاں بیٹھا تھا ۔۔۔۔جو فارہ کے دل پر بلا جھجھک حکومت کرتا آیا تھا۔۔۔۔
فارہ کے احساسات ایک دم سے پہلے جیسے ہوئے۔۔۔۔فارہ اپنی غیر ہوتی حالت پر گھبرائی ۔۔۔۔یہ ۔۔۔۔یہ کیا ہو رہا ہے ۔۔۔ مجھے میں تو بھول چکی تھی اسے۔۔۔ پھر اب کیوں۔۔۔؟؟؟ میرا دل۔۔۔۔۔۔میرا دل بے قابو ہو رہا ہے۔۔۔
نن۔۔۔نہیں ۔۔۔مم۔۔۔۔مین داؤد کی بیوی ہوں اور اُسی سے محبت کرتی ہوں ۔۔۔۔ہاں میں داؤد سے محبت کرتی ہوں۔۔۔۔وہ خود کو باور کروا رہی تھی۔۔۔۔
فارہ چاہ رہی تھی کہ وہ اونچی آواز میں چلا کر سب کو بتائے کے وہ صرف داؤد سے محبت کر تی ہے۔۔۔۔ پر ۔۔۔۔اُسکی زبان اور دل اس بات سے انکاری تھے
اتنے میں مقابل کی نظر بھی پڑ چکی تھی۔۔۔۔عائش حیرت سے اُسے اسطرح ٹکٹکی باندھے دیکھ رہا تھا ۔۔۔۔جیسے وہ فارہ نہیں اس کا الوژن ہے ۔۔۔جو اُسے ہر طرف نظر آتا تھا۔۔۔

فارہ اُسکا دیکھنا محسوس کر چکی تھی اسی لیے فورًا پرس اٹھا کر باہر کی جانب بڑھی۔۔۔۔

۔عائش کی تو دنیا ہی اندھیر ہو چکی تھی وہ نظر آئی تھی اتنے کم وقت کے لیےاور وہ اُسے دل بھر کر دیکھ بھی نہیں پایا تھا کہ وہ غائب ہو چکی تھی۔۔۔عائش ٹیبل پر سر جھکا کر لمبی لمبی سانسیں لینے لگا جیسے خود کو زندہ رکھنا چاہتا ہو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آر یو او-کے فارہ۔۔۔۔۔۔۔داؤد فکر مند سا بولا
جج۔۔۔۔جی۔۔۔۔۔۔
کیا ہوا ہے ۔۔۔طبیعت خراب تھی تو ہمیں ڈاکٹر کے پاس جانا چاہیئے تھا اور آپ زبردستی گھر لے آئیں ہیں۔۔۔۔۔
(فارہ نے باہر آ کر داؤد کو ٹیکسٹ کر کے بُلا لیا تھا کہ طبیعت خراب ہے۔۔۔ جلدی آئیں گھر جانا ہے اور راستے میں داؤد کے کہنے کے باوجود ڈاکٹر کے پاس نہیں گئی تھی) 
میں ٹھیک ہوں داؤد۔۔۔وہ بمشکل مسکرائی
آپ پریشان مت ہوں ۔۔۔۔میرا بس دل گھبرا گیا تھا۔۔۔ وہاں بہت کراؤڈ تھا شاید اس لیے ۔۔۔۔
فارہ نے اُسکا ہاتھ پکڑ کر تسلی دی۔۔۔ جو اب بھی بے یقین سا اُسے ہی دیکھ رہا تھا
داؤد۔۔۔۔۔۔۔فارہ نے اُسے ہلایا
او-کے فائن۔۔۔۔لیکن آپ اپنا خیال رکھا کریں فارہ پلیز۔۔۔۔۔آپ اکیلی نہیں ہیں۔۔۔ ایک اور وجود کی ذمہ داری بھی ہے آپ پر ۔۔۔۔۔۔وہ سنجیدہ سا بولا
میں جانتی ہوں۔۔۔۔اور خیال بھی رکھتی ہوں داؤد ۔۔۔۔آپ پریشان مت ہوں پلیزز۔۔۔۔فارہ اپنے دل کی حالت کے بر خلاف اُسے ریلیکس کر رہی تھی۔۔۔۔حالانکہ۔۔۔۔۔ریلیکسیشن تو اُسے۔۔۔۔اُسکے 
دل ودماغ کو چاہیے تھی۔۔۔۔
داؤد نے اُسکی بات سن کر سر ہلایا اور واش روم کی جانب بڑھ گیا چینج کرنے۔۔
پیچھے فارہ اپنے دل کی دھڑکن کو قابو کرنے لگی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عائش ساری رات بے مقصد سڑکوں پر گاڑی دوڑاتا رہا۔۔۔۔وہ جِسے دیکھنے کو ترس گیا تھا چند منٹ کا دیدار کرا کر ۔۔۔۔ناجانے کہاں چلی گئی تھی۔۔۔فارہ۔۔۔۔۔فارہ ۔۔۔۔کہاں ہو تم پلیز ایک بار۔۔۔بس ایک بار ۔۔۔۔میرے پاس آ جاؤ۔۔۔۔ خدا کی قسم۔۔۔۔ فارہ تمہیں کھبی اوف بھی نہیں کہوں گا ۔۔۔بس ایک بار۔۔۔۔۔۔سٹئیرنگ پر سر رکھے اونچی آواز میں روتے ہوئے یہی باتیں دہراتا رہا ساری رات۔۔۔۔۔۔
صبح فجر کے وقت گھر داخل ہوا۔۔۔مسز سکندر جو اُسی کے انتظار میں تھیں فوًرا عائش کی جانب لپکی۔۔۔۔۔۔۔
کہاں تھے تم ساری رات اور یہ کیا حالت بنا رکھی ہے۔۔؟؟۔۔۔وہ پریشان ہو اٹھی
ماں پلیز۔۔۔۔۔۔مجھے روم میں جانے دیں آپکی کسی بات کا جواب نہیں ہے میرے پاس پلیززززز ۔۔۔۔وہ ملتجی ہوا
ٹھیک ہے جاؤ۔۔۔۔۔۔مسز سکندر نے بھاری دل کے ساتھ اجازت دی
عائش نے روم میں آتے ہی سیگرٹ ،لائٹر اُٹھایا اور دھڑادھڑ سیگرٹ پر سیگرٹ ختم کرنا شروع کر دی۔۔۔۔ یہاں تک کہ ساری ڈبیاں ختم کر چکا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فارہ، داؤد کو تو مطمعین کر چکی تھی پر خود کا دل قابو میں نہیں آ رہا تھا۔۔۔۔۔۔اُس نے داؤد سے سجاد ہاؤس جانے کی اجازت لی اور اب پچھلے دو دن سے یہاں تھی
اسوقت وہ ٹیرس پر کھڑی تھی۔۔۔۔اس دشمنِ جاں کی ایک جھلک نے ہی سارے بنائے بندھوں کو توڑ دیا تھا۔۔۔۔۔وہ کیا کرتی۔۔۔بلکل بے بس ہو چکی تھی۔۔۔۔
میں تو سمجھی تھی ۔۔۔۔۔کہ تمہیں بھول چکی ہوں پر تم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آنسو پونچھے
اب۔۔۔اب تو سکون سے رہنے دو ۔۔۔کیوں پھر سے آ گئے ہو عائش۔۔۔کیا بگاڑا ہے میں نے تمہارا جسکی سزا ختم نہیں ہو رہی۔۔۔ خدا کے لیے عائش میرے دل ودماغ سے نکل جاؤ ۔۔۔۔نکل جاؤ۔۔۔وہ روتی ہوئی زمین پر بیٹھ گئی
دل کی بھڑاس آنسوؤں کے ذریعے نکال کر وہ اٹھی۔۔۔ وضو کیا اور جائے نماز پر بیٹھ گئی ۔۔۔اب وہ اپنے رب کے حضور سجدہ ریز تھی

یا میرے مالک۔۔۔مجھے معاف کر دے میرے گناہوں کو بخش دے۔۔۔میرے مولا۔۔۔۔۔میں کسی کی بیوی ہوں ۔۔۔۔اپنے وجود میں اپنے شوہر کی نشانی پال رہی ہوں۔۔۔
میرے مالک۔۔میرے دل کو بھی میرے شوہر کی محبت سے آباد کر دے۔۔۔۔
وہ شخص میرے مقدر میں نہیں ۔۔۔میرے رب مجھے اُسکو بھولنے کی توفیق دے دے ۔۔۔میرے۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ سجدے کی حالت میں ہچکیوں میں روتے ہوئے اپنے رب سے اپنے دل کی آزادی کی بھیک مانگ رہی تھی۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سجاد ہاؤس میں سنڈے کے دن دیر سے ناشتہ کیا جاتا تھا
اسیلیئے آج سب لیٹ اُٹھے تھے اور اس وقت ڈائنگ ٹیبل کی رونق بڑھا رہے تھے
فارہ بھی یہیں تھی۔۔۔سب خوش گپیوں کے درمیان ناشتہ کر رہے تھے۔۔۔ کہ فون کی گھنٹی بجی۔۔۔۔۔
فارہ کے ہاتھ سے چائے چھلکی۔۔۔
سنبھل کے فارہ بیٹا ہاتھ پر مت گرا لینا۔۔۔۔راحیلہ فکر مند ہوئیں
میں دیکھتا ہوں۔۔۔فائز فون کی جانب بڑھا۔۔۔فارہ بھائی کی طرف ہی دیکھ رہی تھی اُسکا دل ناجانے کیوں دھڑکنے لگا تھا کہ ۔۔۔۔۔۔۔
فائز عجلت میں فون سن کر آیا۔۔۔۔۔۔ڈیڈ ۔۔۔ہمیں ہوسپٹل چلنا ہے جلدی کریں
کیا ہوا فائز کس کا فون تھا۔؟؟۔۔راحیلہ نے دل پر ہاتھ رکھا
ماں۔۔۔۔وہ۔۔۔فائز نے ایک نظر بہن کی بدلتی رنگت پر ڈالی اور آہستگی سے بولا۔۔۔
داؤد کا ایکسیڈینٹ ہو گیا ہے۔۔۔۔
کیا۔۔۔۔کب۔۔۔۔۔کہاں۔۔۔۔۔کیسے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سب اپنی اپنی بولیاں بولنے لگے
فارہ خاموش تھی یوں جیسے ۔۔۔۔وہاں ہو ہی نہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فارہ ۔۔۔۔۔۔۔فارہ۔۔۔۔چلو ۔۔۔۔فائز کہہ رہے ہیں جلدی کرو ہمیں ہوسپٹل جانا ہے۔۔رمشا نے اُسے ہلایا
بھا۔۔۔۔بھی۔۔۔۔۔دا۔۔۔۔۔۔داؤد
وہ ٹھیک ہو گا ان شا اللّہ۔۔۔۔تم اٹھو ۔۔۔۔چلیں
رمشا نے اُسکا ہاتھ پکڑ کر اٹھایا اور باہر کی جانب بڑھی۔۔۔
فارہ بھی اُسکے ساتھ ہی گھسیٹی چلی گئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نن۔۔۔۔۔۔۔نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔ایسا نہیں ہو سکتا
داؤد۔۔۔۔آپ نہیں جا سکتے مجھے چھوڑ کر ۔۔۔۔۔ہمارا بچہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
امیّ ی ی ی امیّ۔۔۔۔۔۔۔۔ فارہ چلا رہی تھی۔۔۔ رو رہی تھی وہ حواسوں میں نہیں تھی۔۔۔ جب سے داؤد کی ڈیڈباڈی گھر آئی تھی فارہ مسلسل یہی الفاظ دہرا رہی تھی

ڈاکٹر کو بلایا گیا جو اُسے سکون آور انکجیکشن دے کر چلا گیا
ہر آنکھ اشک بار تھی۔۔۔۔ ہر دل دکھی تھا۔۔۔۔یہ کیا ہو گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔
اور کتنی اذیتیں لکھیں تھیں سجاد ہاؤس کے مکینوں کے نصیب میں۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فارہ کو ہوش آیا تو وہ بیڈ پر تھی۔۔۔۔ اکیلی۔۔۔۔ داؤد نہیں تھا اُسکے ساتھ۔۔۔۔۔
داؤد۔۔۔۔ فارہ کے منہ سے سسکاری نکلی۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ سسکنے لگی
اُسکی قسمت پھر سے دغا دے گئی تھی۔۔۔۔ وہ پھر سے لُٹ چکی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔آہ۔۔۔۔۔۔۔یہ۔۔۔۔۔قسمت
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فارہ لُٹی پُٹی سی ایک بار پھر سجاد ہاؤس واپس آ گئی تھی
اسُے یہاں آئے ہوئے ایک ہفتہ ہو چکا تھا۔۔۔۔مگر زخم ابھی بھی تازہ تھا
سجاد صاحب بلکل خاموش ہو چکے تھے۔۔۔ سب نے اُن سے بات کرنے کی کوشش کی مگر وہ داؤد کے جنازے کے بعد سے اب تک ایک لفظ نہیں بولے تھے
اور اس خاموشی کا نتیجہ ہارٹ اٹیک کی صورت سامنے آیا
ابھی تو وہاں کے مکین ایک دکھ سے نہ سنبھلے کے دوسری افتاد آگئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دکھ شاید اُس گھر کا راستہ دیکھ چکے تھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ سب آئی سی یو کے باہر تھے۔۔۔ڈاکٹرز نے سیریس کنڈیشن بتائی تھی اور دعا کا کہا تھا

دروازہ کھلا اور ڈاکٹر باہر آیا۔۔۔۔۔مسڑ فائز ۔۔۔ہُو از مس فارہ۔۔۔۔
مائی سسٹر۔۔۔۔۔۔وہ جلدی سے بولا
او-کے۔۔۔۔۔۔۔سجاد صاحب۔۔۔۔۔مس فارہ اور سکندر صاحب سے ملنا چاہتے ہیں
اسلیے زرا جلدی بُلوا لیں۔۔۔
جی۔۔۔میں۔۔۔بُلواتا ہوں
سکندر تو وہیں تھے مگر فارہ کی عدت تھی اس لیے وہ گھر تھی
رامش کو بھیجا گیا فارہ اور رمشا کو لینے کے لیے
تقریبًا آدھے گھنٹے بعد۔۔۔۔فارہ اور سکندر صاحب آئی سی یو میں تھے۔۔۔۔سجاد کے پاس۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ مختلف مشینوں میں جکڑے ہوئےتھے
فارہ کا دل بند ہو رہا تھا باپ کو اس حالت میں دیکھ کر وہ خاموشی سے آنسو بہا رہی تھی بولنے کی ہمت ہی نہ تھی
سکندر صاحب کی حالت بھی کچھ مختلف نہ تھی وہ بھی چھوٹے بھائی کو اس حالت میں دیکھ نہیں پا رہے تھے۔۔۔
فا۔۔۔۔فارہ۔۔۔۔۔۔۔۔سجاد۔۔۔۔۔۔۔۔فارہ کا ہاتھ پکڑنا چاہ رہے تھے
فارہ نے جلدی سے تقلید کی اور اپنا ہاتھ پکڑایا
انہوں نے اُسکا ہاتھ تھاما اور سکندر صاحب کی طرف بڑھایا
بھا۔۔۔بھائی صاحب ۔۔۔۔۔میری۔۔۔۔۔۔بیٹی۔۔۔۔۔۔۔کا۔۔۔۔خیال ۔۔۔۔رکھیے ۔۔۔۔گا۔۔۔۔۔۔۔۔اسے۔۔۔۔۔اللّہ۔۔۔۔۔کے۔۔۔۔بعد۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ۔۔۔۔۔۔کے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔سپُرد کیا۔۔۔۔۔۔۔
انہوں نے اٹک اٹک کر بات مکمل کی۔۔۔۔۔ان کا سانس اکھڑ چکا تھا۔۔۔۔
بابا۔۔۔۔۔بابا۔۔۔۔۔۔۔۔پلیز۔۔۔۔۔۔بابا۔۔۔۔۔۔۔فارہ چلا رہی تھی
ڈاکٹرز فورًا اینٹر ہوئے۔۔۔۔انہوں نے فارہ اور، سکندر صاحب کو باہر بھیجا۔۔۔۔
اور دس منٹ بعد خود بھی باہر آئے
فائز فورًالپکا۔۔۔۔
ڈاکٹر نے اُسکے کندھے پر ہاتھ رکھا اور مدھم سر گوشی کی۔۔۔
ہی از نو مور۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ٹھیک دس دن بعد سجاد ہاوس پر دوسری قیامت ٹوٹی تھی۔۔۔۔
فارہ پہلے دھچکے سے نہ سنبھلی تھی کہ دوسرا رشتہ بھی ساتھ چھوڑ گیا تھا۔۔

طرح طرح کی بولیاں تھی ہر طرف۔۔۔۔۔۔۔
بیچاری کی پہلی طلاق ہو گئی۔۔۔۔۔۔۔اور دوسری شادی سے بیوہ اور اب باپ بھی چلا گیا۔۔۔۔کیا قسمت پائی ہے بیچاری نے۔۔۔۔۔۔۔
وہاں موجود ہر عورت کے منہ پر یہ ہی کہانی تھی۔۔۔۔وہ افسوس کم اور نمک پاشی زیادہ کر رہیں تھیں۔۔۔۔۔
فارہ وہاں سے بھاگ جانا چاہتی تھی۔۔۔اسکے کانوں میں یہی فقرے گردش کر رہے تھے
یہ طلاق یافتہ ہے۔۔۔۔۔۔۔
یہ بیوہ ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ یتیم ہے۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ بھاگ جانا چاہتی تھی کسی ایسی جگہ جہاں کوئی ذی روح نہ ہو ۔۔۔۔جہاں کوئی آواز نہ سنائی دے۔۔۔۔جہاں وہ اکیلی ہو اور تنہائی ہو۔۔۔۔۔۔
اسی مقصد کو پورا کرنے کے لیے وہ اٹھی اور باہر کی جانب بڑھی۔۔۔۔۔فارہ اردگرد دیکھےبغیر ناک کی سیدھ میں چلتی جا رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔وہ گیٹ سے باہر نکل گئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔لان میں موجود لوگوں میں سے کسی نے نہیں دیکھا تھا۔۔۔۔
رمشا راحیلہ بیگم کو سنبھال رہی تھی جو بلکل حواس میں نہ تھیں۔۔۔تو فارہ کو کون دیکھتا ۔۔۔۔؟؟؟؟؟؟؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔
عائش قبرستان سے واپس سجاد ہاؤس آ رہا تھا کے گھر سے کچھ فاصلے پر لوگوں کا ہجوم دیکھا۔۔۔۔۔۔۔گاڑی آگے لے جانا مشکل تھا اس نے گاڑی سائیڈ پر پارک کی اور باہر نکلا ۔۔۔۔۔۔
وہ آگے آیا اور وہاں کھڑے آدمی سے پوچھا۔۔۔۔۔۔کیا ہوا ہے یہاں۔۔۔۔۔۔؟؟؟؟
کوئی لڑکی بے ہوش پڑی ہے۔۔۔ پتہ نہیں کونسی قیامت ٹوٹی ہے بیچاری پر۔۔۔۔۔۔۔۔وہ افسوس کر رہا تھا لڑکی کی حالت پر
عائش آدمی کی بات سن کر آگے بڑھا ہجوم کو چیرتا ہوا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہاں موجود لوگ صرف نظارہ لے رہے تھے کوئی بھی اس لڑکی کو ہوسپیٹل لے جانے کو تیار نہ تھا
عائش اسی مقصد سے بڑھا تھا کہ ہوسپٹل لے جا، سکے ۔۔۔۔۔مگر وہاں فارہ کو گِرے دیکھ اُس کے اپنے اوسان خطا ہو چکے تھے
وہ جلدی سے زمین پر بیٹھا۔۔۔
فارہ۔۔۔۔۔۔فارہ ۔۔۔۔۔۔ہوش۔۔۔۔ہوش میں آؤ فارہ۔۔۔۔عائش اسُکے منہ کو تھپک رہا تھا 
مگر دوسری جانب خاموشی ہی رہی۔۔۔۔۔۔۔
عائش نے فائز کا نمبر ڈائل کیا وہ بند تھا ۔۔۔پھر رامش کا ۔۔۔۔۔وہ بھی اویلیبل نہیں تھا
عائش نے فارہ کو بازؤں میں اٹھایا اور گاڑی کی طرف بڑھا۔۔۔۔۔۔
وہ ہوسپٹل جا رہا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آئی ایم سوری ٹو سیے۔۔۔۔آپکی مسز کو نروس بریک ڈاؤن ہوا تھا جس کی وجہ سے اُن کا مس کیرج ہو گیا ہے۔۔۔
آپکو احتیاط کرنی چاہیے تھی۔۔۔۔اُنکی کنڈیشن بہت مشکل سے سنبھلی ہے۔۔۔۔آئندہ کئیرفل رہیے گا۔۔۔کچھ دیر میں اُنکو روم میں شفٹ کر دیا جائے گا ہوش میں آنے پر آپ مل سکتے ہیں۔۔ڈاکٹر نے رسمی گفتگو کی اور چلا گیا۔۔۔
عائش نے بھی غلط فہمی دور نہ کی کہ وہ پیشنٹ کا ہزبینڈ نہیں۔۔۔۔۔۔
وہ تو لفظ مس کیرج پر اڑا ہوا تھا۔۔۔۔تو کیا فارہ ماں بننے والی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟؟؟؟؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آخری قسط

ایک ہفتے بعد فارہ کی حالت کے پیش نظر ڈسچارج کر دیا گیا تھا
وہ بلکل خاموش ہو چکی تھی۔۔۔۔۔کوئی پوچھتا تو جواب دیتی ورنہ گھنٹوں ایسے ہی گزار دیتی
کسی چیز کا ہوش نہ تھا۔۔۔۔۔۔نہ کھانے پینے کا۔۔۔۔نہ پہنے اوڑھنے کا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس مشکل وقت میں رمشا ہی سنبھال رہی تھی سب کو۔۔۔۔وہ بلکل گھن چکر بن چکی تھی۔۔۔۔
لیکن مشکل وقت بھی گزر ہی جاتا ہے اور گزرتا وقت ہی زخموں کے لیے مرہم کا کام کرتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
راحیلہ بیگم اور فارہ نے دس دن کے وقفے سے عدت ختم کی تھی۔۔۔۔۔راحیلہ بیگم بیٹی کی خاطر بہت سنبھال چکیں تھیں خود کو ۔۔۔۔۔اب وہ فارہ کو بھی سنبھال رہیں تھیں۔۔۔۔۔۔

سب فارہ کا بہت خیال رکھتے تھے۔۔۔۔۔۔فارہ بھی آہستہ آہستہ زندگی کی طرف لوٹ رہی تھی۔۔۔

۔اتنا کچھ گنوا کے بھی وہ زندہ تھی ۔۔۔تو ضرور قدرت کی کوئی مصلحت تھی۔۔۔۔۔۔۔بے شک اللّہ کے ہر کام میں بہتری پوشیدہ ہوتی ہے۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عائش فارہ کی عدت ختم ہونے کا انتظار کر رہا تھا ۔۔۔جیسے ہی عدت ختم ہوئی وہ اس سے ملنا چاہ رہا تھا اور اسی مقصد کے لیے وہ ماں کے پاس آیا تھا
ماں۔۔۔۔۔۔فارہ کی عدت ختم ہو چکی ہے ۔۔۔میں ملنا چاہتا ہوں اُس سے ۔۔۔۔پلیز آپ چچی سے بات کریں
عائش کچھ دن رُک جاؤ اور۔۔۔۔۔
نہیں۔۔۔۔ممی۔۔۔۔پلیز۔۔۔۔۔اور نہیں۔۔۔وہ ملتجی ہوا
اچھا کرتی ہوں بات لیکن اگر راحیلہ نے منع کردیا تو پھر دوبارہ ضد مت کرنا 
نہیں کروں گا ۔۔۔۔۔۔
وہ جانتا تھا کہ چچی ہر گز منع نہیں کریں گی کیونکہ وہ چچی کو منا چکا تھا چچا کی موجوگی میں ہی اُن کی ہلیپ کے ساتھ۔۔۔۔۔عائش سجاد کے اعلٰی ظرف کا گرویدہ ہو چکا تھا ۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
راحیلہ بیگم کی اجازت پا کر آج عائش سجاد ہاؤس آیا تھا۔۔۔فارہ سے ملنے
ملازمہ نے فارہ کو اطلاع دی تھی کہ آپ سےکوئی ملنے آیا ہے۔۔۔ ڈرائنگ روم میں۔۔۔۔۔
کون آیا ہے یہ نہیں بتا یا تھا۔۔۔۔
فارہ کچھ دیر بعد ڈرائنگ روم میں تھی مگر وہاں عائش کو دیکھ کر ساکت یو گئی۔۔۔
اب کیا کرنے آیا ہے یہ شخص۔۔۔۔میری بے بسی کا تماشہ دیکھنے یا پھر مجھے یہ بتا نے کے میں اس قابل نہیں کہ کوئی مرد زیادہ دیر میرا ساتھ نبھا سکے۔۔۔۔۔۔۔
عائش ۔۔۔فارہ کو ساکت دیکھ کر ہچکچایا
لیکن بات تو شروع کرنی ہی تھی
کیسی ہو ۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟؟؟؟مدھم آواز میں پوچھا گیا
فارہ کو لگا وہ ابھی گر جائے گی اس لیے مضبوطی سی صوفے کو پکڑا۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں ۔۔۔۔۔کیوں آئے ہیں یہاں۔۔۔۔۔؟؟؟کپکپاتی آواز سے پوچھا۔۔۔
فارہ بیٹھ جاو۔۔۔۔۔۔عائش کو لگ رہا تھا وہ اب گری کہ تب۔۔۔۔
میں ٹھیک ہوں۔۔۔۔۔کیوں آئےہو یہاں۔۔۔۔۔؟؟؟؟؟
اگر یہ دیکھنے آئے ہو کہ میں تمہاری جدائی میں مر رہی ہوں تو یہ بھول ہے تمہاری ۔۔۔۔۔۔۔۔اور اگر یہ دیکھنا چاہتے ہو کہ ایک با ر پھر سے اُجڑ کر کیسی لگ رہی ہوں تو دیکھ لو۔۔۔۔۔جی بھر کر ۔۔۔تاکہ کوئی حسرت نہ رہے تمہیں
فارہ غصے اور بے بسی سے آپ سے تم پر آ گئی تھی۔۔۔۔
مم۔۔۔۔میں تم سے معافی مانگنے آیا ہوں ۔۔۔فارہ

معافی۔۔۔۔۔۔معافی کیسی۔۔۔۔۔؟؟؟؟وہ استہزایہ ہوئی
فارہ۔۔۔۔۔۔میں شرمندہ ہوں ۔۔۔۔۔۔۔وہ سر جھکائے ہلکی آواز میں بات کر رہا تھا
اور فارہ ہر بات اُس کے جھکے سر کو دیکھ کر کر رہی تھی
میں نے معاف کیا۔۔۔۔۔تمہیں۔۔۔۔۔عائش سکندر
جاؤ اور دوبارہ کھبی میرے سامنے مت آنا۔۔۔۔میں ہاتھ جوڑتی ہوں تمہارے آگے ۔۔۔۔
فارہ نے واقعی ہاتھ جوڑ دیے۔۔۔. آنسو ایک تواتر سے جاری تھے
عائش کے لیے اُسے روتے دیکھنا اور وہاں مزید کھڑے رہنا مشکل ہو گیا۔۔۔وہ سائیڈ سےہو کر نکلتا چلا گیا
فارہ وہیں زمین پر بیٹھتی سسک اُٹھی۔۔۔۔
احساس بھی کب ہوا تمہیں عائش سکندر جب سب کچھ لُٹ چکا۔۔۔۔۔۔۔

""درد کی دل پہ حکومت تھی کہاں تھا اس وقت۔۔۔۔
جب مجھے تیری ضرورت تھی کہاں تھا اس وقت۔۔۔۔۔۔
موت کے سکھ میں چلا آیا مجھے دیکھنے کو۔۔۔۔۔
زندہ رہنے کی مصیبت تھی کہاں تھا اس وقت۔۔۔۔
دل کے دریاؤں میں ریت ہے صحراؤں کی
جب مجھے تیری ضرورے تھی کہاں تھا اس وقت""
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
زندگی یوں ہی رواں دواں تھی۔۔۔وقت گزرتا جا رہا تھا ۔۔۔۔زخم مندمل ہوتے جا رہےتھے۔۔۔۔سب اپنے مداروں کے گرد حرکت کرتے ہوئے زندگی کے دن گزار رہے تھے۔۔۔
فارہ نے خود کو مصروف کرنے کے لیے سکول جاب کر لی تھی۔۔۔۔۔اسلیئے زندگی سہل ہو گئی تھی وہ کافی حد تک اپنے غموں سے چھٹکارہ حاصل کرنے میں کامیاب ہوگئی تھی
وہ خوش تھی سکول کے بچوں کے ساتھ وقت گزار کر ۔۔۔۔۔زندگی کا مقصد مل گیا تھا اُسے۔۔۔۔۔۔وہ مگن سی ہو گئی تھی اپنی روٹین میں۔۔۔۔۔۔
مگر راحیلہ بیگم کو بیٹی کی ویران زندگی تکلیف دیتی تھی ۔۔۔اُنکی بیٹی نے اتنی کم عمری میں بڑے بڑے دکھ جھیلے تھے۔۔ مگر اوف تک نہیں کیا۔۔۔۔۔۔وہ صابر وشاکر رہنے والی لڑکی تھی۔۔۔۔۔راحیلہ خدا کے حضور دعا گو تھیں کہ انکی بیٹی کو اُس کے صبر کا پھل مل جائے۔۔وہ اٹھتے بیٹھتے یہی دعا مانگتیں۔۔۔۔۔۔
اور بے شک اللّہ ماں کے دل سے نکلی دعا رد نہیں کرتا۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
داؤد اور سجاد صاحب کی پہلی برسی گزرنے کے ڈیرھ ما ہ بعد رمشا نے گول مٹول سے بیٹے کو جنم دیا تھا۔۔۔۔۔۔سجاد ہاؤس میں برسوں بعد خوشی کی لہر دوڑ گئی تھی۔۔۔سب خوش تھے اس بڑی خوشخبری پر ۔۔۔۔۔
آیت کے تو پاؤں ہی زمین پر نہیں ٹک رہے تھے آخر کو فرمائش جو پوری ہو گئی تھی بھائی کی۔۔۔
اب میں اپنی فرینڈز کو خوب جیلس کروں گی وہ ارادہ کر چکی تھی۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 
بھابھی یہ تو مجھ پر گیا ہے۔۔۔۔۔فارہ نے رائے دی
کس طرف سے۔۔۔رائٹ سائیڈ یا لیفٹ سائید سے۔۔۔۔فائز نے بہن کو چھیڑا
ہر طرف سے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ اترائی
آاااہہہہم۔۔۔۔۔۔بلکل بھئی۔۔۔۔آپ پر ہی گیا ہے اس لیے نام بھی آپ ہی ڈیسائیڈ کرو گی
ریئلی بھائی۔۔۔۔۔۔وہ خوشی سے اچھلی
ریئلی بھائی کی جان۔۔۔۔۔فائز نے اُسکا سر تھپکا
او-کے میں سوچتی ہوں۔۔۔وہ تھوڑی پر انگلی رکھ کر سو چنے لگی
سب اُسکی حرکت پر مسکرا دیے
فارہ نے کافی غوروخوض کے بعد نام ڈیسائیڈ کیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عبدل ہادی۔۔۔۔۔۔۔
سب کو پسند آیا اور یہی نام فائنل کر دیا گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فارہ۔۔۔۔۔
جی امی۔۔۔۔
تمہارے تایا تم سے بات کرنا چاہتے ہیں ۔۔۔جاؤ سُن لو جا کر
سکندر صاحب اور مسز سکندر آج خاص مقصد سے آئے تھے
وہ راحیلہ بیگم سے پہلے ہی بات کر چکے تھے مگر فائز نہیں مانا تھا۔۔۔۔پر راحیلہ نے تھوڑا بہت پریشرائز کر کے منا لیا تھا۔۔۔فائز کی شرط تھی کہ فارہ سے کوئی زبردستی نہیں کرے گا اگر وہ راضی ہو تو پھر مجھے بھی اعتراض نہیں ہوگا۔۔۔
فائز کی شرط پر ہی سکندر صاحب فارہ سے بات کرنے آئے تھے۔۔۔
تایا ابو بُلوایا آپ نے ۔۔فارہ لاؤنج میں آئی تھی
فارہ بیٹا ۔۔۔یہاں آ کر بیٹھو میرے پاس ۔۔۔انہوں نے اپنے قریب صوفے کیطرف اشارہ کیا۔۔
مسز سکندر تنہائی فراہم کر کے باہر جا چکی تھیں۔۔۔۔
فارہ۔۔۔۔۔۔
جی۔۔۔۔۔وہ سر جھکائے بولی
فارہ بیٹا مجھے اپنا باپ مانتی ہو ناں۔۔۔
جی۔۔۔۔۔فارہ حیران ہوئی اس بات پر
تو پھر بیٹا۔۔۔۔اچھی بیٹیوں کی طرح میرا ایک فیصلہ مانو گی۔۔۔۔۔
تایا ابو کیسی بات کر رہے ہیں آپ ۔۔۔آپ کی ہر بات میرے لیے حکم کا درجہ رھکتی ہے
نہیں میری جان۔۔۔حکم نہیں ۔۔۔ریکوسٹ ہے تم سے۔۔۔۔
کہیں۔۔۔میں سن رہی ہوں۔۔۔اندر ہی اندر وہ ڈر بھی رہی تھی پتہ نہیں کیا بات ہے۔۔۔؟؟؟؟
فارہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ رُکے
بیٹا۔۔۔۔۔۔سجاد تمہیں خدا کے بعد میرے حولے کر کے گیا تھا۔۔۔یاد ہے ناں
کیسے بھول سکتی ہوں تایا ابو۔۔۔۔وہ بابا کی آخری بات تھی جو جاتے ہوئے انہوں نے مجھے سے کی۔۔۔۔کبھی بھی ۔۔۔۔وہ رو پڑی
سکندر نے اُسے سینے سے لگا لیا۔۔۔۔
فارہ دل ہلکا کر کے الگ ہوئی ۔۔۔۔میں نے آپ کو بھی افسردہ کر دیا ۔۔۔۔سوری
نہیں بیٹا۔۔۔بس۔۔۔۔وہ خاموش ہوئے
تایا ابو آپ کریں بات ۔۔۔۔
فارہ بیٹا۔۔۔میں تمہاری شادی کرنا چاہتا ہوں
فارہ کو اسی بات کا ڈر تھا اور وہ ہی ہوا
دیکھو بیٹا سجاد جا چکا ہے۔۔میں آج ہوں کل نہیں رہوں گا اس لیے چاہتا ہوں کے تمہیں مضبوط ہاتھوں میں کر جاؤں تاکہ سجاد کو مجھ سے کوئی شکایت نہ ہو۔۔۔۔۔وہ رُکے
تم کیا کہتی ہو۔۔۔۔؟؟؟؟
سارے راستے بند کر کے پوچھ رہے تھے کیا کہتی ہو.؟ 
فارہ خاموش رہی
فارہ۔۔۔۔۔
تایا ابو جیسے آپ کی مرضی۔۔۔۔انکار کا لفظ تو شاید فارہ کی ڈکشنری میں تھا ہی نہیں۔۔۔
ہر بات پر سر جھا دینا ہی اُسکا وتیرا تھا
فارہ بیٹا مجھے یقین ہے تم میرے انتخاب کو قبول کرو گی۔۔۔وہ مسکرائے
جی۔۔۔۔فارہ نے سر ہلا دیا
میں نے تمہارے لیے عائش کا انتخاب کیا ہے۔۔۔فارہ کے سر پر دھماکا ہوا
عائش۔۔۔۔عائش سکندر۔۔۔۔؟؟؟
یہ کیا کہہ دیا آپ نے ۔۔۔۔وہ دل میں ہمکلام تھی
میں جانتا ہوں یہ مشکل ہے تمہارے لیے پر صرف ایک بار ۔۔۔۔آخری بار ۔۔۔۔میرا فیصلہ اس یقین کے ساتھ قبول کر لو کے اب کچھ غلط نہیں ہو گا۔۔۔۔ان شا اللّہ۔۔۔۔وہ یقین سے بولے
۔
۔
فارہ کی خاموشی دیکھ کر وہ پریشان ہوئے
فارہ ۔۔۔۔بیٹا
جج۔۔۔جی۔۔۔۔وہ چونکی
کیا ہوا بیٹا ۔۔۔؟؟انہوں نے سر پر ہاتھ رکھا
مجھے آپ کا فیصلہ قبول ہے۔۔۔۔۔فارہ نے خود
کو کہتے سنا ۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ۔۔۔اس وقت عائش سکندر کے بیڈروم میں اُس کی بیوی بنے بیٹھی تھی
لائٹ پنک کلر کی فراک میں وہ پرستان کی پری ہی معلوم ہو رہی تھی
مگر اس کے دل میں نہ تو کوئی خوشی تھی اور نہ ہی کوئی ارمان۔۔۔۔وہ خالی دل۔۔۔خالی دماغ لیے بیٹھی تھی
عائش کب کمرے میں آیا۔۔۔۔کب اُس کے پاس بیڈ پر بیٹھا۔۔۔فارہ کو کچھ پتہ نہ چلا
چونکی تو تب۔۔۔جب اپنے ہاتھ کو کسی اور ہاتھ میں قید پایا
وہ ہوش میں آ کر ایک دم ہاتھ چھڑوا کر کھڑی ہوئی۔۔۔۔۔۔
وہ کوئی کٹھ پتلی نہیں تھی کہ جب چاہا استعمال کر لیا ۔۔۔جب چاہا پھینک دیا۔۔۔اور دل کے کہنے پر پھر سے استعمال کے لیے حاصل کر لیا۔۔۔۔
وہ جیتی جاگتی انسان تھی۔۔اُسکی بھی مرضی تھی۔۔۔اُسکا بھی دل تھا
فارہ کیا ہوا۔۔۔۔؟؟؟
میرے پاس آپ کو دینے کو کچھ نہیں ہے عائش اس لیے مجھ پر ترس کھائیے ۔۔۔۔میں بھی آپکی طرح سانس لیتی انسان ہوں ۔۔۔میری بھی خواہشات ہیں۔۔میرے بھی خواب ہیں۔۔۔اس لیے مجھے میرے حال پر چھوڑ دیں 
میں آ تو گئی ہوں وہ بھی اس لیے کہ مجھ جیسی لڑکی کو اب کم از کم کوئی تیسرا مرد ہر گز برداشت نہ کرتا۔۔۔
دو مردوں کی برتی ہوئی عورت کو کون برداشت کر سکتا ہے بھلا۔۔۔وہ استہزایا ہنسی

فارہ پلیز۔۔۔۔تمہاری باتیں مجھے تکلیف دے رہیں ہیں۔۔۔تم سے کوئی زبردستی نہیں ہو گی تمہیں جتنا وقت چاہیے تم لے سکتی ہو مگر خدارا دوبارہ خود کے لیے اتنے گرے ہوئےا لفاظ مت استعمال کرنا۔۔۔۔
تم کیا ہو۔۔؟؟؟۔۔یہ میرا دل جانتا ہے۔۔۔میں جانتا ہوں۔۔۔۔کوئی کیا کہتا ہے کیا سوچتا ہے مجھ اس بات سے کوئی سروکار نہیں اور تمہیں بھی نہیں ہونا چاہیے۔۔۔
تم یہاں رہو جب تک چاہے رہو اپنی مرضی سے
میں ہر قدم ۔۔۔ہر سانس کیساتھ تمہارا منتظر رہوں گا
بس ایک زرا سی آواز دے لینا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مجھے اپنے قریب پاؤ گی
عائش بھاری گھمگھیر آواز میں فارہ کے اندر روح پھونک رہا تھا
فارہ یہی تو سُننا چاہتی تھی مگر اب نہیں تب جب یہ سب سننے کی خواہش تھی
فارہ۔۔۔۔وہ پاس آیا
ایک۔۔۔ایک وعدہ چاہیے۔۔وہ ہچکچاتا ہوا بولا
فارہ کی سوالیہ نظریں اُٹھیں
فارہ ۔۔۔میں مرتے دم تک تمہارا انتظار کرنے کو تیار ہوں مگر۔۔۔۔۔وہ رُکا
فارہ تم پلٹنے میں ہچکچاؤ گی نہیں۔۔جب کبھی تمہیں لگے کہ تم تھک چکی ہو تو اپنی تھکن مجھے سونپنے میں دیر مت لگانا میری طرح۔۔۔وہ سانس لینے کو رُکا
فارہ۔۔۔۔۔میں۔۔۔۔۔۔میں تم سے بہت محبت کرنے لگا ہوں اتنی کہ۔۔۔
اتنا خود نہیں سوچا جتنا تمہیں سوچا ہے،،۔چاہا ہے۔۔اور مجھے اپنی چاہت پر پورا یقین ہے
وہ کس قدر یقین سے کہہ رہا تھا یہ سب۔۔۔
فارہ حیران تھی اُسکی ہمت پر۔۔۔مگر چپ رہی اسی میں بہتری تھی۔۔۔۔

""یہی بہت ہے کے تُو نے پلٹ کر دیکھ لیا
یہ لطف بھی میری امید سے زیادہ ہے""
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سات سال بعد۔۔۔۔۔۔۔👉👉👉
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سکندر وِلا کا گیٹ کھلا۔۔۔اور عائش اپنی گاڑی اندر لے گیا۔۔۔۔۔ابھی وہ گاڑی سے نکلا ہی تھا کہ
لان میں کھیلتی اُسکی دونوں بیٹیاں(پرہ اور پریسہ) کھیل ادھورا چھوڑ کر باپ کی جانب بھاگیں
عائش نے گھٹنا زمین پر ٹیک کر بانہیں پھیلائیں۔۔۔وہ دونوں آگے پیچھے آ کر باپ کی بانہوں میں سمائیں۔۔۔۔
عائش نے باری باری دونوں کے گلابی پھولے پھولے گال چومے۔۔۔۔جواب میں انہوں نے بھی باپ کی دائیں، بائیں گال چومی
اپنا کوٹا پورا کر کے وہ واپس فٹبال کی طرف بھاگیں۔۔۔۔عائش مسکراتا ہوا آگے بڑھا

اسلام و علیکم۔۔۔بیوٹیفل لیڈیز۔۔۔۔۔
کین چئیرز پر بیٹھیں ماں اور بیوی کو چھیڑا
آج تم جلدی نہیں آ گئے۔۔۔۔مسز سکندر نے جاننے کے باوجود پوچھا
وہ مسکرایا۔۔۔۔آفس میں دل نہیں لگ رہا تھا اسی لیے۔۔۔رٹا رٹایا جواب آیا
وہ مسکرائیں بیٹے کی بے تابی پر۔۔۔۔کیوں۔۔۔۔۔؟؟؟
عائش جانتا تھا جان بھوج کر تنگ کر رہیں ہیں اس لیے شوخی سے بولا
ڈئیر لیڈی۔۔۔۔میرا دل، جگر، پھیپھڑا۔۔سب تو آپ کے اردگرد ہوتا ہے اسلیے۔۔۔ساتھ ہی بیوی کو آنکھ ماری
وہ جھینپی۔۔۔۔۔
وہ ہنسیں جواب سن کر ۔۔۔اچھا فریش ہو آؤ پھر چائے پیتے ہیں ۔۔تب تک سکندر بھی آ جائیں گے۔۔۔۔۔۔
او-کے موم۔۔۔۔ماں کی گال سے گال مَس کیا۔۔۔۔اور بیوی کو ہوائی کِس دی ہمیشہ کی طرح۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ نظریں جھکا گئی
عائش کی رنگ گھماتا، سیٹی پر دھن بجاتا اندر کی جانب بڑھ گیا۔۔
جاؤ۔۔۔۔فارہ بیٹا۔۔۔ورنہ شور مچائے گا ۔۔۔مسز سکندر مسکراتیں ہوئیں پاس بیٹھی فارہ سے مخاطب ہوئیں
جی۔۔۔۔۔۔۔فارہ اپنے بھاری بھرکم وجود کو سنبھالتی اُٹھی
احتیاط سے جانا بیٹا ۔۔۔۔نصیحت ہوئی
جی۔۔۔۔۔۔
فارہ آہستگی سے چلتی ہوئی اندر بڑھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فارہ کو سیڑھیوں کے پاس اپنی کمر پر ہاتھوں کا احساس ہوا۔۔۔ وہ مڑی
عائش۔۔۔۔۔۔۔
جی جانِ عائش۔۔۔۔لگاوٹ سے کہا گیا
ہاتھ ہٹائیں میں خود چڑھوں گی سٹئیرز۔۔۔
اوہ کم آن فارہ۔۔۔کتنی دفعہ منع کیا ہے اس کنڈیشن میں اوپر نیچے کے چکر مت لگایا کرو۔۔۔وہ فکر مند ہوا
اتنی فکر ہے تو لفٹ لگوادیں۔۔چڑچڑا جواب آیا
جو حکم جناب۔۔۔وہ جھکا
اچھا بس۔۔۔اب کمرے میں جانا ہے یا نہیں۔۔۔
چلیں ملکہ ِجان۔۔۔۔پُراثر انداز میں کہا گیا
فارہ ایک ایک سٹیپ اٹھاتی سیڑھیاں چڑھ گئی۔۔۔۔۔

وہ عائش کے کپڑے نکل رہی تھی جب عائش نے پھر سے اُسکے گرد گھیرا ڈالا۔۔۔۔تم اس حالت میں واقعی حسین ہو جاتی ہو یا پھر مجھے ہی لگتی ہو۔۔۔پیار سے پوچھا
عائش ۔۔دو بیٹیوں کے باپ ہیں۔۔اور تیسرا بےبی آ رہا ہے ہمارا۔۔۔آپ ابھی بھی پہلی بار کی طرح ری ایکٹ کرتے ہیں
تیسری بار ہی سہی۔۔۔پر بے بی تو نیا آ رہا ناں۔۔۔گال پر بوسہ لیا
فارہ جھینپی۔۔۔اچھا ہٹیں کپڑے تو نکالنے دیں۔۔۔وہ منمنائی
ہر روز کہتا ہوں میرے آنے سے پہلے کیا کرو یہ سب۔۔۔جب میں آؤں تو صرف میرے آس پاس رہا کرو۔۔۔وہ وارفتگی سے دیکھ رہا تھا اُسے
عائش پلیز۔۔۔۔
او-کے مسز۔۔۔۔عائش نے ہاتھ ہٹائے

وہ کپڑے لٹکا کر واپس روم میں آئی 
آج ڈاکٹر سے اپائٹمنٹ تھا ۔۔گئیں؟؟؟؟ ایکچولی میٹنگ میں تھا اسلیے کال نہیں کر سکا۔۔۔۔
جی گئی تھی۔۔۔۔روہانسا سا جواب دیا
کیا ہوا۔۔۔۔۔؟؟؟عائش کو وہ افسردہ سی دیکھائی دی
عائش۔۔۔۔اس بار بھی بیٹی ہے۔۔۔ڈاکٹر نے الٹراساؤنڈ سے کنفرم کیا۔۔۔۔وہ روہانسی ہوئی
کم آن۔۔۔فارہ بیٹیاں خدا کی رحمت ہوتی ہیں۔۔۔وہ ہمیں پھر سے اپنی رحمت سے نواز رہا ہے۔۔۔عائش نے پاس آکر گھٹنوں کے بل بیٹھ کر اسکا ہاتھ تھاما
جانتی ہو
""وہ"" جب کسی سے راضی ہوتا ہے اور کسی کو اس ذمہ داری کے قابل جانتا ہے تو بیٹی عطا کرتاہے۔۔۔۔ہم تو لکی ہیں ناں جان۔۔۔ہاتھ کو ہونٹوں سے چھوا
میں ۔۔۔بیٹوں سے نہیں عائش اُن کے نصیب سے دڑتی ہوں۔۔۔وہ مدھم سا بولی
تو ڈئیر مسز اسکا انتظام بھی تو"" وہ مالک ""
کر چکا ہے ۔۔۔۔وہ مسکرایا
فارہ نے حیرانگی سے اُسے دیکھا
میڈم۔۔۔۔آپ جانتی تو ہیں
پرہ کو رامش بھائی مانگ چکے ہیں ۔۔۔احمد کے لیے۔۔۔۔اور۔۔۔۔۔۔پریسہ کو فائز اور رمشا۔۔۔۔وہ ہنسا اور ہماری تیسری بیٹی کا بھی رشتہ پکا سمجھو۔۔۔
فارہ ہونق سی بیٹھی تھی

کل اسجد کا فون آیا تھا ۔۔۔کہہ رہا تھا تیرے اور فارہ بھابھی سے پکی رشتے داری کرنی ہے۔۔۔سمدھی بن کر۔۔۔۔
کل تو کہہ دیا میں نے میں پہلے ہی سمدھی بنا چکا ہوں اس لیے نو چانس۔۔۔۔۔۔لیکن آج کال کرتا ہوں کہ رشتہ پکا سمجھو
عائش۔۔۔فارہ نے کشن مارا
جسے عائش نے قہقہ لگاتے ہوئے بڑی خوبصورتی سے کیچ کیا اور ہنستا ہوا واش روم چلا گیا

فارہ آہستگی سے چلتی ہوئی آئینے کے سامنے آئی۔۔۔۔فارہ کا ہاتھ اپنے گلے میں موجود لاکٹ پر گیا۔۔۔جس کے پینڈنٹ میں لکھا ""اللّہ"" آج بھی پوری آب وتاب کیساتھ جگمگا رہا تھا۔۔۔وہ نم آنکھوں کے ساتھ مسکرا دی
وہ اپنے چہرے پر الوہی خوشی دیکھ سکتی تھی۔۔۔بلآخر اُسے اُسکے صبر کا پھل مل ہی گیا تھا۔۔۔۔۔
"دیر سے ہی سہی پر فارہ کو عائش کی وفا
پر اعتبار آ ہی گیا تھا"

""بچوں سی طبیعت ہے ہم اہلِ محبت کی
ضد کرنا، مچل جانا، پھر خود ہی سنبھل جانا""

***************دی اینڈ*****************
ڈئیر ریڈرز اپنی قیمتی آرا ضرور دیجئے گا
 
Zubair Khan Afridi Diary【••Novel ღ ناول••】. Zubair Khan Afridi
knowledgemoney