ﮐﯿﺎ بری عورت ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺑُﺮے مرد ﮨﯿﮟ...؟

ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺳﺮ ﺍﭨﮭﺎ ﮐﺮ ﺩﯾﮑﮭﺎ ... ﺗﻮﭼﮭﺒﯿﺲ ﺳﺘﺎﺋﯿﺲ ﺳﺎﻝ کی ﺍﯾﮏ ﻟﮍکی ... ﻣﯿﺮﮮ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺑﯿﭩھی ﮨﻮئی ﺗھی ...! 
ﻣﯿﮟ ﺁﭖ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﺳﻤﺠھا ﻧﮩﯿﮟ۔۔۔
ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮨﻠﮑﯽ ﺳﯽ ﺁﻭﺍﺯ ﻣﯿﮟ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﺎ۔
بولیں! ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻗﺮﺁﻥ ﻣﯿﮟ ﭘﮍﮬﺎ ﮨﮯ ۔۔۔ ﮐﮧ ﺟﻮ ﺍﭼﮭﮯ ﻣﺮﺩ ﮨﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﭼﮭﯽ ﻋﻮﺭﺗﯿﮟ ﮨﯿﮟ۔۔۔ ﺍﻭﺭ ﺟﻮ ﮔﻨﺪﮮ ﯾﻌﻨﯽ ﺑُﺮﮮ ﻣﺮﺩ ﮨﯿﮟ۔۔۔ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺑُﺮﯼ ﻋﻮﺭﺗﯿﮟ ﮨﯿﮟ ۔۔۔
ﺍﻭﺭ اسی طرح ۔۔۔ ﺑُﺮﯼ ﻋﻮﺭﺗﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺑﮭﯽ ﯾﮩﯽ ﻣﻌﺎﻣﻠﮧ ﮨﮯ۔
ﺗﻮ ﮐﯿﺎ ﺍﯾﺴﺎ ﮨﯽ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ۔۔۔؟
ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺑﺎﺕ ﻣﮑﻤﻞ ﮐﯽ ۔۔۔!
ﺟﻮ ﻗﺮﺁﻥ ﻣﯿﮟ ﻟﮑﮭﺎ ﮨﮯ ۔۔۔ ﻭﮦ ﻏﻠﻂ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮ ﺳﮑﺘﺎ ﻧﺎﮞ۔۔۔
ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﭨﮭﻨﮯ ﻟگا۔
ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺕ ﺑﯿﺎﻥ ﮐﺮﻧﯽ ﺗﮭﯽ ﺁﭖ ﺳﮯ۔
ﻭﮦ ﻓﻮﺭﺍً ﺑﻮلی،
ﺍﺱ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺍﺯ ﻣﯿﮟ ﺩﺭﺩ ﺗﮭﺎ ۔۔۔ ﺟﺲ ﻧﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﻗﺪﻣﻮﮞ ﮐﻮ ﺟﻤﺎ ﺩﯾﺎ ۔۔۔
ﻣﯿﮟ ﺩﻭﺑﺎﺭﮦ ﺑﯿﭩﮫ ﮔیا ﺍﻭﺭ ﮐﮩﺎ،
ﮐﯿﺎ ﺑﺎﺕ ﮨﮯ؟
ﺍﺱ ﻧﮯ ﺳﺮ ﺟﮭﮑﺎﯾﺎ۔۔۔ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺁﻭﺍﺯ ﺍﺑﮭﺮﯼ۔۔۔ ﺟﻮ ﺩﺭﺩ ﮐﮯ ﺩﮬﺎﮔﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻟﭙﭩﯽ ﮨﻮﺋﯽ۔۔۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﭼﮩﺮﮮ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﺷﮑﻨﺠﮯ ﻣﯿﮟ ﻟﯿﮯ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﮭﯽ۔۔۔
ﻣﯿﮟ ﺑﮩﺖ ﮔﻨﺎﮦ ﮔﺎﺭ ﮨﻮﮞ، ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﺑﮩﺖ ﺑﮍﺍ ﮔﻨﺎﮦ ﮐﯿﺎ۔۔۔ 
ﺍﺱ ﮐﻮ ﻣﺠﮫ ﭘﺮ ﺑﮩﺖ ﺍﻋﺘﻤﺎﺩ ﺗﮭﺎ۔۔۔ ﻣﮕﺮ ﻣﯿﮟ ﮨﻮﺱ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﺪھی ﮨﻮ ﮔئی۔۔۔ 
ﺍﺱ ﻧﮯ ﺭﻭﮐﺎ ﺑﮭﯽ ﻣﮕﺮ ﻣﯿﮟ ﻗﺎﺑﻮ ﻧﮧ ﺭﮐﮫ ﺳکی۔۔۔ ﺍﻭﺭ ﺷﯿﻄﺎﻥ ﮐﮯ ﺑﮭﮑﺎﻭﮮ ﻣﯿﮟ ﺁﮔئی۔۔۔
ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺳﮯ ﺗﻮﺑﮧ ﮐﯽ ۔۔۔ ﺭﺍﺕ ﮐﻮ ﺳﺴﮏ ﺳﺴﮏ ﮐﺮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺩﺭ ﭘﺮ ﭘﮍا ﺭﮨﻨﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﯿﺎ ۔۔۔
ﻗﺮﺁﻥ ﭘﮍﮬﺎ، توبہ کی ۔۔۔ 
ﻣﮕﺮ ﺍﯾﮏ ﺳﻮﺍﻝ ﺍﺑﮭﯽ ﺑﮭﯽ ﮨﮯ۔۔۔
ﮐﯿﺎ ﺑُﺮی عورت ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺑُﺮے مرد ﮨﯽ ﮨﮯ۔۔۔؟
ﻭﮦ ﺧﺎﻣﻮﺵ ﮨﻮئی،
ﺍﺱ ﮐا چہرہ آنسوؤں سے تر تھا،
ﺍﺱ ﮐﯽ ﻧﻈﺮﯾﮟ ﺟﮭﮑﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﮭﯽ۔۔۔ ﺍﻭﺭ ﻓﻀﺎ ﻣﯿﮟ ﮨﭽﮑﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﺁﮨﭧ ﺗﮭﯽ۔۔۔
ﻣﯿﮟ ﻣﺨﺎﻃﺐ ﮨﻮا ۔۔۔
ﺑﯿﭩﺎ ۔۔۔!
ﺁﭖ ﮐﻮ ﮐﺲ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ۔۔۔؟
ﮐﮧ ﺍﺱ ﺁﯾﺖ ﮐﺎ ﺗﻌﻠﻖ ﺻﺮﻑ ﺷﺎﺩﯼ ﮨﯽ ﺳﮯ ﮨﮯ۔۔۔؟
ﺍﺱ ﻧﮯ ﻧﻈﺮ ﺍﭨﮭﺎ ﮐﺮ ﺩﯾﮑﮭﺎ ،
ﺍﺱ ﮐﯽ آنکھﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺟﻮ ﺟﺴﺘﺠﻮ ﺗﮭﯽ ،
ﺁﺝ ﺗﮏ ﺫﮨﻦ ﻣﯿﮟ ﭘﯿﻮﺳﺖ ﮨﮯ۔۔۔
ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺑﺎﺕ ﺟﺎﺭﯼ ﺭﮐﮭﯽ!
ﺍﺱ ﺁﯾﺖ ﮐﺎ ﺗﻌﻠﻖ ﻣﻌﺎﺷﺮﮮ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﮨﮯ ،
ﺻﺮﻑ ﻧﮑﺎﺡ ﺳﮯ ﻧﮩﯿﮟ،
ﻭﮦ ﮐﯿﺴﮯ۔۔۔؟ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻓﻮﺭﺍً ﺳﻮﺍﻝ ﮐﯿﺎ۔
ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺩﻭﺑﺎﺭﮦ ﺑﺎﺕ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﯽ،
ﺩﺭﺍﺻﻞ اللّه کریم ﮐﺎ ﻧﻈﺎﻡ ﮐﻤﺎﻝ ﮐﺎ ﻧﻈﺎﻡ ﮨﮯ ،
ﺍﻭﺭ ﺟﻮ ﺍﺻﻮﻝ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﮨﯿﮟ ،
ﺭﮨﺘﯽ ﺩﻧﯿﺎ ﺗﮏ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮐﺎﻓﯽ ﮨﯿﮟ۔
ﺁﭖ ﻧﮯ ﮐﺒﮭﯽ ﻧﯿﮏ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﺎ ﺍﻭﺭ ﺑُﺮﮮ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﺎ ﺟﻨﺎﺯﮦ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮨﮯ ﻧﺎﮞ۔۔۔؟
ﺗﻮ ﻭﮦ ﺟﻨﺎﺯﮦ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ۔۔۔؟ 
ﺍﮔﺮ ﻣﺮﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﻧﯿﮏ ﺗﻮ ﺷﺮﮐﺎﺀ ﺳﺎﺭﮮ ﻧﯿﮏ۔۔۔
ﺍﮔﺮ ﻣﺮﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﺑﺪ ﮐﺎﺭ ﺗﻮ ﺷﺮﮐﺎﺀ ﺑﮭﯽ ﺍﮐﺜﺮﯾﺖ ﺑﺪﮐﺎﺭ۔
ﺁﭖ ﻧﮯ ﻓﻨﮑﺸﻨﺰ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﮑﮭﮯ ﮨﯿﮟ ،
ﺍﮔﺮ ﻧﯿﮏ ﺁﺩﻣﯽ ﮐﯽ ﺁﻣﺪ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺳﺎﺭﮮ ﻧﯿﮏ ﺍﻓﺮﺍﺩ ﺷﺮﯾﮏ ،
ﺍﮔﺮ ﮐﺴﯽ ﺑﺪﮐﺮﺩﺍﺭ ﮐﯽ ﺁﻣﺪ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺍﮐﺜﺮﯾﺖ ﺑﺪ ﮐﺮﺩﺍﺭ۔
ﺍﺻﻞ ﻣﯿﮟ ﮨﻢ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﺭﺩﮔﺮﺩ ﮐﮯ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﺧﻮﺩ ﻣﻨﺘﺨﺐ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ!
ﮨﻢ ﺟﺐ ﺍﭼﮭﮯ ﺑﻦ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔۔۔ ﺗﻮ ﺍﭼﮭﻮﮞ ﺳﮯ ﺗﻌﻠﻖ ﻗﺎﺋﻢ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ۔۔۔
ﺟﺐ ﺑُﺮﮮ ﺗﻮ ﺑُﺮﺍﺋﯽ ﮐﮯ ﺭﺍﺳﺘﮯ ﺁﺳﺎﻥ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ!
ﺗﻮ ﯾﮧ ﺻﺮﻑ ﻧﮑﺎﺡ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻧﮩﯿﮟ ،
ﺑﻠﮑﮧ ﻣﻌﺎﺷﺮﺗﯽ ﺗﻌﻠﻘﺎﺕ ﮐﻮ ﺑﯿﺎﻥ ﮐﺮ ﺭﮨﯽﮨﮯ!
ﺍﺏ ﺟﺐ ﺁﭖ ﻧﮯ ﺗﻮﺑﮧ ﮐﺮ ﻟﯽ ۔۔۔ ﺗﻮ ﺍﺏ ﺁﭖ ﭘﺮﯾﺸﺎﻥ ﻧﮧ ﮨﻮﮞ۔۔۔!
قبول کرنے والے کی کوئی شرط نہیں ہوتی!
معاف کر دینے والے کے سامنے ۔۔۔ گناہ کیا ہے ۔۔۔؟
ﻭﮦ ﺭﺏّ! رحیم و کریم ربّ! 
ﺁﭖ ﮐﯽ ﺑﮭﻼﺋﯽ۔۔۔ ﺁﭖ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﭼﺎﮨﺘﺎ ﮨﮯ۔
ﻣﯿﮟ ﺧﺎﻣﻮﺵ ﮨﻮا ۔۔۔
ﻭﮦ ﺍﭨھی۔۔۔ ﺍﻭﺭ ﮔﺮﻣﺠﻮﺷﯽ ﺳﮯ سلام کیا ۔۔۔ 
اور یہ کہتے ھوے ﮨﻮئے ﺭﺧﺼﺖ ﮨﻮئی!
بیشک ۔۔۔ میرا ربّ۔۔۔ بڑا رحیم و کریم ہے ۔۔۔!
ﺍﻭﺭ ﻣﺠﮭﮯ۔۔۔ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﺭﺩﮔﺮﺩ ۔۔۔ ﺍﯾﮏ ﻋﺠﯿﺐ ﺳﯽ ﺧﻮﺷﺒﻮ ﮐﺎ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﮨﻮﺗﺎ ﺭہا." 
 
Zubair Khan Afridi Diary【••Novel ღ ناول••】. Zubair Khan Afridi
knowledgemoney