"میرے مہرباں"

................ﺭﺍﺋﭩﺮ ﮐﻮﻣﻞ ﺍﺣﻤﺪ .................

قسط 1


"بیٹا تمہاری مجھے ضرورت پڑھ گئ ہے' ہو سکے تو یہ زمیداری اپنے باپ کی خاطر نبھا لینا". آفس میں بیٹھا وہ اپنے باپ کے الفاظ ذہین نشین کر رہا تھا. آخر اس کے باپ نے اسے کیوں اس امتحان میں ڈالا تھا اور وہ کچھ کر بھی نہ سکتا تھا.
"یار ﻣﻌﯿﺰ اٹھ بھی جا کن سوچو میں گم بیٹھا ہے". احمد نے اس کے کیبن میں آتے ہی سوال شروع کر دیے.
"کچھ نہیں بس کام کا ہی سوچ رہا تھا. کچھ فائلز کل کلر کروا دینا اور چیک کر لینا سب". وہ فائل اٹھا کر اسکی طرف متوجہ ہوا.
"ٹھیک ہے سب کر دوں گا جناب چل اب چلیں." وہ اسکو اپنے ساتھ پارکنگ ایریا میں لے آیا. وہ دونوں گھر کی جانب نکلے تو راستے میں ﻣﻌﯿﺰ نے کہ کہا اسے کچھ ضروری چیزیں لینی مارکٹ تک لے جانا.
مارکٹ پہنچ کر اس نے کچھ ضروری چیزیں لیں اور بل دے کر باہر کی طرف نکل رہا تھا کہ ایک لڑکی سے اسکی اچانک ٹکر ہوئی اور دونوں کی چیزیں زمین پر بکھر گئ.
"آپکو نظر نہیں آتا اگر آنکھیں خراب ہیں تو اپنی آنکھوں سے یہ چشمہ اتار کر چلا کریں". وہ لڑکی ذمین سے اپنی چیزیں اٹھاتی اس پر چیخ پڑھی
"میڑم اگر میرا دھیان نہیں تھا تو آپ ہی دیکھ کر چل پڑھتی میری بھی چیزیں آپکی وجہ سے گری ہیں" ﻣﻌﯿﺰ کو بھی اس پر شدید غصہ آنے لگا
"جو بھی ہے آپ مرد کبھی اپنی غلطی مانتے ہی نہیں ہیں. آئندہ اپنی آنکھیں کھول کے چلیے گا مسٹر کسی کو حقیر نہ سمجھا کریں" اس سے پہلے کہ وہ کچھ کہتا وہ وہاں سے چلی گی اور ﻣﻌﯿﺰ شدید غصے میں گاڑی میں آ بیٹھا.
"اوے کیا ہوا اتنی حسین پری کو نمبر دے رہا تھا کیا" احمد نے آنکھ مار کے پوچھا
"نمبر مائے فٹ جاہل انسان تمیز نہیں نہ چلنے کی نہ بات کرنے کی ایسی لڑکیوں کو گھر ہی رہنا چاہیے منہ اٹھا کے کہی بھی نکل پڑھتی ہیں" معیز کا دل کر رہا تھا جا کر اسکا سر پھاڑ دے.
"اچھا ریلیکس یار چل پانی پی" احمد نے اسے پانی دیا اور مزید اس بارے میں چپ ہی رہا. وہ تھوڑی ہی دیر میں گھر پہنچ گئے
______________________

"ﻋﺎﺋﺸﮧ بیٹا ادھر آو" ماں نے اسکو آواذ لگائی تو وہ فائلز رکھتی ہوئی ماں کے پاس چلی گئ.
"بیٹا کیوں اتنی محنت کرتی ہو' تمہارے باپ کا اور تمہارا حصہ ہے اس گھر میں. تم کہوں تو تمہاری دادی سے بات کرتی ہوں" ﻋﺎﺋﺸﮧ نے شدید غصہ میں ماں کو دیکھا.
"ﮐﻮﻧﺴﺎ ﺣﺼﮧ ﺟﻦ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻧﮯ بابا ﺳﮯ ہر ﺭﺷﺘﮧ ﺧﺘﻢ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ ﺗﮭﺎ ﻭﮦ ﻟﻮﮒ ﮨﻤﯿﮟ ﺣﺼﮧ ﺩﯾﮟ ﮔﮯ ﻭﮦ ﺑﮭﯽ بابا ﮐﮯ ﺑﻌﺪ مجھے ﺻﺮﻑ ﺍﯾﮏ ﭼﯿﺰ ﻣﻞ ﺟﺎﺋﮯ میرے لیے ﮐﺎﻓﯽ ﮨﮯ وہ مجھے ﻣﯿﺮﯼ ﺁﺯﺍﺩﯼ دے دیں بس یہں بہت میرے لیے"۔ وہ ماں کی آنکھوں میں آنکھیں ڈالتی ﺍﻧﺪﺭ کمرے میں چلی گئی.
اسکی ماں ﮨﺎﺗﮫ ﺍﭨﮭﺎ ﮐﮯ ﺩﻋﺎ ﻣﺎﻧﮕﮯ ﻟﮕﯽ "اے ﺍﻟﻠﮧ ﻣﯿﺮﮮ ﮐﺌﮯ ﮐﯽ ﺳﺰﺍ ﻣﯿﺮﯼ ﺑﯿﭩﯽ ﮐﻮ ﻣﺖ ﺩﯾﻨﺎ اسکا نصیب بدل دے" ..

______________________

"ﻣﻌﯿﺰ بیٹا ناشتہ کرو دھیان کہاں ہے" ناشتے کی میز پر دادی نے اسے کہا تو اس ﻧﮯ ﺳﺮ ﺍﭨﮭﺎﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﻣﻮﺑﺎﺋﻞ میں ﻣﮕﻦ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ.
ﺩﺍﺩﯼ ﻧﮯ ﺗﺎﺳﻒ ﺳﮯ ﺳﺮ ﮨﻼﯾﺎ " ﻣﻌﯿﺰ ﺗﻢ ﺍﭘﻨﺎ ﺩﮬﯿﺎﻥ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮐﮭﺘﮯ۔ ﺗﻤﮩﺎﺭﯼ ﺑﯿﻮﯼ ﮐﻮ ﻟﮯ ﺁﺅﮞ ﭘﮭﺮ ﺩﯾﮑﮭﺘﯽ ﮨﻮﮞ ﮐﯿﺴﮯ ﺍﭘﻨﺎ ﺧﯿﺎﻝ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮐﮭﺘﮯ." ﻣﻌﯿﺰ ﻧﮯ ﻟﺐ ﭘﮭﯿﻨﭽﮯ ﺍﻭﺭ ﻧﺎﺷﺘﮧ ﭼﮭﻮﮌ ﮐﮯ ﺑﻮﻻ "کون سی بیوی' ﻣﯿﮟ ﺁﭘﮑﯽ ﭘﻮﺗﯽ ﺳﮯ ﺷﺎﺩﯼ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﻭﮞ ﮔﺎ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﻣﯿﺮﺍ ﺁﺧﺮﯼ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﮨﮯ۔" وہ اٹھ کر جانے لگا ﺩﺍﺩﯼ ﻧﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﺳﮯ ﺁﻭﺍﺯ ﻟﮕﺎﺋﯽ "ﻭﮦ ﺗﻤﮩﺎﺭﯼ ﺑﯿﻮﯼ ﮨﮯ ﺍﺳﮑﺎ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺗﻢ ﺳﮯ ﺭﺷﺘﮧ ﮨﮯ۔ ﺟﺲ ﺩﻥ ﻭﮦ ﺣﺴﺎﺏ ﻣﺎﻧﮕﻨﮯ ﺁ ﮔﺌﯽ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﮨﯽ ﺁﮔﮯ ﮐﺮﻭﮞ ﮔﯽ"
معیز ﻧﮯ ﭘﻠﭧ ﮐﮯ ﻣﺴﮑﺮﺍ ﮐﮯ ﮐﮩﺎ "ﺩﯾﮑﮭﯽ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﮨﻮﺗﯽ ﺗﻮ ﺁﺝ ﻭﮦ ﯾﮩﺎﮞ ﮨﻮﺗﯽ ﭼﮭﭗ ﮐﮯ ﻧﮧ ﺑﯿﭩﮭﯽ ﮨﻮﺗﯽ اسے اگر میری ضرورت ہوتی تو آ جاتی"
ﺩﺍﺩﯼ ﻧﮯ ﺩﮨﻞ ﮐﮯ ﺳﯿﻨﮯ ﭘﮯ ﮨﺎﺗﮫ ﺭﮐﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺩﻝ ﮨﯽ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﺁﺝ ﺁﻣﻨﮧ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﺍﺭﺍﺩﮦ ﮐﯿﺎ ﺻﺒﺢ ﺳﮯ ﻧﺠﺎﻧﮯ ﮐﯿﻮﮞ ﺩﻝ ﺑﯿﭩﮭﺎ ﺟﺎ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ۔
"ﺍﻟﻠﮧ ﺧﯿﺮ ﮐﺮﮮ ﺍﻟﻠﮧ ﻣﯿﺮﯼ ﺑﮩﻮ ﺍﻭﺭ ﭘﻮﺗﯽ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﻣﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺭﮐﮭﻨﺎ".
______________________

ﻋﺎﺋﺸﮧ آج گھر پر ہی تھی اسکا موڈ نہیں تھا وہ کام پر جائے. وہ ماں کے کمرے میں آئی تو وہ بے سدھ پڑی تھی. اسکے پیروں سے جیسے زمین نکل گئی ہو. وہ بڑی ہمت کر کے ماں کو ہسپتال لائی. رات اس نے وقت پر دوا بھی دی تھی پھر کیسے طبیعت اتنی خراب ہو گئی. ﻋﺎﺋﺸﮧ ﻧﮯ ﺑﮯ ﺟﺎﻥ ﭘﮍﯼ ﻣﺎﮞ ﮐﻮ ﮨﻼﯾﺎ . ﻧﺮﺱ ﻧﮯ ﺗﺎﺳﻒ ﺍﻭﺭ ﮨﻤﺪﺭﺩﯼ ﺳﮯ ﻋﺎﺋﺸﮧ ﮐﮯ ﮐﻨﺪﮬﮯ ﭘﮯ ﮨﺎﺗﮫ ﺭﮐﮭﺎ۔ ﻣﺲ ﻋﺎﺋﺸﮧ ﻭﮦ ﺯﻧﺪﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ.
ﻋﺎﺋﺸﮧ ﮐﻮ جیسے سکتہ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ... ﺍﻭﺭ ﺯﻣﯿﻦ ﭘﮯ ﺑﯿﭩﮭﺘﮯ ﺑﻮﻟﯽ "ﺁﭖ ﺟﮭﻮﭦ ﺑﻮﻝ ﺭﮨﯽ ﮨﯿﮟ اﻣﺎﮞ ﻣﺠﮭﮯ ﮐﺲ ﮐﮯ ﺳﮩﺎﺭﮮ ﭼﮭﻮﮌ ﮐﮯ ﺟﺎ ﺭﮨﯽ ﮨﻮ ﺍﻣﺎﮞ ﻣﯿﺮﺍ ﮐﻮﻥ ﮨﮯ ﺍﻣﺎﮞ ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺭ ﻣﯿﺮﮮ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﺳﻮﭼﺘﯽ ﺍﻣﺎﮞ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ ﮐﮭﻮﻟﻮ"... ﻟﯿﮑﻦ ﺍﻣﺎﮞ ﺗﻮ ﺷﺎﯾﺪ اس سے ﺭﻭﭨﮫ ﭼﮑﯽ ﺗﮭﯽ ...
گھر سے میت جب اٹھنے لگی تو ﻋﺎﺋﺸﮧ صدمے سے ﭼﻮﺭ ﺑﮩﮑﯽ ﺑﮩﮑﯽ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﮐﺮﻧﮯ ﻟﮕﯽ "ﻣﺖ ﻟﮯ ﺟﺎﺅ ﻣﯿﺮﯼ ﺍﻣﺎﮞ ﮐﻮ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﻭ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﻭ ﻣﺠﮭﮯ"۔ 
ﺍﺳﮑﮯ ﻟﺌﮯ ﯾﻘﯿﻦ ﮐﺮﻧﺎ ﻣﺸﮑﻞ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮯ ﺍﺳﮑﺎ ﻭﺍﺣﺪ ﺳﮩﺎﺭﺍ ﺑﮭﯽ ﭼﮭﯿﻦ ﻟﯿﺎ ﮨﮯ .. ﻣﮕﺮ ﮐﻮﻥ ﺟﺎﻧﮯ ﺟﺐ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﻭﺍﻻ ﺩﺭﻭﺍﺯﮦ ﺭﺏ ﺑﻨﺪ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﺱ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﺭﺍﮦ ﮐﮭﻮﻝ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﻮﻥ ﺟﺎﻧﮯ ﻋﺎﺋﺸﮧ ﮐﯽ ﻗﺴﻤﺖ ﺍﺳﮯ ﮐﮩﺎﮞ ﻟﮯ ﺟﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﮨﻮ ﮐﻮﻥ ﺟﺎﻧﮯ ﯾﮧ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﺭﺏ ﻧﮯ ﮐﯿﻮﮞ ﮐﯿﺎ...ﻋﺎﺋﺸﮧ ﺑﮯ ﮨﻮﺵ ﮨﻮ ﮐﮯ ﻣﺤﻠﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﻋﻮﺭﺕ ﮐﮯ ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺟﮭﻮﻝ ﮔﺌﯽ ... 
ﺑﺎﮨﺮ ﺳﯿﺎﮦ ﻟﯿﻨﮉ ﮐﺮﻭﺯ ﺭﮐﯽ ... ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ حمیدہ ﺑﯿﮕﻢ ﻧﮑﻠﯽ ﺍﭘﻨﯽ ﻻﺋﭧ ﭘﻨﮏ ﺳﺎﮌﮬﯽ ﺟﻮ ﺑﮩﺖ ﻣﮩﻨﮕﯽ ﺍﻭﺭ ﻧﻔﯿﺲ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮨﻮﺗﯽ ﺗﮭﯽ ﭘﺮﻝ ﻣﻮﺗﯿﻮﮞ ﺳﮯ ﺳﺠﺎ ﮨﻠﮑﺎ ﮐﺎﻣﺪﺍﺭ ﭘﻠﻮ ﺯﻣﯿﻦ ﮐﻮ ﭼﮭﻮ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﮔﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﮈﺍﺋﯿﻤﻨﮉ ﻧﮑﻠﯿﺲ ﺍﻭﺭ ﺯﺭﻗﻮﻥ ﺟﮍﮮ ﻣﻮﺗﯽ ﭘﮩﻨﮯ ﺗﮭﮯ ﮐﺎﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮈﺍﺋﻤﻨﮉ ﮐﮯ ﺁﻭﯾﺰﮮ . ﻗﺪﺭﮮ ﻣﮩﻨﮕﯽ ﺑﺮﯾﺴﻠﯿﭧ ﺟﻮ ﻭﺍﺋﭧ ﮔﻮﻟﮉ ﮐﯽ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮨﻮﺗﯽ ﺗﮭﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﮐﻤﺰﻭﺭ ﺍﻭﺭ ﻻﻏﺮ ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﺳﮯ حمیدہ ﺑﯿﮕﻢ ﻧﮯ ﮔﺎﮌﯼ ﮐﺎ ﺩﺭﻭﺍﺯﮦ ﭘﮑﮍﺍ "ﮈﺭﺍﺋﯿﻮﺭ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮐﺮﻭ ﮐﻮﻥ ﻓﻮﺕ ﮨﻮﺍ ﮨﮯ" 
ﻣﯿﺖ ﻟﮯ ﺟﺎﺗﮯ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﮯ حمیدہ ﺑﯿﮕﻢ ﻧﮯ ﮔﺎﮌﯼ ﺭﮐﻮﺍﺋﯽ ﺗﮭﯽ ... "ﻣﯿﮉﻡ ﯾﮩﺎﮞ ﮐﺮﺍﺋﮯ ﺩﺍﺭ ﮨﯿﮟ ﺩﻭ ﻣﺎﮞ ﺍﻭﺭ ﺑﯿﭩﯽ ﻣﺤﻠﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﻣﺎﮞ ﺁﺝ ﺻﺒﺢ ﺑﯽ ﭘﯽ ﻟﻮ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ﺗﻮ ﺩﻝ ﮐﯽ ﺩﮬﮍﮐﻦ ﺭﮐﻨﮯ ﺳﮯ ﺍﻧﺘﻘﺎﻝ ﮐﺮ ﮔﺌﯽ"... 
"ﯾﺎ ﺍﻟﻠﮧ ﺧﯿﺮ" حمیدہ ﺑﯿﮕﻢ ... ﺍﻭﺭ ﺑﮭﺎﮒ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﮔﺌﯽ ... ﺍﻧﺪﺭ ﮨﺠﻮﻡ ﺳﺎ ﻟﮕﺎ ﺗﮭﺎ . انھوں ﻧﮯ ﺁﻭﺍﺯﯾﮟ ﻟﮕﺎﻧﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮ ﺩﯼ 
"ﻣﯿﺮﯼ ﻋﺎﺋﺸﮧ ﮐﮩﺎﮞ ﮨﮯ ﻋﺎﺋﺸﮧ ﻣﯿﺮﯼ ﺑﭽﯽ ﺩﯾﮑﮫ ﻣﯿﮟ ﺁ ﮔﺌﯽ ﮨﻮﮞ"...
ﻟﯿﮑﻦ ﻭﮨﺎﮞ ﺳﻨﻨﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﮨﻮﺵ ﻭﺣﻮﺍﺱ ﺳﮯ ﺑﮯ ﮔﺎﻧﯽ ﺗﮭﯽ...
" ﺟﯽ ﺁﭖ ﮐﻮﻥ" ﺍﯾﮏ ﺧﺎﺗﻮﻥ ﻧﮯ ﻣﺘﺎﺛﺮ ﮨﻮ ﮐﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ 
"ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺩﯼ ﮨﻮﮞ ﻋﺎﺋﺸﮧ ﮐﯽ" ﺳﺎﺭﮮ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﺩﻭﺑﺎﺭﮦ ﻣﻮﺕ ﺳﯽ ﺧﺎﻣﻮﺷﯽ ﭘﮭﯿﻞ ﮔﺌﯽ ﻋﻮﺭﺗﯿﮟ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﮨﭩﺘﯽ ﮔﺌﯽ ﺍﻭﺭ ﺯﻣﯿﻦ ﭘﮯ ﺑﮯ ﺳﺪﮦ ﭘﮍﯼ ﮐﻤﺰﻭﺭ ﻟﮍﮐﯽ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺍﺷﺎﺭﮦ ﮐﯿﺎ....
______________________

ﻣﻌﯿﺰ ﮐﻤﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﮨﻮﺍ ﺗﻮ ﺟﺴﻢ ﺩﺭﺩ ﺳﮯ ﭼﻮﺭ ﺗﮭﺎ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺳﺎﺭﮮ ﮐﭙﮍﮮ ﺍﺗﺎﺭ ﺩﯾﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻟﻤﺎﺭﯼ ﻣﯿﮟ ﮔﮭﺲ ﮐﮯ ﺳﻠﯿﭙﻨﮓ ﺳﻮﭦ ﻧﮑﺎﻟﻨﮯ ﻟﮕﺎ.. ﭘﮭﺮ ﮔﻨﮕﻨﺎﺗﺎ ﮨﻮﺍ ﺷﺎﻭﺭ ﻟﯿﻨﮯ ﭼﻼ ﮔﯿﺎ .. ﮐﻤﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﮔﭗ ﺍﻧﺪﮬﯿﺮﺍ ﮐﺮ ﮐﮯ ﻭﮦ ﻭﺍﭘﺲ ﺁ ﮐﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﺴﺘﺮ ﭘﮯ ﻧﯿﻢ ﺩﺭﺍﺯ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ.. 
ﮐﭽﮫ ﺩﯾﺮ ﺑﻌﺪ ﮐﭽﯽ ﻧﯿﻨﺪ ﻣﯿﮟ اسے ﮐﻮ ﻟﮕﺎ ﮐﭽﮫ ﻧﺮﻡ ﻧﺮﻡ ﭼﯿﺰ ﺍﺳﮑﮯ ﻭﺟﻮﺩ ﺳﮯ ﭨﮑﺮﺍﺋﯽ ﮨﮯ ﻭﮦ ﮨﺮﺑﮍﺍ ﮐﮯ ﺍﭨﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﭼﯿﺰ ﮐﻮ ﺯﻭﺭ ﺳﮯ ﭘﮑﮍ ﻟﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮨﺎﺗﮫ ﺳﮯ ﻟﯿﻤﭗ ﭼﻼﯾﺎ.
معیز ﮐﯽ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ ﭘﮭﭩﻨﮯ ﮐﮯ ﻗﺮﯾﺐ ﺗﮭﯽ ﯾﮧ ﺗﻮ ﻭﮨﯽ ﺗﮭﯽ ﺟﻮ ﮨﻔﺘﮧ ﺑﮭﺮ ﭘﮩﻠﮯ ﻣﺎﺷﺎﻟﻠﮧ ﺳﮯ مارکیٹ کے باہر اس سے ٹکرائی ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﺁﺝ ﯾﮩﺎﮞ ﺍﺳﮑﮯ ﮐﻤﺮﮮ ﺍﺳﮑﮯ ﺑﺴﺘﺮ ﻣﯿﮟ ﻣﺪﮨﻮﺵ پڑھی ﺗﮭﯽ۔ 
معیز ﻧﮯ ﺍﺳﮑﯽ ﮐﻼﺋﯽ ﭼﮭﻮﮌﯼ ﺍﻭﺭ ﺑﺴﺘﺮ ﺳﮯ ﺍﺗﺮ ﮐﮯ ﻟﻤﺒﮯ ﻟﻤﺒﮯ ﺳﺎﻧﺲ ﻟﺌﮯ.. معیز ﮐﻮ ﯾﺎﺩ ﺁﯾﺎ ﺍﺑﮭﯽ ﮐﭽﮫ ﺩﯾﺮ ﭘﮩﻠﮯ ﻭﮦ ﮐﺲ ﺣﻠﯿﮯ ﻣﯿﮟ ﮔﮭﻮﻡ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ معیز ﮐﻮ ﺳﻮﭺ ﮐﮯ ﮨﯽ ﺟﮭﺮﺟﮭﺮﯼ ﺁﺋﯽ ﺍﮔﺮ ﻭﮦ ﺟﺎﮒ ﺭﮨﯽ ﮨﻮﺗﯽ ﺍﻭﺭ ﺩﯾﮑﮫ ﻟﯿﺘﯽ ﺗﻮ۔ ﻣﮕﺮ ﯾﮧ ﯾﮩﺎﮞ ﮐﯿﺴﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﺍﺱ ﺣﺎﻝ ﻣﯿﮟ ﮐﮭﻠﮯ ﺭﻑ ﺑﺎﻝ ﭘﯿﻠﮯ ﭘﮭﭩﮏ ﮨﻮﻧﭧ ﺯﺭﺩ ﺭﻧﮓ ﺳﯿﺎﮦ ﺣﻠﻘﮯ ﺍﺳﮯ ﯾﺎﺩ ﺁﯾﺎ ﻭﮦ ﮨﻔﺘﮧ ﭘﮩﻠﮯ ﺍﯾﺴﯽ ﻧﮧ ﺗﮭﯽ .. ﮨﯿﻞ ﻣﻌﯿﺰ ﺟﮭﻨﺠﮭﻼ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺩﻧﺪﻧﺎﺗﺎ ﮨﻮﺍ ﺳﺐ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﭘﻮﺭﺍ ﮔﮭﺮ ﺳﻮﯾﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﯾﮏ ﻭﮨﯽ ﺍﻟﻮﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺟﺎﮒ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﻮﻥ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﺮﮮ ﮐﻤﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﭘﮩﻨﭽﯽ ﮐﯿﺴﮯ.. 
ﮔﺎﺭﮈ ﺳﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ ﺍﻭﺭ معیز ﮐﮯ ﺗﻦ ﺑﺪﻥ ﻣﯿﮟ ﺁﮒ ﻟﮓ ﮔﺌﯽ ﻣﻌﯿﺰ ﮐﻮ ﺳﻦ ﮐﮯ ﺻﺪﻣﮧ ﮨﻮﺍ ﯾﮧ ﺗﮭﯽ ﺍﺳﮑﯽ ﺑﭽﭙﻦ ﮐﯽ ﺑﯿﻮﯼ ﺟﺲ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺁﺝ ﺗﮏ ﺍﺳﮑﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﮔﺮﻝ ﻓﺮﯾﻨﮉ ﻧﮧ ﺑﻦ ﭘﺎﺋﯽ ﻭﮦ ﮐﭽﮫ ﺳﻮﭺ ﮐﮯ ﺑﮍﮮ ﺟﺎﺭﺣﺎﻧﮧ ﻃﺮﯾﻘﮯ ﺳﮯ ﮐﻤﺮﮮ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺑﮍﮬﺎ...
ﻣﻌﯿﺰ ﻧﮯ ﮐﻤﺮﮮ ﮐﺎ ﺩﺭﻭﺍﺯﮦ ﺧﺎﺻﯽ ﺑﺘﻤﯿﺰﯼ ﺳﮯ ﮐﮭﻮﻻ ﺗﺎﮐﮧ ﺍﻧﺪﺭ ﺳﻮﺋﯽ ﺁﻓﺖ ﺍﭨﮫ ﺟﺎﺋﮯ ﻣﮕﺮ ﻭﮦ ﺷﺎﺋﺪ ﻧﮩﯿﮟ ﭘﻌﻘﯿﻨﻦ ﮈﯾﭩﮭﻮﮞ ﮐﯽ ﺳﺮﺩﺍﺭ ﺗﮭﯽ ﺟﻮ ﺯﺭﮦ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻠﯽ
"ﺍﮮ ﺍﭨﮭﻮ یہاں سے"
ﻣﻌﯿﺰ ﺑﺴﺘﺮ ﮐﮯ ﻗﺮﯾﺐ ﺟﺎ ﮐﮯ ﺩﮬﺎﮌﺍ ﻣﮕﺮ ﻭﮨﺎﮞ ﺳﻮﯾﺎ ﻭﺟﻮﺩ ﭨﺲ ﺳﮯ ﻣﺲ ﻧﮧ ﮨﻮﺍ ﻣﻌﯿﺰ ﻧﮯ ﺩﺍﻧﺖ ﮐﭽﮑﭽﺎﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﮐﻨﺪﮬﮯ ﺳﮯ ﻋﺎﺋﺸﮧ ﮐﻮ ﮨﻼﯾﺎ.
ﻋﺎﺋﺸﮧ ﻧﮯ ﭘﭧ ﺳﮯ ﺑﮍﯼ ﺑﮍﯼ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ ﮐﮭﻮﻝ ﺩﯼ ﺟﻦ ﻣﯿﮟ ﺧﻮﻑ ﻭﮨﺸﺖ ﭘﺘﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﮐﯿﺎ ﻧﮧ ﺗﮭﺎ ﻣﻌﯿﺰ ﮐﭽﮫ ﻟﻤﮩﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺟﻢ ﺳﮧ ﮔﯿﺎ...
"ﺟﯽ ﺁﭖ ﮐﻮﻥ" ﻋﺎﺋﺸﮧ ﮐﻮ ﻭﺣﺸﺖ ﮨﻮﺋﯽ ﺍﺟﻨﺒﯽ ﻣﺮﺩ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﮯ...
ﻣﻌﯿﺰ ﻧﮯ ﺍﺑﺮﻭ ﺍﭼﮑﺎﺋﮯ
"ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﺷﻮﮨﺮ" ﮐﮩﮧ ﮐﮧ ﻣﻌﯿﺰ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻃﺮﻑ ﺟﺎﻥ ﺑﻮﺟﮫ ﮐﮯ ﻧﯿﻢ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ عاﺋﺸﮧ چھپک ﺳﮯ ﺑﯿﮉ ﺳﮯ ﺍﺗﺮﯼ ﺟﯿﺴﮯ ﻭﮦ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﭼﮭﻮﺕ ﺷﮯ ﮨﻮ ﺍﻭﺭ ﯾﮩﯽ ﺗﻮ ﻣﻌﯿﺰ ﭼﺎﮨﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﺳﮑﮯ ﻧﺮﻡ ﮔﻼﺑﯽ ﮔﺪﺍﺭ ﮨﻮﻧﭩﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻣﻨﭽﮭﻮﮞ ﺗﻠﮯ ﻣﺴﮑﺮﺍﮨﭧ ﭘﮭﯿﻞ ﮔﺌﯽ . ﻋﺎﺋﺸﮧ ﻧﮯ ﺍﺩﮬﺮ ﺍﺩﮬﺮ ﺍﭘﻨﺎ ﮈﻭﭘﭩﮧ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﻣﻌﯿﺰ ﮐﮯ ﻧﯿﭽﮯ ﺗﮭﺎ ﻋﺎﺋﺸﮧ ﻧﮯ ﮈﻭﭘﭩﮧ ﮐﮭﻨﭽﺎ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﮈﯾﭩﮫ ﮨﻮ ﮐﮧ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ ﻣﻮﻧﺪ ﮐﮯ ﻟﯿﭧ ﮔﯿﺎ ﻋﺎﺋﺸﮧ ﻧﮯ ﺟﮭﮏ ﮐﮯ ﻧﮑﺎﻟﻨﺎ ﭼﺎﮨﺎ ﺗﻮ ﻣﻌﯿﺰ ﻧﮯ ﮐﻼﺋﯽ ﺳﮯ ﺍﺳﮯ ﺧﻮﺩ ﭘﮯ ﮐﮭﻨﭻ ﻟﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺳﺮﺥ ﺍﻧﮕﺎﺭﻭﮞ ﺟﯿﺴﯽ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ ﺧﻮﻑ ﺳﮯ ﭘﮭﭩﯽ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮈﺍﻝ ﮐﮯ ﺑﻮﻻ 
"ﺁﺝ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻣﯿﺮﮮ ﮐﻤﺮﮮ ﻣﯿﺮﯼ ﮐﺴﯽ ﺑﮭﯽ ﭼﯿﺰ ﮐﮯ ﺁﺱ ﭘﺎﺱ ﻧﻈﺮ ﻧﮧ ﺁﻧﺎ ﺗﻢ ﮐﺴﯽ ﺑﮭﻮﻝ ﻣﯿﮟ ﻣﺖ ﺭﮨﻨﺎ ﮐﮧ ﺗﻢ ﮐﺒﮭﯽ ﺍﺱ ﮔﮭﺮ ﯾا ﻣﺠﮭﮯ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮ ﻟﻮ ﮔﯽ" ﯾﮧ ﮐﮩﮧ ﮐﮯ ﻣﻌﯿﺰ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﮔﺮﻓﺖ ﮈﮬﯿﻠﯽ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﯼ ﻋﺎﺋﺸﮧ ﺍﯾﮏ ﺟﮭﭩﮑﮯ ﺳﮯ ﺍﭨﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﭼﭙﻞ ﭘﮩﻦ ﮐﮯ ﺍﻧﮕﻠﯽ ﺍﭨﮭﺎ ﮐﮯ ﺑﻮﻟﯽ 
"ﺗﻢ ﺷﺎﯾﺪ ﮐﺴﯽ ﺧﻮﺵ ﻓﮩﻤﯽ ﻣﯿﮟ ﮨﻮ
ﻧﮧ ﻣﻨﮧ ﻧﮧ ﻣﺘﮭﺎ ﺟﻦ ﭘﺎﺭﻭﮞ ﻟﺘﮭﺎ ﺷﮑﻞ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﮯ ﺑﺎﺕ ﮐﺮﻧﯽ ﺗﮭﯽ ﻧﮧ ﻣﺠﮭﮯ ﺗﻮ ﺗﻤﮩﺎﺭﯼ ﺷﮑﻞ ﺍﯾﺰ ﺍﮮ ﮨﺴﺒﻨﮉ ﭘﺴﻨﺪ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺋﯽ ﺗﻢ ﺳﮯ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﭨﻮﭨﯽ ﺟﻮﺗﯽ ﺟﺎﻭ ﺍﺱ ﺳﮯ ﮐﺮ ﻟﻮ"...
ﯾﮧ ﮐﮩﮧ ﮐﮯ ﻭﮦ ﭼﻠﯽ ﮔﺌﯽ ﻭﮦ ﻣﻌﯿﺰ ﮐﯽ ﻧﯿﻨﺪ ﺍﮌ ﮔﺌﯽ ﺳﺎﺭﯼ ﺭﺍﺕ ﻭﮦ ﺑﺎﺭ ﺑﺎﺭ ﺁﺋﯿﻨﮧ ﺩﯾﮑﮭﺘﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﺭ ﺑﺎﺭ ﭼﮩﺮﮮ ﮐﻮ ﭼﮭﻮ ﮐﮯ ﺩﯾﮑﮭﺘﺎ ...

جاری ہے


 
Zubair Khan Afridi Diary【••Novel ღ ناول••】. Zubair Khan Afridi
knowledgemoney